Tuesday , August 22 2017
Home / دنیا / شام میں فوجی کارروائی پر امریکی زور

شام میں فوجی کارروائی پر امریکی زور

واشنگٹن ۔ 17 جون (سیاست ڈاٹ کام) درجنوں امریکی سفارت کاروں نے ایک داخلی میمو پر دستخط کیے ہیں جس میں شام سے متعلق حکومتی پالیسی پر تنقید کی ہے اور اس بات کا مطالبہ کیا ہے کہ شام میں صدر بشارالاسد کے خلاف فوجی حملے کیے جائیں۔ اس مراسلے پر امریکی محکمہ خارجہ کے درمیانے درجے سے لے کر اعلیٰ درجے تک کے افسران نے دستخط کیے ہیں۔ سفارتکاروں کا موقف ہے کہ موجودہ پالیسی شامی صدر کو طاقت میں رہنے کے لیے مدد فراہم کر رہی ہے اور یہ شامی اپوزیشن کے خلاف ہے۔ اس قسم کی اختلافی دستاویز کا محکمہ خارجہ کو بھجوایا جانا غیر معمولی تو نہیں تاہم اتنی بڑی تعداد میں وائٹ ہاؤس کے موقف کے خلاف سفارتکاروں کی جانب سے آواز اٹھنا غیر معمولی ضرور ہے۔ امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان نے اس میمو کے موصول ہونے کی تو تصدیق کی ہے تاہم اس کے مواد کے حوالے سے کسی قسم کا تبصرہ کرنے سے انکار کیا ہے۔ دوسری جانب امریکی وزیرِ خارجہ نے کہا ہے کہ انھوں نے ابھی یہ میمو نہیں دیکھا تاہم وہ واشنگٹن پہنچ کر اس پر بات چیت کریں گے۔ دستاویز میں اس بات پر زور دیا گیا ہے کہ صدر بشارالاسد کے خلاف فوجی کارروائی کی جائے بصورتِ دیگر ان کی حکومت باغیوں کے ساتھ مذاکرات کے لیے کوئی دباؤ محسوس نہیں کرے گی۔ اس سے اس خدشے کی بھی عکاسی ہوتی ہے کہ امریکہ اور روس کی جانب سے شام کے لیے اپنائے گئے مشترکہ امن کے عمل کا خاتمہ اسد حکومت کو فائدہ دے رہا ہے۔ حکومت اور اپوزیشن دونوں کی جانب سے فائر بندی کی خلاف ورزی کی جاتی ہے۔ مگر صدر اسد نے اعلانیہ طور پر عارضی جنگ بندی کا سامنا کیا اور انھیں ایران اور روس کی جانب سے فوجی حمایت حاصل ہے۔ اس سے پتہ چلتا ہے کہ وہ حلب جیسے اہم شہر سمیت حکمت عملی لحاظ سے اہم علاقوں کی دوبارہ عملداری چاہتے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT