Tuesday , September 19 2017
Home / شہر کی خبریں / شادی مبارک اسکیم میں شفافیت کے ساتھ عمل کی ہدایت

شادی مبارک اسکیم میں شفافیت کے ساتھ عمل کی ہدایت

درمیانی افراد کے رول کی شکایتوں کا جائزہ ، محمد محمود علی کا مختلف عہدیداروں کے ساتھ جائزہ اجلاس
حیدرآباد ۔ 4 ۔ نومبر ( سیاست نیوز) ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی نے اقلیتی بہبود کے عہدیداروں کو ہدایت دی کہ شادی مبارک اسکیم پر شفافیت کے ساتھ عمل آوری کے اقدامات کریں کیونکہ حیدرآباد اور اضلاع سے اسکیم میں درمیانی افراد کے رول کے بارے میں کئی شکایات موصول ہورہی ہیں۔ محمد محمود علی نے سکریٹری اقلیتی بہبود سید عمر جلیل ، ڈائرکٹر اردو اکیڈیمی پروفیسر ایس اے شکور اور مینجنگ ڈائرکٹر اقلیتی فینانس کارپوریشن بی شفیع اللہ کے ساتھ جائزہ اجلاس منعقد کیا جس میں مختلف اسکیمات پر عمل آوری اور بجٹ کے استعمال کی تفصیلات حاصل کی۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے غریب مسلم خاندانوں کی لڑکیوں کی شادی کے اخراجات کم کرنے کیلئے 51 ہزار روپئے امداد کی منفرد اسکیم شروع کی ہے۔ تلنگانہ میں اس اسکیم کے آغاز کے بعد آندھراپردیش اور دیگر کئی ریاستوں میں اس اسکیم کو اختیار کیا ہے۔ حکومت چاہتی ہے کہ حقیقی مستحق خاندانوں کو 51 ہزار روپئے کی امداد حاصل ہو لیکن کئی شکایات موصول ہورہی ہیں کہ اسکیم میں درمیانی افراد کا اہم رول ہے۔ انہوں نے عہدیداروں کو ہدایت دی کہ وہ نہ صرف اسکیم میں بے قاعدگیوں کا تدارک کریں بلکہ اب تک منظور کی گئی درخواستوں میں کم از کم 10 فیصد کی دوبارہ جانچ کے ذریعہ حقائق کا پتہ چلائیں۔ انہوں نے کہا کہ ایک سال میں 20,000 سے زائد خاندانوں کو امداد کی فراہمی یقیناً حکومت کا کارنامہ ہے۔ وہ اس بات کی کوشش کریں گے کہ اس اسکیم کیلئے مزید بجٹ کی منظوری کی چیف منسٹر سے سفارش کرے۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے سکریٹری اقلیتی بہبود کو ہدایت دی کہ حیدرآباد اور رنگا ریڈی میں اس اسکیم پر بطور خاص نظر رکھی جائے اور کسی اقلیتی ادارے سے 10 ملازمین کو فراہم کرتے ہوئے زیر التواء درخواستوں کی عاجلانہ یکسوئی کو یقینی بنائیں۔ حج کمیٹی سے 10 ملازمین کو حیدرآباد و رنگا ریڈی کیلئے الاٹ کیا جائے گا۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے ذاتی آٹو رکشا اسکیم کی درخواستوں کی جانچ کا جائزہ لیا اور فینانس کارپوریشن کو ہدایت دی کہ جلد سے جلد مستحق امیدواروں کا انتخاب کرتے ہوئے اسکیم کا آغاز کریں۔ انہوں نے ہر ضلع میں 500 آٹو رکشا فراہم کرنے کیلئے تجاویز پیش کرنے کی ہدایت دی۔ڈپٹی چیف منسٹر نے کہا کہ جاریہ سال اسکیمات پر موثر عمل آوری اور بجٹ کے بہتر استعمال کے ذریعہ آئندہ سال بجٹ میں اضافہ اور بعض نئی اسکیمات کے آغاز کی راہ ہموار کی جاسکتی ہے۔ انہوں نے آٹو رکشا اسکیم کے امیدواروں کے انتخاب میں شفافیت کی ہدایت دی۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے 11 نومبر کو منعقد ہونے والے یوم اقلیتی بہبود کے انتظامات کا جائزہ لیا۔ ان تقاریب میں چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ کو مدعو کیا جارہا ہے۔

TOPPOPULARRECENT