Wednesday , August 23 2017
Home / ہندوستان / سیکوریٹی عملہ کی سنگین کوتاہی چیف منسٹر مہاراشٹرا سے انا ہزارے کی شکایت

سیکوریٹی عملہ کی سنگین کوتاہی چیف منسٹر مہاراشٹرا سے انا ہزارے کی شکایت

ممبئی۔/10مارچ، ( سیاست ڈاٹ کام ) ممتاز سماجی جہد کار انا ہزارے کی گرانقدر خدمات کی تعریف اور ستائش کرتے ہوئے چیف منسٹر مہاراشٹرا دیویندر فڈنویس نے آج کہا ہے کہ انہیں فراہم کردہ سیکوریٹی سے ہرگز دستبرداری اختیار نہیں کی جائے گی کیونکہ بعض گوشوں کی جانب سے ان کی حفاطت پر متعین سیکوریٹی کے بارے میں انگشت نمائی کی جارہی ہے۔ انا ہزارے کو موسومہ ایک مکتوب میں چیف منسٹر نے سیکوریٹی خامیاں پائے جانے پر معذرت کا اظہار کیا ۔ انا ہزارے کو ایک عظیم شخصیت قرار دیتے ہوئے فڈنویس نے کہا کہ سماجی جہد کار نے ہماری سوسائٹی کیلئے بہت کچھ کیا ہے اور ان کی زندگی ہمارے لئے ایک قیمتی اثاثہ ہے۔ لہذا آپ کی حفاظت کیلئے متعین عملہ کو ہرگز ہٹایا نہیں جائے گی۔ واضح رہے کہ حال ہی میں انا ہزارے نے چیف منسٹر سے یہ شکایت کی تھی کہ ا ن کی حفاظت پر مامور سیکوریٹی عملہ اپنی ڈیوٹی میں تساہل سے کام لے رہا ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ وہ اپنی سیکوریٹی میں اضافہ کے خواہشمند نہیں ہیں بلکہ یہ چاہتے ہیں کہ متعین سیکوریٹی عملہ صحیح ڈھنگ سے فرائض انجام دے۔ بصورت دیگر ان کے ساتھ کوئی انہونی واقعہ پیش آنے پر حکومت کو مورد الزام ٹھہرایا جاسکتا ہے۔ انہوں نے مزیدبتایا کہ رالے گاؤں سدھی جیسے گاؤں میں 9 باڈی گارڈس اور  28 پولیس ملازمین کے قیام و طعام کا خرچہ برداشت کرنا ممکن نہیں ہے جس کا بہانہ بناکر سیکوریٹی عملہ غیر حاضر رہتا ہے یا پھر تاخیر سے آتا ہے اور ڈیوٹی انجام دیتے وقت بیشتر پولیس ملازمین موبائیل فون پر محو گفتگو رہتے ہیں جنہیں یہ احساس بھی نہیں رہتا کہ کوئی اچانک داخل ہوکر میرا قتل بھی کرسکتا ہے۔ انا ہزارے کو کئی ایک دھمکی آمیز خطوط ملنے کے بعد چیف منسٹر سے یہ شکایت کی ہے۔

TOPPOPULARRECENT