Saturday , September 23 2017
Home / کھیل کی خبریں / شعیب اختر کا دعویٰ : 1996ء میں بدترین میچ فکسنگ ہوئی

شعیب اختر کا دعویٰ : 1996ء میں بدترین میچ فکسنگ ہوئی

کراچی ، 17 اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام) سابق پاکستانی پیسر شعیب اختر نے آج دعویٰ کیا کہ میچ فکسنگ سن 1996ء میں اپنے عروج پر رہی اور کہا کہ ڈریسنگ روم کا ماحول شاذونادر ’مناسب و سازگار‘ رہا۔ وہ ٹی وی چیانل ’جیو نیوز ‘ سے بات کررہے تھے۔ انھوں نے کہا: ’’آپ یقین مانیں اُس دور میں (1996ء میں) ڈریسنگ روم کا ماحول ممکنہ حد تک بدترین ہوچلا تھا۔ جو کچھ ہورہا تھا وہ صرف کرکٹ نہیں تھا اور ڈریسنگ روم میں رہتے ہوئے کرکٹ پر توجہ مرکوز بہت مشکل تھا۔ تب بہت خراب ماحول پایا جاتا تھا۔‘‘ متنازعہ پیسر کے دعوے اس پس منظر میں سامنے آئے ہیں کہ دو روز قبل ہی پاکستانی لجنڈز جاوید میانداد اور شاہد آفریدی اپنی لفظی جنگ ختم کرلئے، جس نے پھر ایک بار پاکستان کرکٹ میں میچ فکسنگ الزامات اور اسکینڈل کو منظرعام پر لانے کا اندیشہ پیدا کردیا تھا۔ ثالثی کی مرہون منت سابق کپتان میانداد نے آفریدی کے خلاف الزامات واپس لے لئے، جبکہ انھوں نے دعویٰ کردیا تھا کہ اسٹار آل راؤنڈر نے میچز فکس کئے۔ میانداد نے یہ بھی دعویٰ کیا تھا کہ خود انھوں نے آفریدی کو ایسا کرتے ہوئے پکڑا تھا۔ تاہم ’راولپنڈی اکسپریس ‘ کے لقب سے مشہور اختر نے واضح کردیا کہ انھیں خوشی ہوئی کہ میانداد اور آفریدی کا تنازعہ ختم ہوچکا ہے۔

TOPPOPULARRECENT