Saturday , July 22 2017
Home / شہر کی خبریں / سیاسی بیروزگار سیاسی دکان چمکانے کوشاں

سیاسی بیروزگار سیاسی دکان چمکانے کوشاں

کودنڈا رام کی ریالی کے اعلان سے طلبہ مشتعل ، ٹی آر ایس ایم بی سمن کا بیان
حیدرآباد۔13 فبروری (سیاست نیوز) ٹی آر ایس کے رکن پارلیمنٹ بی سمن نے الزام عائد کیا کہ تلنگانہ جوائنٹ ایکشن کمیٹی نوجوانوں کو گمراہ کرتے ہوئے مشتعل کرنا چاہتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ بیروزگار نوجوانوں کو روزگار کی فراہمی کے وعدے کے تحت حکومت نے تلنگانہ پبلک سرویس کمیشن کے ذریعہ اساتذہ کی 7300 سے زائد جائیدادوں پر تقررات کا عمل شروع کیا ہے۔ بیروزگار نوجوانوں کو روزگار کی فراہمی کے مقصد سے چیف منسٹر نے امتحان میں شرکت کی اہلیت کی شرائط میں نرمی کرتے ہوئے 60 فیصد نشانات کی حد کو گھٹاکر 50 فیصد کردیا ہے۔ ترمیم شدہ شرائط کے ساتھ پبلک سرویس کمیشن جلد ہی اعلامیہ جاری کرے گا۔ انہوں نے کہا کہ جے اے سی کے صدرنشین کودنڈارام نے نوجوانوں کے ساتھ 22 فروری کو حیدرآباد میں ریلی منظم کرنے کا اعلان کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس طرح کے احتجاج سے بیروزگار نوجوانوں کو کوئی فائدہ نہیں ہوگا جبکہ سیاسی بیروزگار اپنی سیاسی دکان چمکانے کی کوشش کرسکتے ہیں۔ سمن نے کہا کہ کودنڈارام عوامی مسائل کے نام پر حکومت کو مسلسل بلاک میل کرنے کی کوشش کررہے ہیں۔ اپوزیشن جماعتوں سے مل کر وہ حکومت کے خلاف منظم انداز میں مہم چلانا چاہتے ہیں تاکہ ریاست کی ترقی میں رکاوٹ ہو اور اپوزیشن کو اس کا سیاسی فائدہ ہو۔ ٹی آر ایس رکن پارلیمنٹ نے کہا کہ چیف منسٹر کے چندر شیکھر رائو نے انتخابات کے سے قبل سماج کے ہر طبقے سے جو وعدے کئے تھے ان پر عمل آوری کی جارہی ہے۔ انتخابی وعدوں سے ہٹ کر کئی فلاحی اسکیمات کا آغاز کیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ کودنڈارام جیسی شخصیت کو اپوزیشن کے ہاتھوں میں کھلونا بننے کے بجائے حکومت کے ترقیاتی و فلاحی کاموں میں تعاون کرنا چاہئے۔ سمن نے الزام عائد کیا کہ کودنڈارام کانگریس اور تلگودیشم کے اشاروں پر کام کررہے ہیں اور اب تک یہ بھی اطلاعات ہیں کہ وہ خود عملی سیاست میں حصہ لینے کی تیاری کررہے ہیں۔ حکومت نے نوجوانوں سے وعدہ کیا تھا کہ مرحلہ وار انداز میں سرکاری مخلوعہ جائیدادوں پر تقررات کئے جائیں گے۔ گزشتہ دو برسوں میں کئی محکمہ جات میں ہزاروں جائیدادوں پر تقررات کیئے گئے اور اب ٹیچرس کی جائیدادوں پر تقررات کا عمل شروع ہوا ہے۔ سمن نے کودنڈارام کو مشورہ دیا کہ وہ اپنی مجوزہ ریالی کو ترک کریں اور نوجوانوں کو سڑکوں پر لانے کی کوشش سے باز آجائیں۔ انہوں نے کہا کہ ٹی آر ایس حکومت نوجوانوں کی بھلائی کے حق میں ہے اور مخلوعہ جائیدادوں پر تقررات کا عمل جاری رہے گا۔ بیروزگار نوجوانوں کے ذریعہ احتجاجی ریالیوں کی صورت میں سوائے اپوزیشن کو فائدہ پہنچنے کے کچھ حاصل نہیں ہوگا۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT