Tuesday , July 25 2017
Home / ہندوستان / شہریوں کا رجسٹر ، چیف منسٹر آسام پر سپریم کورٹ برہم

شہریوں کا رجسٹر ، چیف منسٹر آسام پر سپریم کورٹ برہم

نئی دہلی ۔ 13 جولائی ( سیاست ڈاٹ کام ) سپریم کورٹ نے جو آسام میں شہریوں کے قومی رجسٹر کو اپ ڈیٹ کرنے کے عمل کی نگرانی کر رہی ہے ،آج چیف منسٹر سربنند سونووال کی شدید مذمت کی جنہوں نے یہ کہا تھا کہ اس مسودہ این آر سی کی 31 ڈسمبر تک اشاعت عمل میں لائی جائے گی۔ نیشنل رجسٹر آف سٹیزنس در اصل اس مقصد کیلئے تیار کیا جا رہا ہے کہ آسام کے اصل شہریوں کی نشاندہی کی جاسکے اور غیر قانونی نقل مکانی کو روکا جاسکے ۔ سپریم کورٹ نے کہا کہ جب عدالت کی جانب سے مقرر کردہ کمیٹی نیشنل رجسٹر فار سٹیزنس کے مسودہ کی اشاعت کے عمل کی نگرانی کر رہی ہے تو کسی بھی اتھاریٹی یا ایجنسی اس طرح کا بیان نہیں دے سکتی ۔ جسٹس رنجن گوگوئی اور جسٹس آر ایف نریمان پر مشتمل بنچ نے کہا کہ عدالت اس بات سے خوش نہیں ہے کہ کوئی بھی دوسری اتھاریٹی این آر سی مسودہ کی اشاعت کے عمل میں مداخلت کرے جبکہ عدالت اس سارے عمل کی نگرانی کررہی ہے۔ آج اس مسئلہ کی سماعت کے دوران بنچ کو مطلع کیا گیا کہ حالانکہ اس مسودہ کی اشاعت کی آخری تاریخ 31 مارچ 2019ء ہے، چیف منسٹر نے یہ کہا ہے کہ یہ کام 13 ڈسمبر 2017ء تک مکمل کرلیا جائے گا ۔ عدالت نے چیف منسٹر کے بیان پر کہا کہ اگر وہ خود ایسا کرنا چاہتے ہیں تو پھر انہیں ہی سارے عمل کی نگرانی کرنی چاہئے اور عدالت بری الذمہ ہوجائے گی ۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT