Thursday , September 21 2017
Home / سیاسیات / عام آدمی پارٹی کو غیر مسلمہ قراردینے کا مطالبہ

عام آدمی پارٹی کو غیر مسلمہ قراردینے کا مطالبہ

لوک سبھا میں وقفہ صفر کے دوران کانگریس اور بی جے پی ارکان کا احتجاج
نئی دہلی۔21 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) بی جے پی اور کانگریس نے آج عام آدمی پارٹی کو غیر مسلم قراردینے کا مطالبہ کیا۔ الیکشن کمیشن کی جانب سے اس پارٹی کو اس لئے غیر مسلمہ قرار دیا جانا چاہئے کیوں کہ اس نے اپنے یوتھ منشور پر گولڈن ٹمپل کی تصویر استعمال کی ہے اور حال ہی میں جنسی ہراسانی کے مبینہ کیس میں عام آدمی پارٹی کی خاتون کارکن نے خودکشی کی تھی۔ لوک سبھا میں وقفہ صفر کے دوران مسئلہ کو اٹھاتے ہوئے بی جے پی رکن پارلیمنٹ میناکشی لیکھی نے دہلی میں خودکشی کے کیس کا حوالہ دیا اور کہا کہ عام آدمی پارٹی کارکن کی جانب سے جنسی ہراسانی سے متعلق ایک متاثرہ کی جانب سے کیس درج کیا گیا تھا۔ اب اس متاثرہ خاتون نے خودکشی کرلی ہے لہٰذا چیف منسٹر دہلی اروند کیجروال کے بشمول عام آدمی پارٹی کے اعلی قائدین کے خلاف کارروائی کی جانی چاہئے۔ انہوں نے الیکشن کمیشن کی جانب سے عام آدمی پارٹی کو غیر مسلمہ قرار دینے کا بھی مطالبہ کیا۔ اس طرح کا مطالبہ کانگریس کے ارکان پارلیمنٹ ریونت سنگھ بٹو اور سنٹوک سنگھ چودھری نے بھی کیا۔ چودھری نے الزام عائد کیا کہ عام آدمی پارٹی رکن کا نام بھی قرآن مجید کی مبینہ بے حرمتی کے کیس میں شامل ہے جبکہ بٹو نے دعوی کیا کہ عام آدمی پارٹی نے اپنے یوتھ منشور کے صفحہ پر گولڈن ٹمپل کی تصویر شائع کی ہے۔ اس سے پنجاب میں سکھوں کے مذہبی جذبات کو ٹھیس پہونچی ہے۔ ان دونوں نے عام آدمی پارٹی کو غیر مسلمہ قرار دینے کا مطالبہ کیا۔

TOPPOPULARRECENT