Monday , August 21 2017
Home / شہر کی خبریں / عید کی خوشیوں میں دیگر مذاہب کو شامل کرنا قومی یکجہتی کی علامت

عید کی خوشیوں میں دیگر مذاہب کو شامل کرنا قومی یکجہتی کی علامت

آل انڈیا مائنارٹیز فورم و انڈیا عرب فرینڈ شپ فاونڈیشن کی عید ملن تقریب ‘ حامد انصاری کا خطاب

محمد نعیم وجاہت
ایک ایسے وقت جب کہ ملک بھر میں فرقہ وارانہ ہم آہنگی اور گنگا جمنی تہذیب کو نقصان پہونچانے کی کوشش کی جارہی ہے ۔ دہلی میں ایک ایسی تقریب منعقد ہوئی جو فرقہ پرستوں کے منہ پر طمانچہ ثابت ہوئی ۔ صدر آل انڈیا مینارٹیز فورم و انڈیا عرب فرینڈ شپ فاونڈیشن جابر پٹیل نے دہلی میں عالیشان ’عید ملن ‘ تقریب کا اہتمام کیا ۔ تقریب میں نائب صدر جمہوریہ محمد حامد انصاری ، سابق وزیر اعظم ڈاکٹر منموہن سنگھ ، پاکستانی ہائی کمشنر عبدالباسط کے علاوہ مسلم و غیر مسلم ارکان پارلیمنٹ ، سیاستدانوں ، سفارتکاروں کے علاوہ مختلف شعبہ حیات کی اہم شخصیتوں نے ایک دوسرے کے ساتھ خوشگوار پل گذارتے ہوئے قومی یکجہتی کی زندہ مثال پیش کی ۔ صدر مینگو گروور اسوسی ایشن صابر پٹیل نے صدارت کی ۔ نائب صدر جمہوریہ جناب محمد حامد انصاری نے کہا کہ عید کی خوشیوں میں سماج کے تمام مذاہب اور طبقات کو شامل کرنا قومی یکجہتی کی علامت ہے ۔ اس طرح کی تقاریب آپسی بھائی چارگی کو فروغ دینے میں معاون و مددگار ثابت ہوتی ہیں ۔ جابر پٹیل نے افتتاحی خطاب میں آل انڈیا مینارٹیز فورم و انڈیا عرب فرینڈ شپ فاونڈیشن کے اغراض و مقاصد پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ ہر سال حیدرآباد میں افطار پارٹی اور دہلی میں عید ملن تقاریب کا انعقاد کرکے سماج کے تمام مذاہب اور طبقات کو ایک پلیٹ فارم پر جمع کیا جاتا ہے تاکہ ملک میں قومی یکجہتی ، اخوت بھائی چارگی کو فروغ دیا جاسکے کیوں کہ اتحاد ہی ہماری طاقت ہے اور اتحاد میں ہی ملک کی ترقی ہے ۔ ان تقاریب کے ذریعہ جہاں اتحاد کا پیغام پہونچایا جارہا ہے وہی عالمی سطح پر ہونے والی دہشت گردی کی مخالفت کی جارہی ہے ۔ مرکزی وزیر فوڈ پروسیسنگ رام ولاس پاسوان نے کہا کہ ہندوستان ایک باغ ہے اور تمام مذاہب کے عوام اس باغ کے ہمہ اقسام کے پھول ہیں ۔ مرکزی وزیر سماجی انصاف رام داس اٹھاولے نے کہا کہ دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت ہندوستان میں جو آبادی کے تناسب سے سارے عالم میں دوسرا مقام رکھتی ہے یہاں کی عیدیں اور تہواریں ہندوستانی عوامی اتحاد کا مثالی نمونہ ہے ۔ دستور نے تمام مذاہب کے ماننے والوں کو اس پر قائم رہنے اور عمل کرنے کی مکمل آزادی دی ہے ۔ جب بھی قوم پرستی کا معاملہ آتا ہے سب متحد ہوجاتے ہیں ۔ وزیر فروغ انسانی وسائل پرکاش جاوڈیکر نے ہندوستان کو مختلف مذاہب کا گلدستہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ ہندوستان دنیا کا واحد ملک ہے جہاں کے عوام نا صرف مل جلکر رہتے ہیں بلکہ ایک دوسرے کی خوشیوں اور غم میں برابر کے شریک ہوتے ہیں ۔ وزیر سائنس و ٹکنالوجی ڈاکٹر ہرش وردھن نے ہندوستان کو ہندو مسلم اتحاد کا گہوارہ قرار دیا اور مسلمانوں کو عید کی مبارکباد دی ۔ وزیر ریلوے سریش پربھو ‘وزیر پارلیمانی امور آنند کمار ‘وزیر مواصلات منوج سنہا ‘ مملکتی وزیر داخلہ ہنس راج گنگا رام ، وزیر داخلہ تلنگانہ این نرسمہا ریڈی نے بھی خطاب کیا ۔ تقریب میں مختلف سیاسی جماعتوں کے ارکان پارلیمنٹ جئے دیوگلا ، بی رینوکا ، ایم مرلی موہن ، جے گوگوی ، مولانا بدرالدین اجمل ، سراج الدین اجمل ، چراغ پاسوان ، شمیتا دیو ، محبوب علی قیصر ، راجیش رنجن (پپویادو ) ، رنجیتا رنجن ، طارق انور ، علی انور ، راجیو گوڑا ، راگھون ، پروفل پٹیل ، محسنہ قدوائی ، بی آر شیٹی ، ای ٹی بشیر ، شنکر راؤ ایم پٹیل ، ماجد میمن ، بی بی پاٹل ، نرسیا گوڑ ، جتندر چودھری ، شنکر پرساد داتا ، جھرنا داس بڈیا ، کے ہری وردھن سنگھ ، چودھری منور سلیم ، بدردوزا خان ، ایس مشیرا ، ممتا سنگیتما ، کے سی تیاگی ، انو آغا ، ماریہ کوم سابق ارکان پارلیمنٹ ڈاکٹر شفیق الرحمن برق ، بیگم نور بانو ، ایل راجگوپال ، سابق صدر نشین قومی بی سی کمیشن جسٹس ایشوریا صدر نشین قومی انسانی حقوق کمیشن جسٹس بی ایل دنتو صدر نشین انسانی حقوق کمیشن یو پی جسٹس رفعت عالم ، سابق چیف جسٹس مغربی بنگال جسٹس نور عالم چودھری ، صدر انڈیا اسلامک سنٹر سراج قریشی ، صدر آل انڈیا امام آرگنائزیشن مولانا عمیر الیاسی ، سابق ترجمان سی پی آئی ایس ایم خان ، رکن قومی بی سی کمیشن شکیل الزماں انصاری ، سابق چیف الیکشن کمشنر ایس وائی قریشی ، پدماشری ڈاکٹر محسن ولی ، وائس چانسلر جامعہ ملیہ پروفیسر طلعت ، وائس چانسلر دہلی یونیورسٹی پروفیسر تیاگی ، وائس چانسلر ہمدرد یونیورسٹی پروفیسر حسنین ، رکن نیتی آیوگ وی کے سرسوت ، پاکستانی ہائی کمشنر عبدالباسط ، سیکنڈ سکریٹری سفارت سعودی عرب خالد المکی کے علاوہ مختلف ممالک الجریا ، بحرین ، عرب لیگ ، بوسنیا ، لیبیا ، فلسطین ، یمن ، امریکہ ، سوڈان ، کناڈا ، مصر ، اردن ، سومالیہ ، افغانستان ، ترکی ، کیوبا ، جرمنی بنگلہ دیش کے سفرا و سفارتی عہدیداروں نے شرکت کی ۔ تقریب سابق مرکزی وزیر کے رحمن خاں ، ارکان پارلیمنٹ محمد سلیم ، مولانا اسرار الحق قاسمی اور محمد فیصل کی سرپرستی میں منعقد ہوئی ۔ حیدرآباد سے کانگریس کے قائد خلیق الرحمن کے علاوہ جانکی راجگوپال ، انس وغیرہ نے شرکت کی ۔ قومی ترانے سے تقریب کا آغاز ہوا ۔ جنرل سکریٹری انڈیا عرب فرینڈ شپ فاونڈیشن دلاور پٹیل نے مہمانوں کا استقبال کیا ۔ سکریٹری انڈیا عرب فرینڈ شپ فاونڈیشن عتیق صدیقی نے اظہار تشکر کیا ۔ میر نظام علی خاں ( سعودی عرب ) عدنان سلیم نے غزل پیش کرکے محفل کو لوٹ لیا۔

TOPPOPULARRECENT