Wednesday , July 26 2017
Home / Top Stories / عوام کو مشتعل کرنے گجرات فسادات کی تصاویر کا استعمال

عوام کو مشتعل کرنے گجرات فسادات کی تصاویر کا استعمال

مغربی بنگال تشدد کو سیاسی فائدہ کیلئے استعمال کرنے بی جے پی کی کوشش ، جنتر منتر پر جمع ہونے کی اپیل
نئی دہلی ۔ /9 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) بی جے پی مغربی بنگال تشدد کے خلاف احتجاج کرنے کی اپیل کرتے ہوئے 2002 ء کے فرقہ وارانہ فسادات کی تصاویر کو استعمال کررہی ہے ۔ عوام کو مشتعل کرنے کیلئے گجرات فسادات کی تصاویر کا استعمال کرتے ہوئے بچاؤ بنگال کی اپیل کی گئی ہے ۔ مغربی بنگال میں اس وقت تشدد جاری ہے ۔ اس کا سیاسی فائدہ اٹھانے کی بھرپور کوشش کی جارہی ہے ۔ بی جے پی کی ترجمان نوپور شرما نے ٹوئٹر پر 2002 ء گجرات فسادات لی گئی تصویر کو پوسٹ کرتے ہوئے لکھا ہے کہ امن کی سرزمین آج تمام محاذوں پر فساد زدہ بن گئی ہے ۔ انہوں نے یہ بھی لکھا کہ اب بہت دیر ہوچکی ہے ۔ آج 5 بجے شام جنتر منتر پر جمع ہوجائیں اور بنگال کو بچائیں اور ہندوؤں کو بچائیں ۔ یہ بات قابل نوٹ ہے کہ قبل ازیں ہریانہ سے تعلق رکھنے والی بی جے پی لیڈر وجیتا ملک نے بھی مغربی بنگال میں ہندوؤں کی پریشانیوں کو بتاتے ہوئے تصویر جاری کی تھی ۔ عوام میں اشتعال پیدا کرنے کیلئے یہ تصویر جاری کی گئی جو منوج تیواری کی مشہور بھوجپوری فلم عورت کھلونا نہیں کہ ایک منظر سے تعلق رکھتی ہے ۔ مغربی بنگال میں دن بہ دن تشدد بھڑکنے کے فرضی تصاویر کو سوشیل میڈیا کے ذریعہ پھیلایا جارہا ہے ۔ بی جے پی قائدین مغربی بنگال تشدد پر اپنی سیاسی دوکان چمکانے کی کوشش کررہے ہیں ۔ ملک بھر میں فرقہ وارانہ فسادات کو بھڑکانے کی کوشش کرتے ہوئے مغربی بنگال کے ہندوؤں پر ظلم و زیادتی ہونے کا جھوٹا پروپگنڈہ کیا جارہا ہے ۔ اس کیلئے گجرات فسادات کے تباہ شدہ مکانات ، جلتی ہوئی گاڑیوں کی تصاویر کو مغربی بنگال کی تصاویر کے طور پر پیش کیا جارہا ہے ۔یہ تصویر ماضی میں بھی کئی اخبارات اور ویب سائیٹس پر گجرات کے مسلم کش فسادات سے متعلق لکھی گئی تصاویر میں ایک سے زائد مرتبہ شائع ہوچکی ہے ۔ نیویارک ٹائمس نے /2 جون 2016 ء کو بھی اسی تصویر کو استعمال کرتے ہوئے تصویر شائع کی تھی ۔ اس تصویر کو اپریل 2014 ء میں حکومت حامی ہندی اخبار جاگرن نے بھی استعمال کیا تھا ۔مغربی بنگال بچاؤ احتجاجی ریالی میں بھی گجرات فسادات کی تصاویر کا استعمال کیا گیا تھا ۔ اس جلسہ سے بی جے پی کے راجیہ سبھا رکن سواپن داس گپتا نے خطاب کیا تھا ۔ عوام الناس کو خاص کر فرقہ پرست ذہنیت کے حامل ہندوؤں کو مشتعل کرنے کیلئے بی جے پی کے قائدین گجرات فسادات کے تصاویر کو استعمال کرتے ہوئے یہ تصاویر مغربی بنگال کی ظاہر کی جارہی ہیں اور کہا جارہا ہے کہ مغربی بنگال کے ہندوؤں پر ظلم اور ستم ہورہا ہے ۔ جنتر منتر پر مجمع کو اکٹھا کرنے کیلئے بی جے پی ترجمان نوپور شرما نے بھی اسی تصویر کا استعمال کیا گیا ہے ۔ نامور موسیقی ڈائرکٹر وشال ددلانی نے بھی ٹوئٹر پر لکھا کہ گجرات کے فسادات کی تصاویر کا استعمال مغربی بنگال میں فرقہ وارانہ نفرت کو بھڑکانے کی کوشش ہے ۔ انہوں نے ان ٹوئٹر اکاؤنٹس کو فوری بند کرنے مطالبہ کیا ۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT