Friday , October 20 2017
Home / کھیل کی خبریں / شامی فٹبال ٹیم میں شمولیت سے ہوزے مورینہو کا انکار

شامی فٹبال ٹیم میں شمولیت سے ہوزے مورینہو کا انکار

لندن۔ 10 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) ہوزے مورنہو نے اصرار کے ساتھ کہا ہے کہ رواں موسم گرما کے دوران وہ کسی فٹبال ٹیم کے انتظامیہ میں ضرور شامل ہوجائیں گے لیکن شام کی قومی فٹبال ٹیم میں شامل نہیں ہوں گے، حالانکہ اس جنگ زدہ ملک نے ان کی خدمات سے استفادہ کیلئے پُرعزم مساعی کی ہے۔ پرتگال کے 53 سالہ فٹبال ہوزے مورنہو ڈسمبر میں چلسی کی طرف سے برطرف کئے جانے کے بعد سے بیروزگار ہیں اور مختلف قیاس آرائیوں کے ذریعہ انہیں مینچسٹر یونائٹیڈ سے مربوط کیا جارہا ہے جہاں لوئیس وان گال مسلسل مشکلات کا سامنا کررہے ہیں۔ مورنہو ہفتہ کو یہاں اینتھونی جوشووا اور چارلس مارٹن کے درمیان ہیوی ویٹ باکسنگ خطابی مقابلے کے بعد اسکائی اسپورٹس نیوز سے بات چیت کررہے تھے۔ انہوں نے شام سے پیشکش موصول ہونے کی توثیق کی اور کہا کہ انہوں (شامی فٹبال اسوسی ایشن) نے اپنے ویب سائٹ پر پیشکش کا وہ مکتوب جاری کیا ہے جو انہوں نے میرے ایجنٹ کو بھیجا تھا‘‘۔ مورنہو نے کہا کہ ’’میں کہہ سکتا ہوں کہ یہ (پیشکش) صحیح ہے لیکن ایک خاص انداز میں پورے احترام کے ساتھ کہنا چاہتا ہوں کہ اس پیشکش سے مجھے کوئی دلچسپی نہیں ہے‘‘۔ شام نے حال ہی میں اپنی فٹبال ٹیم کے کوچ فجر ابراہیم کو برطرف کردیا تھا اور اس کی ٹیم عنقریب سلطنت عمان میں منعقد شدنی مقابلوں میں حصہ لے گی۔ مورینہو نے کہا کہ وہ انگلینڈ میں کام کرنے سے دلچسپی رکھتے ہیں، جہاں ان کا خاندان سکونت پذیر ہے۔ انہوں نے کہا کہ ’’ کسی پیشکش کو مسترد کرنے کے موقف میں نہیں ہوں بلکہ کسی پیشکش کا بغرض قبولیت جائزہ لینا میری ضرورت ہے۔ یہ اپریل ہے۔ ہر چیز (اکثر مقابلے) جولائی میں شروع ہوں گے اور ہر فیصلہ مئی کے اختتام یا جون کے آغاز میں ہی کیا جاسکتا ہے‘‘۔

 

علیحدہ کپتانوں کا فیصلہ غیردانشمند
کراچی۔ 10 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) سابق ٹیسٹ کپتان وسیم اکرم نے کہا ہے کہ قومی ٹیم کیلئے تینوں فارمیٹس میں ایک ہی کپتان ہونا چاہیے، الگ الگ کپتان بنانا سمجھداری نہیں ، وہ ایک ہی کپتان ہونے کے حامی ہیں۔اکرم نے کہا کہ ’پاکستان کرکٹ کلچر مختلف ہے ، ہم ایک لیڈر کی پابندی نہیں کرسکتے تو پھر کھلاڑی تین کپتانوں کی بات کیسے مانیں گے۔

TOPPOPULARRECENT