Friday , July 28 2017
Home / Top Stories / ششی کلا کو تشکیل حکومت کیلئے مدعو کرنے میں دانائی نہیں : گورنر راؤ

ششی کلا کو تشکیل حکومت کیلئے مدعو کرنے میں دانائی نہیں : گورنر راؤ

چینائی ، 10 فروری (سیاست ڈاٹ کام) وی کے ششی کلا کی چیف منسٹر ٹاملناڈو کا جائزہ حاصل کرلینے کی امیدیں ایسا لگتا ہے کہ آج ہوا ہوگئیں۔ سمجھا جاتا ہے کہ گورنر ودیاساگر راؤ اس نتیجے پر پہنچ گئے ہیں کہ ششی کلا کو حکومت تشکیل دینے کیلئے مدعو کرنا غیردانشمندی ہوگی۔ رات میں ٹی وی چیانلوں نے رپورٹ دی کہ گورنر نے تصفیہ طلب غیرمتناسب اثاثہ جات کیس اور ششی کلا کا ایم ایل اے نہ ہونا اپنی سفارش کیلئے منطق بتایا ہے۔ چیانلوں نے ایک رپورٹ کا حوالہ دیتے ہوئے جو ظاہر طور پر گورنر کی جانب سے مرکز کو ارسال کی گئی، کہا کہ گورنر یہاں کی ’’منفرد‘‘ صورتحال کے تناظر میں قانونی ماہرین سے مشاورت کرتے آئے ہیں۔ اس رپورٹ میں انھوں نے باور کیا جاتا ہے کہ دستور کی مختلف دفعات اور سپریم کورٹ کے فیصلہ کا حوالہ دیتے ہوئے یہ ظاہر کیا کہ وہ کوئی بھی فیصلہ کرنے سے قبل واضح صورتحال اُبھرنے کا انتظار کریں گے۔  چیانلوں نے اس رپورٹ کے حوالے سے کہا کہ گورنر نے مانا جاتا ہے یہی کہا کہ سپریم کورٹ کے معرض التواء فیصلے کے تناظر میں ششی کلا کی ایم ایل اے اور اس طرح چیف منسٹر بننے کی اہلیت کے تعلق سے غیریقینی کیفیت پائی جاتی ہے۔ حکومت کرناٹک نے حال میں سپریم کورٹ کو بتایا کہ ’’ہمیں اس فیصلے کی فکر ہے‘‘ جسے 6 جون 2016ء کو محفوظ کیا گیا تھا۔ تب فاضل عدالت نے بتایا جاتا ہے کہ کرناٹک حکومت کے سینئر کونسل سے مزید ایک اور ہفتہ انتظار کرنے کیلئے کہا تھا۔ مبینہ رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا کہ گورنر کی رائے میں ریاست میں حکمرانی کا کوئی خلاء نہیں کیونکہ موجودہ چیف منسٹر او پنیرسیلوم کو اُن کے استعفے کے بعد متبادل انتظامات تک برقرار رہنے کیلئے کہا جاچکا ہے۔ تاہم، چینائی میں گورنر کے دفتر نے واضح طور پر کہا ہے کہ ابھی تک کوئی رپورٹ مرکز کو پیش نہیں کی گئی ہے۔ اس طرح ٹاملناڈو میں وزارت اعلیٰ کیلئے انتظار طویل ہوگیا کیونکہ گورنر نے اس مسئلے پر ہنوز قطعی فیصلہ نہیں کیا ہے اور برسراقتدار آل انڈیا انا ڈی ایم کے پارٹی میں آج عداوت شدت اختیار کرگئی جب ششی کلا نے پارٹی پریسیڈیم چیئرمین ایف مدھوسدانن کو برطرف کردیا، جنھوں نے الیکشن کمیشن کو مکتوب تحریر کرتے ہوئے کہا ہے کہ انھیں جنرل سکریٹری تسلیم نہ کیا جائے۔ دوسری طرف چیف منسٹر پنیرسیلوم نے آج رات ادعا کیا کہ وہ اور ان کے حامی برسراقتدار پارٹی کو ’’کسی خاندان‘‘ کے ہاتھوں میں پڑنے نہیں دیں گے اور یہ کہ ’’اقتدار پر قبضہ کرلینے کیلئے ان عناصر کا خواب‘‘ آخرکار ’’دن کا خواب‘‘ ثابت ہوگا۔ قبل ازیں ششی کلا نے اپنی ساکھ کو نقصان پہنچانے والوں کو سخت پیام دیتے ہوئے مدھوسدنن کو پارٹی کی ابتدائی رکنیت سے برطرف کردیا، اور اُن کی جگہ سابق وزیر کے اے سینگوتائیان کو مقرر کیا۔ مدھوسدنن گزشتہ روز ہی اپنی وفاداری بدلتے ہوئے نگرانکار چیف منسٹر پنیرسیلوم زیرقیادت باغی کیمپ میں شامل ہوگئے تھے۔

TOPPOPULARRECENT