Tuesday , March 28 2017
Home / شہر کی خبریں / غریب افراد کو قرض اور ضامن روزگار کورسیس کی تربیت اولین ترجیح

غریب افراد کو قرض اور ضامن روزگار کورسیس کی تربیت اولین ترجیح

نونامزد صدر نشین ریاستی اقلیتی مالیاتی کارپوریشن سید اکبر حسین کا عزم
حیدرآباد۔/2مارچ، ( سیاست نیوز) ریاستی اقلیتی مالیاتی کارپوریشن کے نو نامزد صدرنشین سید اکبر حسین نے کہا کہ اقلیتی طبقہ سے تعلق رکھنے والے غریب افراد کو قرض کی اجرائی اور نوجوانوں کیلئے روزگار پر مبنی کورسیس کی ٹریننگ کا اہتمام ان کی اولین ترجیح رہے گی۔ صدرنشین کی حیثیت سے نامزد کرنے پر چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ سے اظہار تشکر کرتے ہوئے سید اکبر حسین جو 2001 میں ٹی آر ایس کے قیام سے پارٹی سے وابستہ ہیں، کہا کہ چیف منسٹر نے ان کی خدمات کے اعتراف میں یہ ذمہ داری دی ہے۔ اقلیتوں کی فلاح و بہبود سے متعلق چیف منسٹر کے مقصد کی تکمیل کیلئے وہ مالیاتی کارپوریشن کے صدرنشین کی حیثیت سے ہر ممکن مساعی کریں گے۔ کارپوریشن کو غریبوں کی معاشی ترقی کے مرکز میں تبدیل کیا جائے گا۔ اقلیتی مالیاتی کارپوریشن کی موجودہ اسکیمات پر موثر عمل آوری کے ذریعہ حکومت کی جانب سے فراہم کردہ بجٹ کا مکمل استعمال کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ کارپوریشن کی کارکردگی میں شفافیت اور اسکیمات پر عمل آوری میں بے قاعدگیوں کو دور کرتے ہوئے وہ ادارہ کو ملک کے ایک مثالی ادارہ میں تبدیل کردیں گے۔ انہوں نے کہا کہ صدرنشین کی حیثیت سے ذمہ داری سنبھالنے کے بعد وہ موجودہ اسکیمات اور گزشتہ دو سال کی کارکردگی کا جائزہ لیں گے اور مشیر اقلیتی اُمور اے کے خاں و سکریٹری اقلیتی بہبود سید عمر جلیل سے مشاورت کے ذریعہ اقلیتوں کی بھلائی سے متعلق نئی اسکیمات تیار کریں گے۔ سید اکبر حسین کریم نگر سے تعلق رکھتے ہیں اور وہاں مختلف دینی اور فلاحی اداروں سے وابستہ ہیں۔ وہ ضلع میں پارٹی کے مختلف عہدوں پر فائز رہ چکے ہیں اور چیف منسٹر نے انہیں ریاستی سطح کی اسٹیرنگ کمیٹی کا رکن مقرر کیا تھا۔ وزیر انفارمیشن ٹکنالوجی کے ٹی راما راؤ اور رکن پارلیمنٹ کریم نگر ونود کمار سے قربت کے باعث وہ صدرنشین نامزد کئے گئے۔ انہوں نے کہا کہ کریم نگر کی تاریخ میں یہ پہلا موقع ہے جب کسی اقلیتی قائد کو سرکاری ادارہ کا صدرنشین مقرر کیا گیا۔ متحدہ آندھرا پردیش میں کانگریس اور تلگودیشم حکومتوں نے ضلع کے اقلیتی قائدین کو صرف سرکاری اداروں میں ڈائرکٹر مقرر کیا تھا۔ چیف منسٹر نے صدرنشین کے عہدہ پر فائز کرتے ہوئے اقلیتوں کے تعلق سے ان کی ذمہ داری میں اضافہ کردیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ 10 اداروں پر تقررات میں 5 کا تعلق مسلم اقلیت سے ہے اور پہلی مرتبہ عام زمرہ کے اداروں میں بھی مسلم قائدین کو نمائندگی دی گئی جو چیف منسٹر کی اقلیت دوستی کا ثبوت اور مسلمانوں سے کئے گئے وعدے کی تکمیل ہے۔ انہوں نے کہا کہ اقلیتی فینانس کارپوریشن سے چھوٹے کاروبار کیلئے مسلمانوں کو قرض کی فراہمی سے متعلق موجودہ اسکیم میں مزید رعایتیں فراہم کی جائیں گی۔ انہوں نے کہا کہ وہ غریب مسلمانوں کو چھوٹے کاروبار کے آغاز کیلئے بینک کی مداخلت کے بغیر راست طور پر کارپوریشن سے امداد فراہم کرنے کا منصوبہ رکھتے ہیں۔ سید اکبر حسین نے کہا کہ کارپوریشن کے ذریعہ بیروزگار اقلیتی نوجوانوں کو مختلف کورسیس کی ٹریننگ کا اہتمام کیا جائے گا۔ غریبوں تک اقلیتوں کی اسکیمات کے فوائد کو پہنچانا ان کی اہم ذمہ داری ہوگی۔ وہ اس بات کی کوشش کریں گے کہ کارپوریشن کے بجٹ میں مزید اضافہ کیا جائے۔ سید اکبر حسین نے تقرر پر چیف منسٹر کے علاوہ ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی، ریاستی وزراء کے ٹی آر، ای راجندر، ارکان پارلیمنٹ کویتا اور ونودکمار سے اظہار تشکر کیا۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT