Monday , July 24 2017
Home / ہندوستان / شراب کی دکانات کیخلاف احتجاج پر 175 افراد ماخوذ

شراب کی دکانات کیخلاف احتجاج پر 175 افراد ماخوذ

مظفر نگر ، 12 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) اس ضلع میں شراب کی دکانات کو نقصان پہنچانے کی پاداش میں 175 افراد بشمول خواتین پر مقدمہ بنایا گیا ہے، پولیس نے آج یہاں یہ بات کہی۔ شراب کی دکانات کو قومی اور ریاستی شاہراؤں سے منتقل کرنے سے متعلق سپریم کورٹ رولنگ کے بعد زیادہ تر خواتین کی قیادت میں جاری مخالف شراب مظاہرے اور اُن کی منتقلی گزشتہ روز جاری رہی۔ یہ احتجاج مظفرنگر کے ساتھ پڑوسی اضلاع میرٹھ، سہارنپور اور بجنور میں شدت اختیار کرگئے ہیں۔ شراب کی دکانات کو رہائشی علاقوں تک منتقل کردینے کے خلاف خواتین احتجاج کرتے ہوئے سڑکوں پر نکل آئی ہیں، جسے دیکھتے ہوئے نظم و نسق نے اصلاحی اقدامات کی تیاری کی اور بیوپاریوں کی سلامتی کو یقینی بنانے کی کوشش ہورہی ہے۔ گزشتہ روز پولیس نے یہاں شہر میں الماسپور اور بھوپا برج کے قریب وائن شاپس کو نقصان پہنچانے پر مقدمات درج رجسٹر کئے ہیں۔ سرکل آفیسر تیج بیر سنگھ کے مطابق 175 افراد بشمول 31 خواتین کو ملزمین بنایا گیا ہے۔ اُنھوں نے کہاکہ احتجاجی لوگ شراب کی دوکانات کو رہائشی علاقوں سے منتقل کرنے کا مطالبہ کررہے ہیں۔ حالیہ عرصہ میں تشدد اور آتشزنی کے کئی واقعات پیش آئے ہیں۔ مشتعل عوام رہائشی محلوں میں شراب کی دوکانات قائم کرنے کے خلاف احتجاج کررہے ہیں، یہ وہ دوکانات ہیں جنھیں نیشنل اور اسٹیٹ ہائی ویز سے آبادی کے علاقوں میں منتقل کیا جارہا ہے۔
مخالف شراب احتجاج پر خاتون پر پولیس عہدیدار کا تھپڑ
اِس دوران کوئمبتور میں ایک سینئر پولیس عہدیدار نے مخالف شراب کارروائی کے دوران احتجاجی خاتون پر تھپڑ رسید کردیا۔ یہ واقعہ کوئمبتور کے پڑوسی ضلع تیروپور میں پیش آیا جو کیمرے میں قید ہوگیا۔ یہ منظر عام پر آنے کے بعد مختلف گوشوں سے سخت مذمت کی جارہی ہے۔ خواتین کے بشمول چند افراد نے اپنے محلہ میں سرکاری ملکیتی شراب کی دکان کو بند کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے سڑک پر راستہ روک رکھا تھا۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT