Thursday , October 19 2017
Home / Top Stories / علیگڑھ مسلم یونیورسٹی کیمپس میں تشدد ، دو ہلاک

علیگڑھ مسلم یونیورسٹی کیمپس میں تشدد ، دو ہلاک

فائرنگ کا تبادلہ ، پروکٹر آفس اور کئی گاڑیاں نذرآتش ، ریاپڈ ایکشن فورس تعینات
علیگڑھ ۔ /24 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) علیگڑھ مسلم یونیورسٹی میں ہفتہ اور اتوار کی درمیانی شب اچانک تشدد پھوٹ پڑا جس میں دو افراد ہلاک اور کئی زخمی ہوگئے ۔ طلباء نے مبینہ طور پر ایک دوسرے پر گولیاں چلائی اور یونیورسٹی کی املاک بشمول پروکٹر کے دفتر اور کئی گاڑیوں کو نذر آتش کردیا ۔ پولیس نے فوری صورتحال پر قابو پالیا اور تشدد میں ملوث چند طلباء کی گرفتاری عمل میں آئی ۔ یونیورسٹی سے برطرف کیا گیا ایک طالبعلم ہفتہ کے شب ہی ہلاک ہوگیا جبکہ جھڑپ میں زخمی ایک اور نوجوان آج جانبر نہ ہوسکا ۔ یونیورسٹی کے ترجمان راحت ابرار نے یہ بات بتائی ۔ تمام حساس مقامات پر بالخصوص انجنیئرنگ کالجس کیلئے انٹرنس ٹسٹ کے پیش نظر ریاپڈ ایکشن فورس (آر اے ایف) تعینات کی گئی ۔ پولیس ذرائع نے بتایا کہ طلباء کے دو گروپس میں اختلافات کے باعث تشدد پھوٹ پڑا  جہاں ایک طالبعلم محسن کے ہاسٹل کمرہ کو آگ لگادی گئی ۔ اس کے فوری بعد محسن شکایت درج کرانے کیلئے پراکٹر کے دفتر پہونچا ۔ مخالف گروپ کے طلباء بھی فوری پراکٹر کے آفس پہونچ گئے اور محسن اور اس کے دوستوں پر فائرنگ شروع کردی ۔ لڑائی کے تبادلے میں دو افراد بری طرح زخمی ہوگئے

جنہیں علاج کیلئے میڈیکل کالج منتقل کیا گیا ۔ غازی پور سے تعلق رکھنے والا طالبعلم مہتاب زخموں سے جانبر نہ ہوسکا جبکہ واقف کو دہلی ہاسپٹل منتقل کیا گیا تھا جہاں آج اس کی موت واقع ہوگئی ۔ پولیس نے بتایا کہ میڈیکل کالج کیمپس میں طلباء کے دو گروپس کے مابین جھڑپ ہوگئی جس کے بعد پولیس نے یہاں فوری پہونچ کر صورتحال پر قابو پالیا لیکن دیڑھ بجے شب طلباء کے گروپ نے پراکٹر کے آفس کو آگ لگادی اور یہاں کا ریکارڈس و فرنیچر تباہ ہوگیا ۔ انہوں نے کیمپس میں کئی گاڑیوں کو بھی آگ لگادی اور وائس چانسلر کے لاج و گیسٹ ہاؤز کو بھی آگ لگانے کی کوشش کی ۔ علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے پبلک ریلیشن آفیسر راحت ابرار نے کہا کہ مہتاب ایم پی ایڈ کا طالبعلم تھا جسے کیمپس سے خارج کردیا گیا تھا ۔ دوسری طرف واقف بیرونی شخص بتایا گیا ہے ۔ ڈپٹی انسپکٹر جنرل (علی گڑھ رینج) گویند اگروال نے بتایا کہ تشدد پھیل جانے کی بنا ریاپڈ ایکشن فورس طلب کرلی گئی ۔ انہوں نے کہا کہ کیمپس میں پولیس عہدیداروں کو متعین کیا گیا ہے اورصورتحال اس وقت قابو میں ہے ۔

TOPPOPULARRECENT