Friday , July 21 2017
Home / سیاسیات / صدارتی انتخاب: بی جے پی ، اپوزیشن کی سرگرمیوں میں شدت

صدارتی انتخاب: بی جے پی ، اپوزیشن کی سرگرمیوں میں شدت

نئی دہلی ؍ بھوپال 12 جون (سیاست ڈاٹ کام) برسر اقتدار این ڈی اے اور اپوزیشن پارٹیوں کا گروپ جو ابھی ٹھوس طور پر متحد نہیں ہے، صدارتی امیدوار پر اپنی کوششیں تیز کررہے ہیں اور اگر اتفاق رائے پیدا نہیں ہوتا ہے تو مسابقتی مقابلہ ہوگا۔ اِس مسئلہ پر طویل خاموشی کے بعد بی جے پی سربراہ امیت شاہ نے آج سہ رکنی کمیٹی تشکیل دی جو مرکزی وزراء راجناتھ سنگھ، ارون جیٹلی اور ایم وینکیا نائیڈو پر مشتمل ہے جو اِس موضوع پر این ڈی اے حلیفوں اور اپوزیشن کے ساتھ مشاورتیں منعقد کریں گے۔ بی جے پی کی طرف سے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ یہ کمیٹی مختلف سیاسی جماعتوں کے قائدین سے صدارتی چناؤ کے بارے میں مشاورت کرتے ہوئے اتفاق رائے پیدا کرنے کی کوشش کرے گی۔ دریں اثناء اپوزیشن کی جانب سے 10 رکنی ٹیم تشکیل دی گئی ہے جو یہاں 14 جون کو پہلا اجلاس منعقد کرتے ہوئے کسی متفقہ امیدوار کو تلاش کرنے کی کوشش کرے گی۔ وہ پہلے ہی اِس مسئلہ پر بات چیت کے کئی دور منعقد کرچکے ہیں لیکن ابھی تک اپوزیشن کے کسی مشترک امیدوار کا اعلان نہیں کیا گیا ہے۔ صدر جمہوریہ پرنب مکرجی کی میعاد 25جولائی کو ختم ہورہی ہے ۔ الیکشن کمیشن نے صدارتی انتخاب کے عمل کا اعلان کردیا ہے ۔ صدارتی انتخاب کا اعلامیہ 14جون کو جاری ہوگا۔ نامزدگی داخل کرنے کی آخری تاریخ 28 جون ہے اور ضرورت پڑی تو 17جولائی کو ووٹنگ ہوگی۔ ووٹوں کی گنتی 20جولائی کو ہوگی۔ اپوزیشن کے ذرائع نے کہاکہ وہ برسر اقتدار اتحاد کی طرف سے اپنے امیدوار کے اعلان کے منتظر ہیں اور این ڈی اے کے تجویز کردہ نام کا اظہار ہوجاتا ہے تو وہ غور کریں گے کہ آیا وہ اُنھیں قبول ہے یا نہیں۔ ایک سینئر لیڈر نے کہاکہ اگر این ڈی اے کے ساتھ بات چیت کے دوران اتفاق رائے نہیں ہوتا ہے تو اپوزیشن برسر اقتدار اتحاد کے خلاف مشترکہ امیدوار پیش کرے گا۔ ذرائع نے کہاکہ کانگریس قائدین غلام نبی آزاد اور ملکارجن کھرگے دس رکنی گروپ میں کانگریس کی نمائندگی کریں گے، جس میں دیگر اپوزیشن قائدین جیسے جے ڈی یو کے شرد یادو، آر جے ڈی کے لالو پرساد اور سی پی آئی (ایم) کے سیتارام یچوری شامل ہیں۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT