Friday , July 28 2017
Home / شہر کی خبریں / عازمین حج کیلئے مختلف اداروں کے اشتراک سے ضروری اقدامات

عازمین حج کیلئے مختلف اداروں کے اشتراک سے ضروری اقدامات

عرفات کا دن انتہائی اہم: تربیتی اجتماع سے پروفیسر ایس اے شکور‘ مفتی ضیا الدین نقشبندی اور علمأ کرام کا خطاب
حیدرآباد 14مئی ( پریس نوٹ ) پروفیسر ایس اے شکور اسپیشل آفیسر تلنگانہ اسٹیٹ حج کمیٹی نے اپنے صدارتی خطاب میں کہا کہ ماہ رمضان سے قبل عازمین کے لئے ٹیکہ اندازی کروانے کی کوشش کی جارہی ہے ۔ شہر حیدرآباد کے علاوہ تلنگانہ کے سارے اضلاع میں مقامی طور پر عازمین کی ٹیکہ اندازی کی جائے گی‘ بہت جلد اس کا اعلان کیا جائے گا اور عازمین کو انفرادی طور پر بھی اطلاع دی جائے گی۔ تین قسم کے ویکسین ہوتے ہیں۔ یہ ویکسین آپ کے تحفظ کے لئے دیا جاتا ہے تاکہ آپ سعودی عرب جاکر کسی بیماری یا وبا کا شکار نہ ہوں۔وہ آج قدیم مسجد قطب شاہی درگاہ دو پہاڑ شاہ ولی مصری گنج میں تلنگانہ اسٹیٹ حج کمیٹی کے زیر اہتمام منعقدہ عازمین حج کے تیسرے تربیتی اجتماع سے خطاب کررہے تھے۔ انہوںنے کہا کہ رباط کے لئے قرعہ اندازی ہوچکی ہے اور جن عازمین کا انتخاب ہوا ہے ان کو مصارف حج کی دوسری قسط ادا کرنے کے موقعہ پرمکہ معظمہ کی رہائش کی رقم منہا کرکے کچھ رقم کم ادا کرنی ہوگی جس کا بہت جلد اعلان کیا جائے گا۔ رباط کا فاصلہ حرم شریف سے دیڑھ کلو میٹر ہے ‘ جبکہ گرین زمرہ کی رہائش ایک کلو میٹردور اور عزیزیہ سات تا آٹھ کلو میٹر دور ہے‘ جہاں سے بس کی سہولت ہے ۔قربانی کی رقم بھی دوسری قسط میں جمع کرنا ہوگا۔2018سے 2022تک حج کی پالسیی تیار کی جارہی ہے جس میںہماری تجاویز پر بھی غور کیا جائے گا۔ توقع ہے کہ آئندہ سال سے بحری جہاز سے حج کے سفر کا انتظام کیا جائے گا‘ جس سے کرایہ میں بچت ہوگی۔ انہوں نے وضاحت کی کہ جو سبسیڈی دی جاتی ہے وہ ایرٹکٹ پر ہے‘ حج کے لئے سبسیڈی نہیں دی جاتی ۔ بحری سفر کا اس لئے جائزہ لیا جارہا ہے تاکہ کم خرچ میںحج ہوسکے۔ انہوں نے کہا کہ اس مرتبہ گرمی بہت زیادہ ہے اور درجہ حرارت 51ڈگری تک رہے گا‘ اس لئے عرفات میں فائر پروف ٹینٹ لگائے جائیں گے۔ منیٰ میں تین وقت کے کھانے کا انتظام رہے گا‘ لیکن آپ اپنے ساتھ کھانے پینے کی چیزیں ‘ ڈرائی فروٹ وغیرہ ضرور رکھئے۔ ریاستی حج کمیٹی عازمین کی سہولت کے لئے مختلف اداروں کے تعاون سے تمام ضروری امور انجام دے گی‘ عازمین کوئی فکر نہ کریں اور صرف عبادات پر توجہ دیں۔مولانا مفتی حافظ سید ضیأ الدین نقشبندی شیخ الفقہ جامعہ نظامیہ نے حج کے پانچ ایام کے مناسک کی تفصیلات بیان کیں اور کہا کہ احرام باندھنے اور لبیک پڑھ لینے کے بعد احرام کی شرائط عائد ہوجاتی ہیں‘ پانچ چھہ دن انٹرنیٹ استعمال نہ کریں‘ کیونکہ اس پر نامناسب چیزیں بھی نمودار ہوجاتی ہیں جس سے حج برباد ہوجانے کا خدشہ رہتا ہے۔ مولانا سید عرفان اللہ شاہ نوری صدرمرکزی انجمن سیف الاسلام نے کہا کہ جب بیت اللہ شریف کا طواف کریں تو اللہ سبحانہُ و تعالیٰ کی صفات کا تصور کرتے رہیں۔ ہم کو رسول اکرم ﷺ کے شہر مقدس مدینہ منورہ کے ذرہ ذرہ کا احترام کرنا ہے ‘ وہاں کی کسی چیز کو برا اور غلط نہیں کہنا ہے۔ مولانا سید محمد علی قادری الہاشمی ممشاد پاشاہ نے کہا کہ دنیا میں جتنے سفر ہوتے ہیں وہ بندے کی مرضی ‘ اختیار اور خواہش کے مطابق ہوتے ہیں‘لیکن سفر حج وہ ہے کہ جس میں اللہ کی مرضی سے ہوتا ہے۔ مولانا مفتی سید سکندر علی چشتی نے بھی مخاطب کیا۔ اس اجتماع میں جناب عرفان شریف ‘ مولانا صوفی زبیر چشتی ابوالعلائی‘ مولانا سید احمد پاشاہ قادری الملتانی بھی شریک تھے۔ حافظ و قاری احمد محی الدین افتخاری کامل پاشاہ کی قرأت کلام پاک اور صوفی سلیم کے ہدیہ نعت سے کارروائی کا آغاز ہوا۔

TOPPOPULARRECENT