Friday , August 18 2017
Home / شہر کی خبریں / صدر جمہوریہ کے انتخاب پر کانگریس پارٹی کے الزامات مسترد

صدر جمہوریہ کے انتخاب پر کانگریس پارٹی کے الزامات مسترد

کانگریس قائدین پر سی بی آئی مقدمات ، ٹی آر ایس ایم پی بی سمن اور ایم ایل اے ویویکانندا کی پریس کانفرنس
حیدرآباد۔7جولائی (سیاست نیوز) تلنگانہ راشٹریہ سمیتی نے صدر جمہوریہ کے انتخاب کے مسئلہ پر کانگریس پارٹی کے الزامات کو مسترد کردیا۔ ٹی آر ایس رکن پارلیمنٹ بی سمن اور رکن اسمبلی ویویکانند نے میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے سی بی آئی تحقیقات سے خوفزدہ ہوکر چیف منسٹر کی جانب سے این ڈی اے امیدوار کی تائید کے الزام کو مضحکہ خیز قرار دیا۔ ان قائدین نے کہا کہ سی بی آئی مقدمات کانگریس قائدین پر ہیں نہ کہ ٹی آر ایس قائدین پر۔ کانگریس دور حکومت میں مختلف بے قاعدگیوں کے سلسلہ میں سی بی آئی تحقیقات کررہی ہے اور کئی کانگریس قائدین جن میں سابق وزراء بھی شامل ہیں، آج بھی تحقیقات کا سامنا کررہے ہیں۔ ٹی آر ایس قائدین نے کہا کہ دلت طبقے سے تعلق رکھنے والے قائد کو ملک کے باوقار عہدے پر فائز کرنے کے لیے ٹی آر ایس نے رام ناتھ کووند کی تائید کی۔ کانگریس کے رکن اسمبلی سمپت کمار بے بنیاد الزامات عائد کرتے ہوئے عوام کو گمراہ کرنے کی کوشش کررہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ٹی آر ایس نے سب سے پہلے دلت قائد کے نام کی سفارش کی تھی اور چیف منسٹر کی سفارش کو قبول کرتے ہوئے وزیراعظم نریندر مودی نے رام ناتھ کووند کے نام کو قطعیت دی۔ وزیراعظم نے سب سے پہلے کے سی آر کو فون پر امیدوار کے نام سے واقف کرایا اور چیف منسٹر نے پارٹی قائدین سے صلاح و مشورے کے بعد رام ناتھ کووند کی تائید کا اعلان کیا۔ بی سمن نے کہا کہ کانگریس پارٹی نے اپنے سیاسی مفادات کے لیے سابق اسپیکر میرا کمار کو میدان میں اتارا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر کانگریس کو دلتوں سے اتنی ہی ہمدردی تھی تو اسے چاہئے تھا تو وہ این ڈی اے امیدوار کے اعلان سے قبل میرا کمار کے نام کا اعلان کرتی ۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس نے کبھی بھی ٹی آر ایس سے صدارتی امیدوار کے مسئلہ پر مشاورت نہیں کی۔ سمن نے کہا کہ میرا کمار کا ٹی آر ایس مکمل احترام کرتی ہے جبکہ کانگریس نے انہیں اپنے مفادات کے لیے استعمال کرنے کی کوشش کی ہے۔ انہوں نے سوال کیا کہ کانگریس پارٹی نے میرا کمار کے ملک گیر دورے کے لیے خصوصی طیارے کا انتظام کیوں نہیں کیا۔ حیدرآباد میں طیارے کی روانگی میں تاخیر کے سبب میرا کمار کو تین گھنٹے تک انتظار کی زحمت سے گزرنا پڑا۔ انہوں نے سوال کیا کہ اگر ان کی جگہ راہول گاندھی ہوتے تو کیا کانگریس اسی طرح کا سلوک کرتی؟ کیوں کہ میرا کمار دلت طبقے سے تعلق رکھتی ہیں۔ ان سے کانگریس کو کوئی ہمدردی نہیں۔ انہوں نے کہا کہ بی جے ڈی، جے ڈی یو اور انا ڈی ایم کے جیسی پارٹیاں بھی ٹی آر ایس کی طرز پر رام ناتھ کووند کی تائید کررہے ہیں۔ بہار میں کانگریس کے ساتھ اتحاد میں شامل ہونے کے باوجود نتیش کمار نے این ڈی اے امیدوار کی تائید کا اعلان کیا ہے۔ ٹی آر ایس قائدین نے حکومت کے خلاف جے اے سی کے صدرنشین کودنڈارام کی مہم پر شدید ردعمل کا اظہار کیا اور کہا کہ کودنڈارام کانگریس پارٹی کے اشارے پر کام کررہے ہیں۔ انہوں نے ریمارک کیا کہ کودنڈارام نہیں بلکہ وہ کودنڈارانگ ہیں کیوں کہ ہر معاملہ میں وہ غلطی پر ہیں۔

TOPPOPULARRECENT