Thursday , October 19 2017
Home / شہر کی خبریں / سیکریٹریٹ کے باب الداخلہ پر خیر مقدمی کمان کی تعمیر کا فیصلہ

سیکریٹریٹ کے باب الداخلہ پر خیر مقدمی کمان کی تعمیر کا فیصلہ

کاکتیہ طرز تعمیر کو مسلط کرنے کی کوشش ۔ اسلامی طرز کو شامل کرنے سے حکام کا گریز
حیدرآباد۔/27اگسٹ، ( سیاست نیوز) حکومت نے تلنگانہ سکریٹریٹ کے باب الداخلہ پر40لاکھ روپئے کے خرچ سے خیرمقدمی کمان کی تعمیر کا فیصلہ کیا ہے اور خیرمقدمی کمان کے ڈیزائن کو تقریباً قطعیت دے دی گئی۔ باوثوق ذرائع نے بتایا کہ تلنگانہ سکریٹریٹ کی خیرمقدمی کمان کے ذریعہ کاکتیہ دورِ حکومت کے طرز تعمیر کی جھلک پیش کی جائے گی اور حیدرآباد کی شان کے طور پر کاکتیہ نشان کو مسلط کرنے کی تیاری کی جارہی ہے۔ ذرائع نے بتایا کہ حکومت نے ماہرین سے کمان کا جو پلان طلب کیا ہے اس میں کاکتیہ حکمرانوں کی نشانیوں اور طرز تعمیر کو پیش نظر رکھا گیا ہے۔ حکومت نے اگرچہ نظام حیدرآباد کی طرز تعمیر کو بھی اس میں شامل کرنے پر غور کیا تھا لیکن جب خیرمقدمی کمان کا ڈیزائن تیار کیا گیا تو اس میں صرف کاکتیہ طرز تعمیر کی جھلک دکھائی دے رہی ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ بعض ماہرین نے کاکتیہ اور اسلامک طرز تعمیر کی مشترکہ جھلک کے طور پر کمان کی تیاری کا مشورہ دیا تھا کیونکہ کاکتیہ حکمرانوں کا صدر مقام ورنگل تھا جبکہ حیدرآباد میں سلاطین آصفیہ نے حکمرانی کی۔ سکریٹریٹ کی عمارت چونکہ حیدرآباد میں واقع ہے لہذا خیرمقدمی کمان میں سلاطین آصفیہ کے طرز تعمیر کی جھلک پیش کی جانی چاہیئے لیکن حکومت کے ماہرین نے حیدرآباد کی تہذیب پر کاکتیہ حکمرانوں کی تہذیب کو مسلط کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ اب جبکہ خیرمقدمی کمان کے ڈیزائن کو منظوری دی جاچکی ہے، توقع ہے کہ محکمہ آر اینڈ ڈی جلد ہی تعمیری کام کا آغاز کردے گا۔ اس مرحلہ پر اگر حکومت سے موثر نمائندگی کی جائے تو ڈیزائن میں تبدیلی کی گنجائش موجود ہے۔ حکومت نے خیرمقدمی کمان کے عقب میں سیکورٹی اور وزیٹرس کو پاس جاری کرنے کیلئے بھی خصوصی کمرے تعمیر کئے جائیں گے جس کا طرز تعمیر بھی کاکتیہ حکمرانوں کی تہذیب کی عکاسی کرے گا۔بتایا جاتا ہے کہ تلنگانہ سکریٹریٹ کیلئے 6گیٹس تعمیر کرنے کی تجویز ہے۔ چیف منسٹر اور وزراء کیلئے علحدہ راستہ رہے گا جبکہ عہدیداروں، کاروں اور ٹو وہیلرس کیلئے علحدہ راستہ طئے کیا جارہا ہے۔ حکومت سکریٹریٹ کی خیرمقدمی کمان کو کاکتیہ کلا تھورانم کا نام دے گی جس کے درمیانی حصہ میں تلنگانہ تلی کا مجسمہ نصب کیا جائے گا۔

TOPPOPULARRECENT