Friday , September 22 2017
Home / انتقال نام / شیخ الحدیث اساتذ الاساتذہ مولانا ظہیرالدین رحمانی کا انتقال

شیخ الحدیث اساتذ الاساتذہ مولانا ظہیرالدین رحمانی کا انتقال

حیدرآباد 15 اگسٹ (راست) شیخ اسماعیل افضل کی اطلاع کے بموجب جنوبی ہند کی مشہور و معروف درسگاہ جامعہ دارالسلام عمرآباد ٹاملناڈو کے سابق ناظم جامعہ و شیخ الحدیث مولانا ظہیرالدین اثری رحمانی کا 14 اگسٹ بروز پیر بعد نماز مغرب عمرآباد میں انتقال ہوگیا۔ مولانا کی حدیث کی سند موجودہ دور کی سب سے اعلیٰ سند سمجھی جاتی ہے۔ آپ کا شمار مجاہدین آزادی میں ہوتا ہے۔ گاندھی جی، مولانا ابوالکلام آزاد، مولانا حسین احمد مدنی، جواہرلال نہرو، مولانا ظفر علی خان وغیرہ سے آپ کی ملاقات رہی۔ آزادی کے لئے آپ نے قید و بند کی صعوبتیں بھی برداشت کیں۔ جامعہ کے اساتذہ میں مولانا محترم نے جامعہ میں 60 سے اوپر علم حدیث کی خدمت کی۔ وہ واحد شخصیت تھے جن سے بیرونی طلبہ جس میں عربوں کی تعداد زیادہ ہے، علم حدیث کی راست سماعت کے بعد باقاعدہ سند حاصل کی تھی۔ آپ نے تقریباً 97 سال کی عمر پائی۔ مولانا محترم کے بے شمار شاگرد ہندوستان، سعودی عرب، قطر، عمان، کویت، انگلینڈ میں موجود ہیں۔ 15 اگسٹ بروز منگل بعد نماز ظہر جامعہ کی مسجد میں نماز جنازہ ادا کی گئی جس میں بے شمار طلبہ و شاگردوں نے شرکت کی۔

TOPPOPULARRECENT