Friday , October 20 2017
Home / شہر کی خبریں / شہر میں مفت پارکنگ کی سہولت کیلئے اقدامات

شہر میں مفت پارکنگ کی سہولت کیلئے اقدامات

شاپنگ مالس اور کمرشیل عمارتوں میں فیس وصول کرنے کی اجازت نہیں
حیدرآباد۔5اپریل (سیاست نیوز) شہر میں مفت پارکنگ کی سہولت فراہم کرنے کیلئے کئی اقدامات کیئے جا رہے ہیں اس کے برعکس خانگی شاپنگ مالس یا کسی کمرشیل عمارت میں پارکنگ کیلئے فیس وصول کرنے کی اجازت نہیں ہے لیکن باضابطہ ان مقامات پر پارکنگ فیس وصول کی جا رہی ہے جنپر نہ حکومت کا کنٹرول ہے اور نہ ہی بلدیہ اس سلسلہ میں سرگرم نظر آتی ہے۔محکمہء ٹریفک پولس اور بلدیہ نے حالیہ دنوں منعقدہ ایک اجلاس میں انتہائی اہم فیصلہ کرتے ہوئے شہر میں مفت پارکنگ کی فراہمی کے لیئے مقامات کی نشاندہی کا عمل شروع کردیا ہے او ر بعض مقامات پر مفت پارکنگ سہولت کا آغازبھی ہو چکا ہے۔ شہر کے بیشتر خانگی کمرشیل کامپلکس میں تاجرین کی اسوسیشن یا مالکین کی جانب سے یہ پارکنگ فیس وصول کی جا رہی ہے جو بلکلیہ طور پر غیر قانونی ہے۔ شہر میں پارکنگ مافیا کی سرگرمیوں میں ہوئے اضافے کو دیکھتے ہوئے بلدیہ اور پولس نے پارکنگ کے تمام ٹھیکے بتدریج منسوخ کرنے کا فیصلہ کیا ہے اگر اسی طرح بلدیہ و پولس کیجانب سے پارکنگ فیس کے نام پر عوام کو لوٹ رہے تجارتی کامپلکس کے خلاف کاروائی کا آغاز کرتی ہے تو ایسی صورت میں عوام کو بڑی راحت ہوگی۔بلدیہ کے شعبہ ٹاؤن پلاننگ میں خدمات انجام دے رہے ایک عہدیدار نے بتایا کہ خانگی کامپلکس میں پارکنگ فیس وصول کرنا اس لیئے غیر قانونی سمجھا جاتا ہے کیونکہ تجارتی کامپلکس ‘ تھیٹر ‘ ملٹی پلکس اور  کمرشیل عمارتوں کو جب اجازت فراہم کی جاتی ہے تو پارکنگ کی جگہ کی تفصیل حاصل کی جاتی ہے اور کسی بھی تجارتی ادارے کے آغاز کے لیئے یہ ضروری ہے کہ تاجر گاہک کو پارکنگ کی سہولت فراہم کرے اگرتاجرین گاہک سے پارکنگ کیلئے رقومات وصول کرتے ہیں تو یہ ان کی آمدنی میں شمار ہوگا لیکن یہ آمدنی کہیں دکھائی نہیں جاتی اس اعتبار سے یہ آمدنی غیر قانونی ہوجاتی ہے۔ مجلس بلدیہ عظیم تر حیدرآباد کی جانب سے اس خصوص میں توجہ نہ دیئے جانے کے متعلق بتایا جاتا ہیکہ شہر کے بیشتر بلڈرس کے بلدی عہدیداروں اور سیاستدانوں سے بہترین تعلقات ہوتے ہیں جس کے سبب معمولی نظر آنے والے 5 یا 10 روپئے کے حساب سے وصول کی جانے والی پارکنگ فیں بغیر ٹیکس کی لاکھوں کی آمدنی میں تبدیل ہوتی جارہی ہے۔

TOPPOPULARRECENT