Wednesday , July 26 2017
Home / شہر کی خبریں / عازمین حج کی آئندہ سال سے بحری جہاز کے ذریعہ روانگی

عازمین حج کی آئندہ سال سے بحری جہاز کے ذریعہ روانگی

اخراجات کم ہوں گے ، حج پالیسی 2018 میں تیار کرلی جائے گی : مختار عباس نقوی
حیدرآباد۔/8 جولائی، ( سیاست نیوز) مرکزی وزیر اقلیتی اُمور مختار عباس نقوی نے کہا کہ آئندہ سال سے بحری جہاز سے عازمین حج کی روانگی کی تیاریاں کی جارہی ہیں اور ایک جہاز میں 5000 سے زائد عازمین سفر مقدس کیلئے روانہ ہوں گے۔ حج ہاوز نامپلی میں عازمین حج کے ٹیکہ اندازی کیمپ کا افتتاح کرتے ہوئے مختار عباس نقوی نے کہا کہ اس سلسلہ میں حج پالیسی 2018 کو قطعیت دی جارہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ بحری جہاز سے سفر حج کی صورت میں عازمین حج کے اخراجات نصف ہوجائیں گے اور ایسے افراد جو معاشی تنگی کے باعث حج کی ادائیگی سے محروم ہیں وہ بھی باآسانی فریضہ حج ادا کرسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بحری راستہ سے سفر کی صورت میں ہندوستان سے زیادہ سے زیادہ مسلمان اس فریضہ کی انجام دہی اور مقامات مقدسہ کی زیارت سے مستفید ہوپائیں گے۔ انہوں نے وضاحت کی کہ فضائی سفر کا سلسلہ ہنوز جاری رہے گا اور عازمین کو اختیار ہوگا کہ وہ جس سفر کو چاہیں اختیار کریں۔ انہوں نے کہا کہ آئندہ سال 2018 میں حج پالیسی تیار کرلی جائے گی جس میں ہندوستانی عازمین کیلئے کئی سہولتیں شامل رہیں گی۔ پالیسی کی تیاری پر کام چل رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بحری راستہ سے سفر حج کی صورت میں تلنگانہ کیلئے زائد کوٹہ الاٹ کرنے کا مسئلہ بھی از خود حل ہوجائے گا۔ 1994 سے قبل بحری جہاز سے سفر حج کیا جاتا تھا اور اس کی خوبی یہ تھی کہ راستے بھر میں عبادتوں کا موقع ملتا تھا۔ ایک جہاز میں 2000 افراد کے سفر کی گنجائش تھی۔ مرکزی حکومت شپنگ کارپوریشن آف انڈیا کے تعاون سے دوبارہ اس سفر کے آغاز پر غور کررہی ہے اور ایک جہاز میں تقریباً 5000 افراد کی گنجائش رہے گی۔ مرکزی حکومت کی کوشش ہے کہ حج کیلئے روانگی کو آسان اور کم خرچ بنایا جائے۔ انہوں نے کہا کہ چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ، مرکزی وزیر بنڈارودتاتریہ اور ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی نے بارہا ان سے حج کوٹہ میں اضافہ کیلئے نمائندگی کی ہے۔ حکومت سعودی عرب نے جاریہ سال 35000 عازمین کے کوٹہ میں اضافہ کیا ہے۔ انہوں نے عازمین حج کو سفر مقدس کیلئے مبارکباد پیش کی اور اپیل کی کہ وہ خصوصی دعاؤں میں ملک کی ترقی اور خوشحالی کو شامل رکھیں۔ انہوں نے تلنگانہ حج کمیٹی اور حکومت کی جانب سے عازمین کو سہولتوں کی فراہمی کی ستائش کی۔ ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی نے مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ تلنگانہ حکومت عازمین حج کی بہتر خدمت کو اولین ترجیح دیتی ہے یہی وجہ ہے کہ حکومت نے 3 کروڑ روپئے بجٹ مختص کیا ہے۔ چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ مانتے ہیں کہ عازمین حج کی خدمت پر حج کا ثواب ملتا ہے اور انہوں نے حج کمیٹی اور عہدیداروں کو بہتر انتظامات کی ہدایت دی۔ انہوں نے کہا کہ جاریہ سال تلنگانہ کیلئے حج کوٹہ میں 990 کا اضافہ ہوا ہے۔ انہوں نے مرکزی وزیر سے خواہش کی کہ جاریہ سال دیگر ریاستوں سے بچ جانے والا کوٹہ تلنگانہ کو الاٹ کیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ میں دیگر ریاستوں کے مقابلے درخواستوں کی تعداد زیادہ ہوتی ہے اور محفوظ زمروں کے عازمین کے انتخاب کے بعد بہت کم نشستیں ہی قرعہ اندازی کیلئے بچ گئیں۔ انہوں نے کہا کہ حیدرآبادی رباط میں 1270 عازمین حج کیلئے قیام کی گنجائش فراہم کی گئی ہے جنہیں دو وقت کا کھانا بھی سربراہ کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ چیف منسٹر کی جستجو کے نتیجہ میں رباط میں زائد عازمین کا قیام ممکن ہوسکا۔انہوں نے عازمین حج کی بہتر خدمت کے سلسلہ میں تلنگانہ حج کمیٹی کے اسپیشل آفیسر پروفیسر ایس اے شکور کو مبارکباد پیش کی۔ رکن اسمبلی نامپلی جعفر حسین معراج نے کہا کہ عازمین دراصل اللہ کے مہمان ہوتے ہیں اور اس مقدس فریضہ کیلئے اپنے محبوب بندوں کو اللہ تعالیٰ منتخب کرتے ہیں۔ پروفیسر ایس اے شکورنے بتایا کہ جاریہ سال جملہ 20601 درخواستیں موصول ہوئیں اور دونوں محفوظ زمرہ جات کے تحت 3037 درخواستیں داخل کی گئیں۔ تلنگانہ کیلئے جملہ کوٹہ 3367 الاٹ کیا گیا اور محفوظ زمروں کے انتخاب کے بعد 330 نشستوں کیلئے قرعہ اندازی عمل میں آئی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ 17 خادم الحجاج کا انتخاب عمل میں آیا ہے۔ عازمین حج کی روانگی کا 13 اگسٹ سے آغاز ہوگا اور 22 اگسٹ کو آخری قافلہ جدہ کیلئے روانہ ہوگا۔ تقریب میں مرکزی وزیر بنڈارودتاتریہ، ریاستی وزیر داخلہ این نرسمہا ریڈی، رکن اسمبلی خیریت آباد سی ایچ رامچندرا ریڈی، حکومت کے مشیر برائے اقلیتی اُمور اے کے خاں، صدر نشین وقف بورڈ محمد سلیم، صدرنشین اقلیتی فینانس کارپوریشن سید اکبر حسین، ڈپٹی میئر بابا فصیح الدین، رکن سنٹرل حج کمیٹی طیبہ آفندی، صدر اقلیتی سل ٹی آر ایس ایم کے مجیب الدین، سکریٹری اقلیتی بہبود سید عمر جلیل، چیف ایکزیکیٹو آفیسر وقف بورڈ ایم اے منان فاروقی، وقف سروے کمشنر محمد اسد اللہ، رکن تلنگانہ وقف بورڈ وحید احمد ایڈوکیٹ اور دوسروں نے شرکت کی۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT