Wednesday , October 18 2017
Home / شہر کی خبریں / شہر کے کئی علاقوں میں پینے کے پانی کی قلت

شہر کے کئی علاقوں میں پینے کے پانی کی قلت

ٹینکرس کے ذریعہ سربراہی آب کی کوشش بھی ناکافی
حیدرآباد۔17ڈسمبر ( سیاست نیوز) شہر حیدرآباد کے کئی علاقے میں عوام پینے کے پانی کیلئے پریشانیوں کا سامنا کررہے ہیں لیکن اس مسئلہ پر کوئی توجہ مبذول نہیں کی جارہی ہے اور نہ ہی جن علاقوں میں سربراہی آب بند ہے ان علاقوں کو بذریعہ ٹینکر پانی سربراہ کرنے کے اقدامات کئے جارہے ہیں جس کی وجہ سے شہریان حیدرآباد کو پینے کے پانی کے لئے سخت مشکلات کا سامنا کرنا پڑرہا ہے اور عوام بحالت مجبوری پینے کے لئے پانی خرید رہے ہیں ۔ دونوں شہروں کے کئی علاقوں میں سربراہی آب مفلوج ہونے کے سبب عوام  کو پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑرہا ہے ۔ شہر کے بیشتر علاقوں میں سنگور اور مانجرا پانی کی سربراہی یقینی بنانے کے علاوہ کرشنا واٹر پراجکٹ کے دوسرے مرحلے کے آغاز کے اعلانات کئے جارہے ہیں لیکن اگر زمینی حقائق کا جائزہ لیا جائے تو دونوں شہروں کے کئی علاقوں یوسف گوڑہ ‘ جوبلی ہلز ‘ بنجارہ ہلز ‘ مانصاحب ٹینک ‘ ٹولی چوکی ‘ امیر پیٹ ‘ نامپلی ‘ ملک پیٹ ‘ ایل بی نگر ‘ سوماجی گوڑہ ‘ ایرہ گڈہ ‘ کالا پتھر ‘ تاڑبن ‘ شاہ علی بنڈہ ‘ چندرائن گٹہ ‘ بہادر پورہ ‘ آغاپورہ ‘ ملے پلی کے علاوہ دیگر علاقوں میں عوام کو پینے کے پانی کیلئے سخت دشواریوں کا سامنا کرنا پڑرہا ہے ۔ محکمہ آبرسانی کے عہدیداروں کا کہنا ہے کہ جاریہ سال کے اختتام تک سربراہی آب میں اضافہ ہوگا جس سے مسائل دور ہونے کے قوی امکانات ہے ۔ عہدیدار یہ اعتراف کررہے ہیں کہ پانی کی قلت کے سبب کچھ علاقوں کو دشواریاں کا سامنا کرنا پڑرہا ہے ۔ بتایا جاتا ہے کہ جاریہ ماہ کے اواخر تک سربراہی آب بڑھاکر 86ایم جی ڈی کردی جائے گی ‘ جب کہ فی الحال تقریباً طلب کے برعکس  نصف سربراہی ممکن ہوپارہی ہے ۔ ناکافی بارش اور کمزور مانسون کے باعث شہر میں زیر زمین پانی کم ہونے کے  سبب بھی عوام کو دشواریوں کا سامنا کرنا پڑرہا ہے ۔ بتایا جاتا ہے کہ نامپلی ‘ ملے پلی ‘ آغاپورہ کے علاوہ پرانے شہر کے کئی علاقوں میں عوام کی جانب سے متعدد شکایات کے باوجود محکمہ آبرسانی بذریعہ ٹینکرس پانی کی سربراہی کو یقینی بنانے میں کوتاہی کررہا ہے جس کی وجہ سے عوام میں شدید ناراضگی پائی جاتی ہے ۔ شہر کے بعض علاقوں میںآلودہ پانی کی سربراہی کی شکایات منظر عام پر آرہی ہے جن کے متعلق عہدیداروں کا کہنا ہے کہ مسلسل سربراہی آب نہ ہونے کے سبب بعض علاقوں سے اس طرح کی شکایات موصول ہوئی ہیں جنہیں حل کرنے کیلئے اقدامات کئے جارہے ہیں ۔  شہر حیدرآباد کے مکینوں کو  آئندہ موسم گرما کے دوران شدید پانی کی قلت کا سامنا کرنا پڑسکتاہے ۔ اس مسئلہ کے حل کیلئے محکمہ آبرسانی کی جانب سے متعدد اقدامات سے متعلق غور کیا جارہا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT