Tuesday , September 26 2017
Home / Top Stories / عشرت جہاں لشکر طیبہ کی خودکش بم بردار تھی : ہیڈلی کا دعویٰ

عشرت جہاں لشکر طیبہ کی خودکش بم بردار تھی : ہیڈلی کا دعویٰ

ممبئی ۔ /11 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) پاکستانی امریکی دہشت گرد ڈیوڈ کولمن ہیڈلی نے آج اپنے ایک غیرمعمولی دعویٰ میں کہا کہ عشرت جہاں لشکر طیبہ دہشت گرد تنظیم کی خودکش بم بردار تھی جس کا 2004 ء میں گجرات میں مبینہ طور پر فرضی انکاؤنٹر ہوا تھا ، اس انکشاف سے متنازعہ انکاؤنٹر کو نیا موڑ ملے گا ۔ امریکہ سے ویڈیو رابطہ کے ذریعہ بیان دیتے ہوئے ہیڈلی نے ممبئی کی 19 سالہ عشرت جہاں کا نام اس وقت زبان پر لایا جب خصوصی وکیل سرکار اجل نکم نے ہیڈلی کے بتائے گئے لشکر طیبہ کے کمانڈر ذکی الرحمن  لکھوی کی جانب سے کروائے گئے آپریشن کے تعلق سے سوال کیا تھا ۔ ہیڈلی نے عدالت کو بتایا کہ لکھوی نے ہندوستان میں اس دہشت گرد حملوں کے لئے تیار کردہ منصوبوں کے بارے میں بتایا تھا ۔ یہ آپریشن لشکر طیبہ کے ایک اور رکن مزمل بھٹ کی جانب سے کیا جانے والا تھا جہاں دہشت گرد تنظیم کی ایک خاتون رکن ہلاک ہوگئی تھی ۔اس تعلق سے مزید تفصیلی وضاحت کرنے کے لئے اجل نکم نے زور دیا  اور اس آپریشن میں شامل ارکان کے بارے میں دریافت کیا تو ہیڈلی نے کہا کہ مجھے بتایا گیا تھا کہ پولیس کے ساتھ فائرنگ جھڑپ میں ایک خاتون خودکش بم بردار بھی ہلاک ہوئی ہے ۔ جس کے فوری بعد استغاثہ نے ہیڈلی کے سامنے 3 نام پیش کئے ۔ جن میں سے ہیڈلی نے عشرت جہاں کے نام کی نشاندہی کی اور عدالت سے کہا کہ لشکر طیبہ میں خواتین کا بھی ایک گروپ پایا جاتا ہے جس کی قیادت ابو ایمن کی والدہ کرتی تھیں ۔

TOPPOPULARRECENT