Friday , October 20 2017
Home / شہر کی خبریں / عمارات حج ہاوز سے متصل اراضی اور زیر تعمیر کامپلکس کو لیز پر دینے کا فیصلہ

عمارات حج ہاوز سے متصل اراضی اور زیر تعمیر کامپلکس کو لیز پر دینے کا فیصلہ

وقف بورڈ کی آمدنی میں اضافہ کی کوشش ، انٹرنیشنل ٹنڈرس طلب کرنے کی تجویز
حیدرآباد۔ 4 ۔ اپریل ( سیاست نیوز) محکمہ اقلیتی بہبود نے حج ہاؤز سے متصل زیر تعمیر کامپلکس اور کھلی اراضی کو لیز پر دینے کا فیصلہ کیا ہے ، تاکہ وقف بورڈ کی آمدنی میں اضافہ ہوسکے۔ حج ہاؤز سے متصل زیر تعمیر کامپلکس طویل عرصہ سے گریٹر حیدرآباد میونسپل کارپوریشن کی منظوری کا منتظر تھا۔ کارپوریشن نے 4 کروڑ 60 لاکھ روپئے بطور بلدی فیس ادا کرنے کی مانگ کی تھی تاکہ پلان کو منظوری دی جائے۔ اس وقت کے اسپیشل آفیسر وقف بورڈ جلال الدین اکبر نے بلدی فیس کی معافی کے سلسلہ میں حکومت سے نمائندگی کی ۔ مسلسل مساعی کے بعد حکومت نے 4 کروڑ 60 لاکھ روپئے کی معافی کے احکامات جاری کئے۔ بعد میں گریٹر حیدرآباد مجلس بلدیہ نے زیر تعمیر کمرشیل کامپلکس کے پلان کو منظوری دیدی ہے۔ چیف اگزیکیٹیو آفیسر وقف بورڈ محمد اسد اللہ نے زیر تعمیر کامپلکس کو لیز پر دینے کی تجویز سکریٹری اقلیتی بہبود کو روانہ کی ہے۔ سید عمر جلیل نے اس کامپلکس کی تکمیل کا کام بذریعہ ٹنڈر منظور کرنے کا فیصلہ کیا ہے اور انٹرنیشنل ٹنڈرس طلب کرنے کی تجویز حکومت کو پیش کی گئی۔ حکومت کی منظوری کے بعد زیر تعمیر کامپلکس کی تکمیل کیلئے انٹرنیشنل ٹنڈرس جاری کئے جائیں گے۔ اسی دوران حج ہاؤز سے متصل 2600 مربع گز کھلی اراضی پر کامپلکس کی تعمیر کیلئے ٹنڈرس طلب کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ دونوں فائلیں ریاستی حکومت کی منظوری کی منتظر ہیں ۔ زیر تعمیر کامپلکس کی تکمیل اور کھلی اراضی پر نئے کامپلکس کی تعمیر سے وقف بورڈ کی آمدنی میں زبردست اضافہ ہوسکتا ہے۔ اسی دوران آندھراپردیش وقف بورڈ نے دونوں طرف 23 کروڑ روپئے کی ادائیگی کا مطالبہ کیا ہے۔ زیر تعمیر کامپلکس اور کھلی اراضی کی خریدی میں آندھراپردیش کی درگاہوں کے 23 کروڑ روپئے خرچ کئے گئے تھے۔ آندھراپردیش وقف بورڈ کا ماننا ہے کہ اس رقم کی واپسی کے بعد ٹنڈرس کو منظوری دی جائے۔

TOPPOPULARRECENT