Monday , October 23 2017
Home / شہر کی خبریں / شہر میں بارش ،موسم خوشگوار

شہر میں بارش ،موسم خوشگوار

حیدرآباد۔/25مئی، ( سیاست نیوز) ریاست تلنگانہ کے مختلف اضلاع عادل آباد، نظام آباد، کریم نگر، ورنگل ، کھمم ، میدک اور نلگنڈہ کے علاوہ ساحلی آندھرا کے بیشتر اضلاع میں گرمی کی لہر برقرار رہنے کا امکان ہے۔ محکمہ موسمیات کے بموجب ساحلی آندھرا، رائلسیما اور تلنگانہ میں بعض مقامات پر ہلکی سے اوسط بارش ہوگی۔ اسی طرح بعض مقامات پر درجہ حرارت میں اضافہ ہوگا اور یہ 40 تا 45 کے درمیان رہے گا۔ حیدرآباد اور اطراف و اکناف کے علاقوں میں آج شام کے وقت ہواؤں کے ساتھ ہلکی سے تیز بارش ہوئی جس کی وجہ سے موسم کافی خوشگوار ہوگیا تھا۔
جاریہ سال اوسط سے زائد بارش کی پیش قیاسی
٭٭  ملک میں اس وقت جنوب مغربی مانسون کی آمد کا انتظار ہے کیونکہ گزشتہ دو سال خشک سالی سے متاثر رہے اور خانگی موسمیات کی پیش قیاسی کرنے والی ایجنسی نے اسکائی میٹ نے کہا ہے کہ جاریہ سال اوسط سے زیادہ بارش ہوگی۔ ایجنسی کے نظر ثانی شدہ اندازوں کے مطابق اس سال اوسطاً 109 فیصد بارش ہوگی۔ اس سے خریف کی فصلوں کو نہ صرف خاطر خواہ پانی ملے گا بلکہ ربیع کے سیزن میں بھی یہ پانی کام آئیگا۔ ایجنسی نے 1951اور 2000 کے مابین طویل ترین اوسط کی بنیاد پر یہ پیش قیاسی کی ہے جبکہ اس عرصہ کا اوسط 881ملی میٹر ہے۔ اگر بارش کسی سال 96اور 104فیصد کے درمیان ہو تو اسے اوسط سمجھا جاتا ہے۔ اس سے زیادہ بارش کو اوسط سے زائد تصور کیا جاتا ہے۔ اس سال بھی اسکائی میٹ نے کیرالا کے ساحل پر بارش قبل از وقت شروع ہونے کی پیش قیاسی کی ہے جبکہ ہندوستانی میٹرولوجیکل ڈپارٹمنٹ کے مطابق مانسون کی آمد میں 6 دن کی تاخیر ہوسکتی ہے۔
لوگوں کے گناہوں اور مشکلات میں اضافہ ، مندروں کی آمدنی بڑھ گئی: چندرا بابو
وجئے واڑہ ۔/25مئی، ( پی ٹی آئی ) آندھرا پردیش میں مندروں کی آمدنی میں 27فیصد اضافہ ہوا ہے اور چیف منسٹر این چندرا بابو نائیڈو نے کہا کہ گناہوں میں اضافہ اور بڑھتے مصائب و مشکلات اس کی وجہ ہیں۔ ضلع کلکٹرس کی دو روزہ کانفرنس سے افتتاحی خطاب کے دوران  چندرا بابو نائیڈو نے کہا کہ لوگ گناہوں کا ارتکاب کررہے ہیں۔ بعض لوگ مسائل سے دوچار ہیں اور ان سے چھٹکارا پانے کیلئے وہ مندروں کو جاتے اور پرارتھنا کرتے ہیں۔ جب ان کی مشکلات مزید بڑھ جاتی اور گناہوں میں زیادہ اضافہ ہوجاتا ہے تو وہ مندروں کو آتے اور بھینٹ چڑھاتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ نہ صرف مندر بلکہ لوگ سکون کی خاطر گرجا گھروں اور مسجدوں کا بھی رُخ کررہے ہیں۔ اگر منادر، چرچس اور مساجد نہ ہوتے تو لوگ پاگل ہوجاتے۔ اس کے ساتھ ہی ساتھ چندرا بابو نائیڈو نے یہ بھی کہا کہ شراب کی فروخت میں کمی آئی ہے جس کی وجہ سے ریاست کی آمدنی بھی کم ہوگئی۔

TOPPOPULARRECENT