Friday , July 21 2017
Home / شہر کی خبریں / سی پی ایم قائد سیتارام یچوری پر حملہ کی مذمت

سی پی ایم قائد سیتارام یچوری پر حملہ کی مذمت

وزیراعظم سے فوری ردعمل ظاہر کرنے کا مطالبہ ، وی ہنمنت راؤ کانگریس قائد کا بیان
حیدرآباد ۔ 8 ۔ جون : ( سیاست نیوز ) : سکریٹری اے آئی سی سی و سابق رکن راجیہ سبھا وی ہنمنت راؤ نے سی پی ایم کے قومی قائد سیتارام یچوری پر حملے کی سخت مذمت کرتے ہوئے کہا کہ ناگپور کے ہیڈکوارٹر سے ہی منصوبے تیار کئے جارہے ہیں اور وزیراعظم نریندر مودی اسی ریمورٹ کنٹرول کے ذریعہ کام کررہے ہیں ۔ آج گاندھی بھون میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وی ہنمنت راؤ نے کہا کہ صحافیوں کے بھیس میں سیتارام یچوری کی پریس کانفرنس میں داخل ہو کر ان پر حملہ کرنا بزدلانہ حرکت ہے ۔ جس کی سختی سے مذمت کی جانی چاہئے ۔ وزیراعظم اس پر فوری ردعمل کا اظہار کریں اور حملہ آوروں کے خلاف سخت کارروائی کریں ۔ مرکزی وزیر وینکیا نائیڈو ہر معاملے میں عوام کو مفت مشورے دینے کے عادی ہوگئے ۔ لہذا اس مسئلہ پر بھی وینکیا نائیڈو اپنی رائے ظاہر کریں ۔ اور بی جے پی کے محاذی تنظیموں کے کارکنوں نے جو گھناونی حرکت کی ہے اس پر قوم سے معذرت خواہی کریں ۔ ہنمنت راو نے کہا کہ کانگریس کے زیر قیادت یو پی اے حکومت کے دو انجن ہونے کا بی جے پی کے قائدین الزام عائد کرتے تھے ۔ ناگپور کے آر ایس ایس ریمورٹ کنٹرول سے وزیراعظم نریندر مودی کام کررہے ہیں ۔ سیتارام یچوری پر ہندوواہنی کے کارکنوں نے حملہ کیا ہے ۔ کانگریس کے قائد نے کہا کہ عوام میں پائی جانے والی تبدیلی اور کسانوں کے بغاوت سے مودی اور کے سی آر کی حکومتیں خوفزدہ ہوگئی ہیں ۔ عوامی مسائل کو پیش کرنا اپوزیشن کی ذمہ داری ہے ۔ عوامی مسائل اٹھانے پر دونوں حکومتوں کی جانب سے اپوزیشن جماعتوں پر عوام اور کسانوں کو بھڑکانے کا اپوزیشن پر الزام عائد کررہے ہیں ۔ این ڈی اے اور ٹی آر ایس کے دور حکومت میں زرعی شعبہ بحران کا شکار ہوگیا ہے ۔ پہلے خشک سالی کی وجہ سے کسان خود کشی کرتے تھے اب فصلوں کو اقل ترین قیمت ادا کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے احتجاج کرنے پر حکومتیں پولیس کے ذریعہ فائرنگ کراتے ہوئے کسانوں کو ہلاک کررہی ہے ۔ جس کی مدھیہ پردیش تازہ مثال ہے ۔ مہاراشٹرا اور راجستھان میں بھی بی جے پی کی حکومتیں ہیں وہاں بھی کسان احتجاجی مظاہرے کررہے ہیں ۔ تلنگانہ میں بھی یہی صورتحال ہے ۔ کانگریس کے نائب صدر راہول گاندھی سہارنپور واقعہ کے متاثرین سے ملاقات کرنے پہونچے تو پولیس کی جانب سے رکاوٹیں پیدا کی گئی ۔ مدھیہ پردیش پہونچنے سے روکنے کے لیے مختلف تحدیدات عائد کرتے ہوئے جمہوری نظام کا قتل کیا جارہا ہے ۔ آزادی کے بعد ملک پر کانگریس نے لمبے عرصے تک حکمرانی کی ہے ۔ مگر اس طرح کی ڈیکٹیٹر شپ کبھی نہیں کی ہے ۔ عوام کے صبر کا پیمانہ لبریز ہورہا ہے ۔ 2019 کے عام انتخابات میں عوام بی جے پی اور ٹی آر ایس کو سبق سکھائیں گے ۔۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT