Saturday , August 19 2017
Home / کھیل کی خبریں / شائقین ہند۔ پاک کرکٹ کیلئے امیدیں ابھی باقی ، بی سی سی آئی کا اشارہ

شائقین ہند۔ پاک کرکٹ کیلئے امیدیں ابھی باقی ، بی سی سی آئی کا اشارہ

ہندوستان میں پاکستان کی آئندہ ماہ ونڈے اور T20 سیریز کی میزبانی کرنے کی تجویز ، حکومت کی منظوری پر انحصار ، بورڈ عہدہ دار کے حوالے سے میڈیا رپورٹ
ممبئی ، 10 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) بورڈ آف کنٹرول فار کرکٹ اِن انڈیا (بی سی سی آئی) نے پاکستان کے خلاف آئندہ ماہ کی سیریز کو ہنوز پوری طرح خارج از امکان قرار نہیں دیا جبکہ اس مسئلے پر غیریقینی کیفیت برقرار ہے۔ بی سی سی آئی بتایا جاتا ہے کہ مرکزی حکومت سے اس تجویز کے ساتھ رجوع ہونے پر غور کررہی ہے کہ ہندوستان میں پاکستان کی میزبانی او ڈی آئیز اور T20I میچز کیلئے کی جائے جبکہ موجودہ صورتحال میں پاکستان یو اے ای میں ہندوستانیوں کی میزبانیوں کیلئے تیار ہے۔ ’دی انڈین اکسپریس‘ نے آج بی سی سی آئی کے ایک اعلیٰ عہدہ دار کے حوالے سے کہا کہ ایسی تجاویز ہیں کہ یا تو پانچ ونڈے میچز اور دو ٹوئنٹی 20 مقابلوں کی میزبانی کی جائے یا پھر تین او ڈی آئیز اور دو T20 میچز، جو ملک کے ایسے حصوں میں کھیلے جائیں جہاں سیاسی جماعتوں کی طرف سے گڑبڑ کے ممکنہ خطرات نہ ہوں گے۔ ’’ہم چاہتے ہیں کہ کرکٹ روابط جاری رہیں، ہم نہیں چاہتے کہ سیاسی جماعتیں کرکٹ میں رکاوٹ پیدا کریں،‘‘ بی سی سی آئی عہدہ دار نے انڈین اکسپریس کو یہ بات بتائی۔ آئی پی ایل چیرمین راجیو شکلا نے کچھ اسی طرح کے پلان کی تصدیق کی جب انھوں نے میڈیا کو بتایا کہ بی سی سی آئی پاکستان کی میزبانی کیلئے تیار ہے لیکن کسی نیوٹرل مقام پر کھیلنے کے امکان کو مسترد کردیا۔ انھوں نے کہا کہ قطعی فیصلہ حکومت پر منحصر ہے۔ یہ پوچھنے پر آیا بورڈ نے ڈسمبر میں کوئی سیریز کا منصوبہ بنایا ہے کیونکہ انڈین ٹیم اُس مدت میں مصروف نہیں رہے گی، صدر بی سی سی آئی ششانک منوہر نے گزشتہ روز کہا تھا کہ یہ سب کچھ پاکستان کے خلاف سیریز سے متعلق فیصلے پر منحصر رہے گا۔ انھوں نے کہا کہ پاکستان کے خلاف سیریز کا کیا ہوتا ہے، اسی اعتبار سے ہمیں منصوبہ بندی کرنی ہوگی، اس طرح یہ تاثر پیش کردیا کہ مجوزہ سیریز ابھی مکمل طور پر خارج از امکان نہیں ہوئی ہے۔ ہندوستانی ٹیم جنوبی افریقہ کے خلاف جاری ٹسٹ سیریز سے 7 ڈسمبر کو فارغ ہوجائے گی اور اسے پہلے سے طئے شدہ پروگرام کے مطابق آسٹریلیا کیلئے لمیٹیڈ اوورز سیریز کیلئے جنوری میں روانہ ہونا ہے، جس سے بی سی سی آئی کیلئے تھوڑی گنجائش نکل رہی ہے کہ ایک اور ہوم سیریز کرائی جائے۔ انٹرنیشنل کرکٹ کونسل کے فیوچر ٹورز پروگرام کے مطابق پاکستان کو ہندوستان کی میزبانی کرنا تھا لیکن شیوسینا کی جانب سے پُرزور احتجاج نے منوہر اور پی سی بی سربراہ شہریار خان کے درمیان اس مسئلے پر طئے شدہ بات چیت منعقد ہونے ہی نہیں دی۔ سینا ورکرز دفتر بی سی سی آئی میں گھس گئے، پاکستان کے خلاف ممکنہ سیریز کھیلنے کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے کہنے لگے کہ پڑوسی ملک دونوں ملکوں کے درمیان سیزفائر اگریمنٹ کی خلاف ورزی کررہا ہے

اور سرحد پار سے خاص طور پر جموں و کشمیر میں شلباری کے ذریعے ہندوستانی سپاہیوں کو ہلاک کررہا ہے۔ منوہر نے بی سی سی آئی کی 86 ویں اے جی ایم کے بعد میڈیا کانفرنس میں یہ بھی کہا کہ پاکستان سیریز ہندوستانی حکومت سے کلیرنس کے حصول پر منحصر ہوگی۔ ’’ہمیں پاکستان کے خلاف کھیلنے کیلئے حکومتی اجازت درکار ہے اور بورڈ کا فیصلہ حکومت کے موقف کی مطابقت میں رہے گا۔‘‘ دریں اثناء بی سی سی آئی نے چھ نئے ٹسٹ سنٹرز پونے، راجکوٹ، اندور، دھرمشالا، رانچی اور وشاکھاپٹنم منظور کئے ہیں۔ منوہر نے کہا، ’’ہم 12 مقابلے (ٹسٹ میچز) کھیلنے والے ہیں (ہندوستان آئی سی سی کے ایف ٹی پی کے مطابق نیوزی لینڈ اور انگلینڈ کی میزبانی کرنے والا ہے)۔ یہ سنٹرز انٹرنیشنل میچز کی میزبانی کیلئے تمام سہولیات رکھتے ہیں‘‘۔ منوہر نے نو شہروں کی نامزدگی بھی کی جو بولی دہندگان کیلئے دستیاب رہیں گے کہ دو نئی ٹیمیں خریدیں جو آئی پی ایل کے آئندہ دو ایڈیشنس میں معطل چینائی سوپر کنگس اور راجستھان رائلز کی جگہ لیں گے۔ یہ نامزد شہر راجکوٹ، پونے، چینائی، وشاکھاپٹنم، کٹک، رانچی، ناگپور، اندور اور دھرمشالا ہیں۔

TOPPOPULARRECENT