Wednesday , September 20 2017
Home / Top Stories / ششی کلا انا ڈی ایم کے عبوری جنرل سکریٹری کی حیثیت سے برطرف

ششی کلا انا ڈی ایم کے عبوری جنرل سکریٹری کی حیثیت سے برطرف

تمام تقررات اور فیصلے بھی کالعدم ‘پارٹی کی جنرل کونسل کا متفقہ فیصلہ ‘جنرل سکریٹری کا عہدہ برخاست ‘ کوآرڈینیٹر و جوائنٹ کوآرڈینیٹر متعارف
چینائی 12 ستمبر ( سیاست ڈاٹ کام ) آل انڈیا انا ڈی ایم کے کے اعلی پالیسی ساز ادارہ جنرل کونسل کے اجلاس میں آج محروس عبوری جنرل سکریٹری وی کے ششی کلا کو اس عہدہ سے بیدخل کردیا گیا اور ان کی جانب سے کئے گئے تمام تقررات کو بھی کالعدم قرار دیدیا گیا ۔ جنرل کونسل کے اجلاس میں طاقتور جنرل سکریٹری کے عہدہ کو بھی ختم کردیا گیا ۔اس تعلق سے ایک قرار داد منظور کی گئی ہے ۔ اس اجلاس کا بے چینی سے انتظار کیا جا رہا تھا ۔ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ ششی کلا نے 15 فبروری تک جو بھی فیصلے کئے تھے ‘ جو تقررات کئے تھے اور جن لوگوں کو عہدوں سے ہٹادیا گیا تھا وہ تمام فیصلے کالعدم ہونگے ۔ 15 فبروری کو ششی کلا نے کرپشن کے ایک مقدمہ میں خود کو بنگلورو کی ایک عدالت میں پیش کردیا گیا تھا ۔ جنرل کونسل میں ششی کلا کی جانب سے کئے گئے فیصلوں کو کالعدم قرار دئے جانے سے ششی کلا کی جانب سے اپنے بھتیجے کا تقرر کئے جانے کا فیصلہ از خود ہی بے اثر ہوگیا ہے ۔ ششی کلا کو 29 ڈسمبر کو آل انڈیا انا ڈی ایم کے جنرل کونسل کے اجلاس میں پارٹی جنرل سکریٹری مقرر کیا یا تھا ۔ تاہم سپریم کورٹ کی جانب سے ششی کلا اور دو دوسروں کو غیر محسوب اثاثہ جات کے مقدمہ میں سزا سنائے جانے کے ایک دن بعد انہوں نے خود کو عدالت میں پیش کردیا تھا اور اب وہ بنگلورو کی جیل میں قید ہیں۔ آج کے اجلاس میںپارٹی نے کو آرڈینیٹر اور جوائنٹ کوآرڈینیٹر کے دو عہدے بھی متعارف کروائے ہیں۔

پارٹی کے اعلی قائدین بشمول ڈپٹی چیف منسٹر او پنیرا سیلوم اور چیف منسٹر کے پلانی سوامی ان عہدوں کیلئے انتخابات ہونے تک کو آرڈینیٹر اور جوائنٹ کو آرڈینیٹر ہونگے ۔ یہ اجلاس مدراس ہائیکورٹ کی اجازت کے بعد منعقد ہوا تھا ۔ اجلاس میں کوآرڈیٹنیٹر اور جوائنٹ کوآرڈینیٹر کو انتظامی اختیارات بھی سونپے گئے تاکہ پارٹی کو آگے بڑ؍ایا جاسکے ۔ کہا گیا ہے کہ جئے للیتا کی اچانک موت کے بعد تشویش کے دوران وی کے ششی کلا کو عبوری جنرل سکریٹری منتخب کیا گیا تھا تاکہ پارٹی کے معمول کے کام کو آگے بڑھایا جاسکے ۔ آج کے جنرل کونسل کے اجلاس میں اتفاق رائے سے ان کے تقرر کو منسوخ کیا جاتا ہے ۔ اجلاس میں یہ بھی فیصلہ کیا گیا ہے کہ ششی کلا نے اپنے وقت میں جو تقررات اور برطرفی کی تھی وہ بھی منسوخ سمجھی جائیگی ۔ آل انڈیا انا ڈی ایم کے کے دونوں متحارب گروپس کے 21 اگسٹ کو انضمام کے بعد پارٹی کے ایک سینئر عہدیدار نے کہا تھا کہ وی کے ششی کلا کو اس عہدہ سے ہٹانے کے اقدامات کئے جائیں گے ۔ پنیرا سیلوم گروپ نے اتحاد کیلئے یہی سب سے اہم شرط رکھی تھی ۔ اس اقدام پر پارٹی کے 19 ارکان اسمبلی نے ناراضگی ظاہر کی تھی جو پارٹی کے نظر انداز کردہ ڈپٹی جنرل سکریٹری ٹی ٹی وی دیناکرن کے حامی سمجھے جاتے ہیں۔ ان ارکان اسمبلی نے گورنر سی ایچ ودیا ساگر راؤ سے ملاقات کرتے ہوئے چیف منسٹر میں عدم اعتماد کا اظہار کیا تھا ۔ ششی کلا نے بنگلورو جیل روانگی سے قبل دیناکرن کو پارٹی کا ڈپٹی جنرل سکریٹری نامزد کیا تھا ۔ تاہم جنرل کونسل کے اجلاس میں کہا گیا ہے کہ دینا کرن نے بھی جو تقررات عمل میں لائے تھے یا جو تبدیلیاں کی تھیں وہ کالعدم قرار دی جائیں گی اور یہ پارٹی کیلئے قابل قبول نہیں ہونگی ۔ پارٹی نے جنرل سکریٹری کا عہدہ ختم کرتے ہوئے کہا کہ جئے للیتا مستقل جنرل سکریٹری رہی ہیں اور کوئی بھی ان کا مقام نہیں لے سکتا ۔ ان کے انتقال سے جو خلا پیدا ہوا ہے اسے پر نہیں کیا جاسکتا۔

TOPPOPULARRECENT