Wednesday , September 20 2017
Home / ہندوستان / شہر گرگاؤں میں تعمیراتی سرگرمیاں مفلوج

شہر گرگاؤں میں تعمیراتی سرگرمیاں مفلوج

تقریباً 10ہزار ورکرس آبائی مقامات کو روانہ
گرگاؤں۔/8ڈسمبر، ( سیاست ڈاٹ کام ) قومی دارالحکومت دہلی سے متصل شہر گڑگاؤں میں مرکزی حکومت کی جانب سے نوٹ بندی کا فیصلہ تقریباً ایک لاکھ تعمیراتی مزدوروں پر شب خون مارا ہے ۔ محکمہ لیبر کے ذرائع نے بتایا کہ یومیہ اجرت پر کام کرنے والے 10تا 12ہزار مزدور شہر چھوڑ کر چلے گئے ہیں جبکہ بیروزگاری اور مالی بحران کا شکار یہ مزدور ضروریات کی زندگی کی تکمیل کیلئے جدوجہد کررہے ہیں۔ تاہم حقائق کا پتہ چلاتے ہوئے لیبر ڈپارٹمنٹ نے سروے کا حکم دیا ہے۔ شہر گرگاؤں جو کہ رئیل اسٹیٹ صنعت کا مرکز ہے اور تعمیراتی سرگرمیوں کے ایا م میں تقریباً 50ہزار ورکرس نقل مکانی کرکے یہاں آتے ہیں جس میں بیشتر ایک سال سے زائد قیام پذیر ہوتے ہیں لیکن اب وہ نقد رقم کی قلت اور کام نہ ملنے پر مالی مشکلات سے دوچار ہیں چونکہ رئیل اسٹیٹ کی صنعت سُست روی کا شکار ہے اور بیروزگاری کی وجہ سے یہ مزدور مکان کا کرایہ ادا کرنے اور اشیائے ضروریہ خریدنے اور اپنے مکانات کو رقم روانہ کرنے سے قاصر ہیں۔ راجندر سروہا ضلع کنوینر بھودن نرمان کامگار یونین گرگاؤں نے یہ اطلاع دی بتایا کہ گرگاؤں آنے والے ورکرس کی اکثریت راجستھان، مدھیہ پردیش، اتر پردیش اور بہار کی ہے جن کی آمد اگسٹ سے شروع ہوکر ڈسمبر تک جاری رہتی ہے اور دیہاتوں میں زرعی سرگرمیاں شروع ہونے سے قبل مارچ تک قیام پذیر رہتے ہیں لیکن اب مزدوروں کے اڈہ پر کام دینے کیلئے طلب نہیں کررہا ہے کیونکہ مزدوری ادا کرنے کیلئے لوگوں کے پاس نقد رقم نہیں ہے جس کی وجہ سے تعمیراتی مزدوروں کی حالت قابل رحم ہوگئی ہے۔

TOPPOPULARRECENT