Friday , May 26 2017
Home / شہر کی خبریں / عوامی مراکز صحت کو ممنوعہ ادویات فراہمی کی تردید

عوامی مراکز صحت کو ممنوعہ ادویات فراہمی کی تردید

خلاف ورزی پر سخت کارروائی جاری، کونسل میں وزیرصحت کے لکشماریڈی کا بیان
حیدرآباد۔26ڈسمبر (سیاست نیوز) حکومت کی جانب سے عوامی مراکز صحت کو ممنوعہ ادویات کی فراہمی نہیں کی جا رہی ہے بلکہ ممنوعہ ادویات کی فروخت و استعمال کرنے والوں کے خلاف کاروائی کی جا رہی ہے۔ ریاستی وزیر صحت مسٹر کے لکشما ریڈی نے قانون ساز کونسل میں بتایا کہ حیدرآباد و رنگاریڈی میں 9خانگی نرسنگ ہوم کو مہر بند کیا گیا ہے جو پولیو کی ممنوعہ ادویات استعمال کرنے کے مرتکب قرار پائے ہیں۔ مسٹر کے لکشما ریڈی رکن قانون ساز کونسل مسٹر ایم ایس پربھاکر کی جانب سے اٹھائے گئے سوال کا جواب دے رہے تھے۔ مسٹر ایم ایس پربھاکر نے استفسار کیا تھا کہ آیا حکومت کی جانب سے عوامی مراکز صحت میں پولیو کی ممنوعہ ادویات ٹرائیویلنٹ کا استعمال کیا جا رہا ہے؟ جس پر ریاستی وزیر صحت نے جواب دیا کہ ایسا نہیں ہے بلکہ جو لوگ حیدرآبادو رنگاریڈی میں ان ادویات کے استعمال کے مرتکب قرار پائے ہیں ان کے خلاف ڈی ایم او ایچ حیدرآباد و رنگاریڈی کے ذریعہ مقدمات درج کروائے گئے ہیں۔انہوں نے بتایا کہ حیدرآباد میں 7خانگی نرسنگ ہوم پشپا میٹرنٹی اینڈ نرسنگ ہوم‘ ڈاکٹر سیتا رام پودار کلینک‘ کاڑا ہاسپٹل‘ خدیجہ میٹرنٹی ہوم‘ ڈاکٹر ایم راگھو چاری چلڈرنس کلینک‘ لیوسڈ ڈایئگناسٹک سولیوشن پرائیویٹ لمیٹیڈ اور سری کرتھانا کلینک کے خلاف کاورائی کی گئی ہے۔ اسی طرح رنگاریڈی میں راگھوا پالی کلینک بالاپور اور سری کرشنا ملٹی اسپشالیٹی ہاسپٹل اپل کے خلاف کاروائی کی گئی ہے۔ مسٹر لکشما ریڈی نے بتایا کہ ریاستی حکومت حفظان صحت کے معاملہ میں متعدد اقدامات کررہی ہے اور ممنوعہ ادویات کی فروخت میں ملوث پائے جانے والوں کے خلاف بڑے پیمانے پر کاروائی کیلئے تیار ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ جن لوگوں کو ان ادویات کی فروخت کا مرتکب قرار دیا گیا ہے ان کے خلاف کاروائی کرتے ہوئے میمو بھی جاری کیا جا چکا ہے۔مسٹر ایم ایس پربھاکر نے خانگی دواخانوں اور حکومت کی جانب سے چلائے جانے والے عوامی مراکز صحت میں ممنوعہ ادویات کے استعمال کی اطلاع دیتے ہوئے کہا کہ عوام کی صحت سے تغافل کے سنگین نتائج برآمد ہونے کا خدشہ ہے اسی لئے حکومت کو اس مسئلہ پر سنجیدہ اقدامات کرتے ہوئے ان کے خلاف کاروائی کرنی چاہئے جو لوگ اس طرح کی کاروائیوں میں ملوث ہیں۔انہوں نے خانگی دواخانوں میں بھی ان ادویات کے استعمال کی شکایت کی جس پر ریاستی وزیر نے تفصیلی جواب دیا۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT