Thursday , August 17 2017
Home / جرائم و حادثات / شہر میں جرائم کے تدارک کے لیے پولیس کے اقدامات

شہر میں جرائم کے تدارک کے لیے پولیس کے اقدامات

مختلف پولیس اسٹیشن حدود میں مجرمین پر دو روزہ جامع سروے کا انعقاد
حیدرآباد ۔ 6 ۔ نومبر : ( ایجنسیز ) : شہر میں جرائم کے تدارک کے سلسلہ میں چہارشنبہ اور جمعرات کو مختلف پولیس اسٹیشنس کے حدود میں ایک دو روزہ جامع سروے منعقد کیا گیا ۔ پولیس کی جانب سے یہ معلومات اکٹھا کی گئیں کہ گذشتہ پانچ سال کے دوران مختلف جرائم کے سلسلہ میں تقریبا 11000 مجرمین کو گرفتار کیا گیا ۔ سٹی پولیس کمشنریٹ کی مختلف ونگس کو کمپیوٹرائز کیا جارہا ہے تاکہ کمشنر سے لے کر ایک پولیس کانسٹبل تک کو صرف ایک کلک پر انفارمیشن کی رسائی حاصل ہوسکے ۔ اس کے لیے مختلف اپلیکیشنس تیار کئے گئے ہیں ۔ پولیس نے چین چھیننے والوں ، رہزنوں ، ڈاکوؤں ، توجہ ہٹانے والی ٹولیوں ، پاکٹ ماروں ، آٹو موبائیل کا سرقہ کرنے والے سارقوں اور دیگر جرائم کا ارتکاب کرنے والوں کے بارے میں پوری معلومات کو اکٹھا کیا ہے ۔ دراصل پولیس نے وہ کونسے کے مقام کے ہیں اس سے متعلق ڈیٹا جمع کیا ہے ۔ سٹی پولیس نے نشاندہی کی کہ گرفتار شدہ 11000 کے منجملہ 7584 کا تعلق حیدرآباد سے ہے اور مجرمین سے متعلق ڈیٹا کے کمپیوٹرائزیشن سے پولیس کو ان پر مسلسل نظر رکھنے میں مدد ہوگی ۔ یہ دو روزہ سروے مجرمین کی جانب سے ان کی گرفتاری کے وقت دئیے گئے پتہ کی بنیاد پر کیا گیا ۔ اس دوران سٹی پولیس کے عہدیدار مجرمین کی حقیقت پر مزید انفارمیشن جمع کرنے کے لیے خود کو تیار کررہے ہیں کہ آیا ان کی جانب سے دئیے گئے پتہ پر سکونت پذیر ہیں ؟ اگر ایسا ہے تو وہ کہاں تک ہیں ؟ کیا انہوں نے رہائی پر رہزنی کا ارتکاب کرنے کی پہلی حالت پر آئے ہیں یا انہوں نے اپنے رویہ میں تبدیلی لائی ہے ؟ ان کے خاندانوں کے حالات کیا ہیں ؟ کیا انہوں نے دیگر مقامات پر جرائم کا ارتکاب کیا ؟ کیا وہ دیگر مقامات پر گرفتار ہوئے ؟ اس انفارمیشن کے علاوہ پولیس ان کے فوٹو بھی حاصل کررہی ہے ۔ اس سروے میں ہوم گارڈس سے لے کر انسپکٹر تک پولیس کے تمام رینکس کے ملازمین اور عہدیداروں نے حصہ لیا ۔ کمشنر نے اس سروے کو مکمل کرنے والے پہلے 10 پولیس اسٹیشنس کو ترغیبات کا اعلان کیا ۔ اے سی پی اور ڈی سی پی رتبہ کے عہدیداروں نے اس سروے میں حصہ لیا ۔ کمشنر پولیس مہیندر ریڈی نے بھی بنجارہ ہلز پولیس اسٹیشن کا اچانک دورہ کیا ۔ اس سروے کو تضادات کو دور کرنے کے لیے منعقد کیا گیا ۔ بعض اوقات گرفتار کیے جانے والوں کی جانب سے انکی گرفتاری کے وقت دیا جانے والا پتہ غلط ہوتا ہے ۔ حالانکہ وہ دیگر مقامات کے ہوتے ہیں حیدرآباد میں ان کی گرفتاری پر امکان ہے کہ ان کا پتہ غلط ہوسکتا ہے ۔ فیلڈ سطح پر انفارمیشن جمع کرنے سے پولیس کو ایک سچی تصویر حاصل ہوگی ۔ جملہ 2580 افینڈرس ویسٹ زون پولیس اسٹیشن حدود میں رہتے ہیں ۔ گوشہ محل پولیس اسٹیشن حدود میں مجرمین کی بڑی تعداد موجود ہے ۔ کیوں کہ یہاں منگر بستی واقع ہے ۔ کمشنر پولیس نے کہا کہ شہر میں مجرمین اور سابق مجرمین پر کڑی نگرانی جاری رہے گی ۔ مجرمین کے ڈیٹا بیس کو وقتاً فوقتاً اپ لوڈ کیا جائے گا ۔ انہوں نے کہا کہ اس سروے کو منعقد کر کے مجرمین کے رویہ پر نظر رکھی گئی ہے ۔ مجرمین کی اصلاح کے لیے حکومت ترغیبات کا اعلان کرے گی ۔۔

TOPPOPULARRECENT