Thursday , September 21 2017
Home / کھیل کی خبریں / ’’صبر و سکون کے مقابلے کوئی رن ریٹ بھاری نہیں ہوتا‘‘

’’صبر و سکون کے مقابلے کوئی رن ریٹ بھاری نہیں ہوتا‘‘

اعصاب پر قابو کے ساتھ بڑا ہدف تک رسائی ممکن : دھونی
پونے۔ 23 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) مہیندر سنگھ دھونی نے طوفانی بیٹنگ کے ساتھ اپنے جارحانہ فارم میں واپسی کے بعد ہے کہ ہدف کے تعاقب میں کوئی بھی مطلوبہ رن ریٹ ناقابل رسائی نہیں رہتا جب کوئی صبر و سکون تک ساتھ بالکل ویسا ہی سامنا کرے جس طرح انہوں نے سن رائزرس حیدرآباد کے خلاف آئی پی ایل کے ایک مقابلہ میں رائزنگ پونے سوپر جینٹس کو جیت دلانے کیلئے کیا ہے۔ 177 رنز کا ہدف پورا کرنے کیلئے پونے کو آخری 3 اوورس میں 47 رنز درکار تھے کہ 34 گیندوں میں وہ 61 رنز بناکر ناٹ آؤٹ رہے۔ دھونی نے آخری گیند پر ایک متاثرکن ٹور ڈرائیور کے ذریعہ پونے کو فتح سے ہمکنار کیا جس پر بشمول کپتان اسٹیو اسمتھ ہزاروں افراد خوب داد دیئے بغیر نہیں رہ سکے تھے۔ دھونی نے مزید کہا کہ ’’کوئی رن ریٹ بڑا نہیں ہوتا بلکہ تحت شعور میں یہ بات ہونی چاہئے کہ مدمقابل کے بولر کاکس انداز میں سامنا کیا جائے چنانچہ 7، 8، 9، 10 کوئی معنی نہیں رکھتے۔ ضرورت اس بات کی ہوتی ہے کہ آپ اپنا صبر و سکون برقرار رکھیں‘‘۔ مین آف دی میچ بیٹسمین نے کہا کہ ’’یہ بات اعصاب سے بخوبی نمٹنے سے بھی تعلق رکھتی ہے۔ سب سے بڑھ کر آخری 4 اوورس میں یہ محسوس کررہا تھا کہ 60 رنز کے قریب کون پہونچے گا بشرطیکہ حریف کھلاڑی ٹھیک نہ کھیلیں اور آپ خوب کھیل سکیں‘‘۔ صبر و سکون بلاشبہ دھونی کے کرکٹ کیریئر کا اہم وصف رہا ہے لیکن حالیہ عرصہ کے دوران آئی پی ایل میں ان کی بیٹ رنوں کے فقدان کے سبب بنجر ہوچکی تھی اور کل تک بھی یہی حال تھا لیکن دھونی اپنے روایتی عزم کے ساتھ دوبارہ فام میں آئے اور گزشتہ روز اپنے روایتی ہٹس لگاتے ہوئے ثابت کردیا کہ بہتر کھیل کے لئے صبر و سکون بھی ضروری ہے۔

TOPPOPULARRECENT