Monday , September 25 2017
Home / عرب دنیا / سی آئی اے نے عراقی سفیر خریدنے کی کوشش کی

سی آئی اے نے عراقی سفیر خریدنے کی کوشش کی

عراق ۔ 6 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) عراق کے سابق وزیرخارجہ ناجی صبری الحدیثی نے انکشاف کیا ہے کہ امریکہ کی سی آئی اے سمیت غیر ملکی سراغرساں اداروں نے سابق صدر صدام حسین کے خلاف کام کے لیے عراقی سفارت کاروں کو بھرتی کرنے کی کوشش کی تھی اور جو سفارت کار سنٹرل انٹیلی جنس ایجنسی کے لیے کام سے انکار کرتا تھا،اس کو میزبان ملک سے بے دخل کروا دیا جاتا تھا۔ناجی صبری الحدیثی نے یہ انکشاف العربیہ نیوز کے پروگرام ”سیاسی یادداشت” میں گفتگو کے دوران کیا ہے۔یہ پروگرام جمعہ کو نشر کیا گیا ہے۔وہ صدام حسین کے دورحکومت میں عراق کے 2001ء سے 2003ء تک وزیرخارجہ رہے تھے۔ انھوں نے بتایا ہے کہ 2002ء کے آخر میں امریکی اور برطانوی سراغرساں اداروں نے بیرون ملک عراقی سفارت کاروں کو ترغیب وتحریص کے ذریعے اس بات پر آمادہ کرنے کی کوشش کرتے رہے تھے کہ وہ ان کے لیے صدر صدام حسین کے خلاف کام کریں۔ انھوں نے اپنی اس انکشاف انگیز گفتگو میں کہا کہ مغربی افریقہ میں واقع ملک مالی میں تعینات ایک عراقی سفارت کار سے سب سے پہلے امریکی اور برطانوی سراغرساں اداروں نے رابطہ کیا تھا۔جب اس نے ان کے ساتھ تعاون سے انکار کردیا تو اس کو مالی سے نکلوا دیا گیا تھا۔ ناجی صبری کا کہنا تھا کہ ’’جوکوئی بھی عراقی سفارت کار امریکی انٹیلی جنس کے ساتھ کام کرنے سے انکار کرتا تھا،اس کو میزبان ملک کی جانب سے ناپسندیدہ شخصیت قرار دلوا دیا جاتا تھا‘‘۔

TOPPOPULARRECENT