Wednesday , August 23 2017
Home / شہر کی خبریں / شادیوں اور دیگر تقاریب کیلئے ملبوسات کرایہ پر دستیاب

شادیوں اور دیگر تقاریب کیلئے ملبوسات کرایہ پر دستیاب

ممبئی کے تاجر کی جانب سے شہر میں عنقریب شوروم کا قیام ، آرڈر کرنے پر گھر تک سرویس
حیدرآباد /4 ستمبر ( سیاست نیوز ) مصروفیت کی آڑ میں مہنگائی کو چھپاکر تقاریب میں شرکت نہ کرنے والوں کو بہانے تلاش کرنے کی ضرورت نہیں رہے گی اور تقاریب میں شرکت آسان ہوجائے گی۔ چونکہ ملک کے بڑے شہروں کی طرح حیدرآباد میں بھی ایک ایسی تجارت شروع ہونے والی ہے جو شادی اور دیگر تقاریب کیلئے ملبوسات کو کرایہ پر فراہم کریں گے اور شہریوں کیلئے یہ سہولت دہلیز تک فراہم ہوگی ۔ بلکہ  اپنی شوروم تک جانے کی بھی ضرورت نہیں ۔ شہر میں اکثر شہری ایک ماہ میں دو تا تین تقاریب کی آمد سے اخراجات اور مصروفیت سے کافی پریشان ہوتے ہیں ۔ تقریب میں شرکت سے زیادہ ملبوسات کی خریداری اور تیاری کیلئے اکثر وقت دستیاب نہیں ہوتا کسی کیلئے 2 تا 3 تقاریب میں الگ الگ ملبوسات اور تیاری کے اخراجات برداشت کرنا مشکل ہوجاتا ہے ۔ بالخصوص خواتین کی خواہشات اور مطالبات سے ہر ماہ ایک تقریب بھی مشکل دیکھائی دیتی ہے ۔ ایسی صورت میں اگر پسندیدہ ملبوسات کرایہ پر دستیاب ہوجائیں تو پریشانی کافی حد تک ختم ہوجائے گی ۔ وہ بھی ایسے ملبوسات جو ٹیلی ویژن سریلوں میں دیکھائی دیتے ہیں اور فلموں میں پسندیدہ اداکاروں کی جانب سے استعمال کئے گئے ٹھیک اسی انداز اور اسٹائل کے ملبوسات شہری استعمال کرسکتے ہیں ۔ ممبئی کے کاروباری ادارے سے تعلق رکھنے والے دو تاجروں نے حیدرآباد میں ملبوسات کرایہ پر فراہم کرنے کے کاروبار کے آغاز کا فیصلہ کیا ہے اور بہت جلد حیدرآباد میں اپنی اسٹور کو قائم کرنے کے اقدامات کر رہے ہیں ۔ بتایا جاتا ہے کہ ایشوریہ اور سمرتی گپتا نے حیدرآباد میں اپنے منفرد کاروبار کے آغاز کی تیاری شروع کردی ہے ۔ آین لائین طرز کے اس کاروبار سے عوام کو کافی راحت فراہم ہونے کا دعوی کیا جارہا ہے ۔ عام طور پر شہریوں میں ان دنوں آن لائین شاپنگ کا سلسلہ جاری ہے اور ہر کوئی گھر بیٹھے اپنی من پسند اشیاء کو حاصل کر رہا ہے ۔ شہریوں کے رحجان کو دیکھ کر آن لائین مارکیٹنگ کے ادارے ہر ہفتہ کسی نہ کسی قسم کی پیشکش اور سوغاتیں عام کر رہے ہیں ۔باوجود اس کے عوام آن لائین کوالیٹی سے مطمین نہیں تاہم آن لائین پر کرایہ کی دوکان کا طریقہ کافی اثر انداز ثابت ہوسکتا ہے ۔ تقریب کے لحاظ سے پسندیدہ چیز کو آرڈر کرنے اور کرایہ ادا کرتے ہوئے اسی چیز کو استعمال کرنے اس دوکان سے ایسے ملبوسات بھی فراہم کئے جاتے ہیں جو کہ فلم انڈسٹری میں استعمال کرتے ہیں ۔ اکثر شہریوں کا خیال رہتا ہے کہ کرایہ کے ملبوسات صرف فلم انڈسٹری والے ہی استعمال کرتے ہیں لیکن یہ کاشیوم اب عام شہری بھی کرایہ ادارہ کرتے ہوئے استعمال کرسکتے ہیں ۔ اگر کسی گراہک کو ملبوسات پسند آجاتے ہیں اور وہ ایسے خریدنا چاہتا ہے تو اس گراہک کو فوراً ڈیزائن سے رجوع کردیا جاتا ہے ۔ ملبوسات کراہے پر دینے کے بعد ملبوسات کی ڈرائی کلینک ککی فیس بھی گراہک سے وصول کی جائے گی اور ملبوسات کا کرایہ کم از کم 300 تا 12 ہزار روپئے رکھا گیا ہے اور ایک تا 10 دن کرایہ پر دیا جائے گا اور شہریوں کو یہ تمام سہولیات آن لائین دستیاب رہیں گی ۔ بلکہ انہیں دوکان تک جانے کی ضرورت نہیں ۔

TOPPOPULARRECENT