Wednesday , August 23 2017
Home / شہر کی خبریں / شہر میں استقبال رمضان المبارک کی تیاریاں ، مساجد کی آہک پاشی

شہر میں استقبال رمضان المبارک کی تیاریاں ، مساجد کی آہک پاشی

حفاظ کرام بھی مصروف ، نوجوانوں کو قرآن مجید کی تلاوت ، نمازوں کی پابندی کی تلقین کرنے کی ضرورت
حیدرآباد۔2مئی(سیاست نیوز) ماہ رمضان المبارک کی آمد کے ساتھ ہی شہر میں استقبال ماہ رمضان کی تیاریاں عروج پر پہنچ چکی ہیں اور مساجد کو رنگ و روغن کے علاوہ صفائی کے انتظامات کئے جانے لگے ہیں ۔ شعبان المعظم میں شب برأت سے قبل ماہ رمضان المبارک کے تمام انتظامات کی تکمیل کو ممکن بنانے کے اقدامات کئے جانے لگے ہیں ۔ رمضان المبارک ایسا مہینہ ہے جس میں ہر طبقہ مصروف ہوتا ہے ۔ حفاظ اکرام ماہ رمضان المبارک کے دوران تراویح کی تیاریوں میں مصروف ہیں تو تاجر برادری اس ماہ مقدس میں اپنے کاروبار کو وسعت دینے کے لئے کوشاں ہیں ۔ مولانا سید شاہ مرتضی علی صوفی خطیب و امام مسجد حافظ ڈنکا مغلپورہ نے ماہ رمضان المبارک کی آمد کی تیاریوں کے سلسلہ میں اہم نکات پر متوجہ کرواتے ہوئے کہا کہ ماہ رمضان المبارک کے دوران کثرت تلاوت قرآن مجید کے سلسلہ میں خصوصی اہتمام کرنے کی ضرورت ہے کیونکہ اکثر یہ دیکھا جا رہا ہے کہ نوجوان نسل اس سلسلہ میں غیر سنجیدگی کا مظاہرہ کر رہی ہے اور اس غیر سنجیدگی کی بنیادی وجہ موبائیل فون سے بڑھتی انسیت ہے اسی لئے اسے ترک کرتے ہوئے ضرورت کی حد تک استعمال کیا جائے اور تلاوت قرآن مجید پر توجہ مبذول کروائی جانی چاہئے۔ انہوں نے بتایا کہ ماہ رمضان المبارک کی آمد سے قبل جہاں تک ممکن ہو سکے ضرورت مندوں کو زکواۃ ادا کردی جائے تاکہ وہ ماہ رمضان المبارک کے دوران عبادتوں پر توجہ دے سکیں کیونکہ جب ضرورتمندوں کی ضرورت تکمیل ہو جاتی ہے تو ایسی صورت میں وہ اپنی ضرورتوں کے بجائے عبادتوں پر توجہ دینے لگ جائیں گے۔ مولاناحافظ سید مرتضی علی صوفی نے بتایاکہ ماہ شعبان المعظم کے دورانہی نوافل کی کثرت شروع کردی جائے تو ماہ رمضان المبارک کی خصوصی عبادتوں میں کو ئی خلل نہیں ہوگا بلکہ ان عبادتوں کے خشوع و خصوع میں اضافہ ہوگا۔ انہوںنے بتایا کہ عالم عرب میں اس بات کی روایات ملتی ہیں کہ زکواۃ ماہ شعبان میں ادا کردی جاتی تھی اور احدیث میں اس بات کا تذکرہ موجود ہے کہ ماہ شعبان سے رمضان المبارک کے روزو ںکی تیاریاں شروع کردی جانی چاہئے۔ انہوںنے ماہ رمضان المبارک سے قبل حقوق العباد کی ادائیگی کے سلسلہ میں اقدامات پر خاص توجہ دیں اور اگر کسی کو قرض یا سرمایہ کی ادائیگی کرنی ہو تو وہ ماہ رمضان المبارک سے قبل ممکن بنائیں کیونکہ حقوق اللہ کی ادائیگی کے ساتھ ساتھ حقوق العباد کی ادائیگی بھی ضروری ہے ۔مولانا حافظ عبدالقیوم نعمانی نے بتایا کہ ماہ رجب المرجب کے دوران ہی تیاریوں کا آغاز کردیتے ہیں ۔ انہوں نے بتایا کہ حفاظ اکرام صرف قرآن مجید کی تلاوت اور خوش الحانی یا دور پر توجہ مرکوز نہیں کرتے بلکہ جو حفاظ اکرام ذیابیطس یا بلڈ پریشر جیسے امراض میں مبتلاء ہیں وہ اپنی صحت پر بھی توجہ مرکوز کرنے لگتے ہیں تاکہ ان کی صحت ماہ رمضان المبارک کے دوران بہتر رہے۔ مولانا حافظ عبدالقیوم نعمانی نے بتایا کہ ریاست کے مختلف اضلاع میں شہر حیدرآباد کے حفاظ اکرام تراویح میں تلاوت قرآن مجید سنانے کیلئے جاتے ہیں اوراضلاع سے بھی کئی حفاظ دونوں شہروں حیدرآباد و سکندرآباد کی مساجد میں تروایح و شبینہ میں قرآن مجیدسنانے کے لئے پہنچتے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ ماہ رمضان المبارک کے دوران عبادتوں میں زیادہ وقت گذارنے کیلئے ماہ رمضان سے قبل جو کام مکمل کئے جا سکتے ہیں ان کاموں کی تکمیل قبل از وقت انجام دی جا نی چاہئے تاکہ ماہ رمضان المبار ک کے دوران کی جانے والی عبادتوں میں خشوع و خضوع برقرار رہ سکے۔

TOPPOPULARRECENT