Tuesday , October 17 2017
Home / ہندوستان / غیرقانونی تارکین وطن صیانت کیلئے خطرہ

غیرقانونی تارکین وطن صیانت کیلئے خطرہ

ملک سے اخراج کا مطالبہ ‘ لوک سبھا میں وزیر داخلہ برائے مملکت کرن رجیجو کا بیان
نئی دہلی ۔ 13اگست ( سیاست ڈاٹ کام ) مرکز نے کہا کہ غیرقانونی تارکین وطن جیسے روہنگیا ملک کی صیانت کیلئے ایک سنگین خطرہ ہے کیونکہ انہیں دہشت گرد گروپس نے بھرتی کیا ہے ۔ مطالبہ کیا گیا کہ ریاستی حکومت ان کی شناخت کریں اور انہیں خارج کردیں ۔ تمام ریاستوں کو وہ ایک مراسلہ روانہ کرتے ہوئے مرکزی وزارت داخلہ نے کہا کہ گذشتہ چند دہائیوں سے دہشت گردی میں اضافہ سنگین تشویش کا معاملہ بن گیا ہے ۔ بیشتر ممالک اس سے پریشان ہیں ۔ کیونکہ غیرقانونی تارکین وطن انتہائی مخدوش حالت میں ہیں ‘ انہیں دہشت گرد تنظیموں کی جانب سے بھرتی کیا جارہا ہے ۔ یہ غیرقانونی تارکین وطن نہ صرف ہندوستانی شہریوں کے حقوق غصب کرلیتے ہیں بلکہ سنگین صیانتی چیلنج ثابت ہوتے ہیں ۔ یہ مراسلہ گذشتہ ہفتہ جاری کیا گیا ہے ۔ ریاست راکھین کے روہنگیا مسلمان جو میانمار سے ہندوستان کی سرزمین پر آئے ہیں ‘ خاص طور پر حالیہ برسوں میں ہمارے ملک کے محدود وسائل پر ایک بوجھ ثابت ہورہے ہیں ۔ علاوہ ازیں ہماری صیانت کیلئے سنگین چیلنج بھی پیدا کررہے ہیں ۔مرکزی وزیر مملکت برائے اُمور داخلہ کرن رجیجو نے 9 اگست کو پارلیمنٹ میں بیان دیتے ہوئے کہا کہ آج کی تاریخ تک دستیاب معلومات کے بموجب 14ہزار سے زیادہ روہنگیا اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کمیٹی کی جانب سے درج رجسٹرڈ کئے جاچکے ہیں اور ہندوستان میں مقیم ہیں ۔ تاہم بعض اطلاعات سے نشاندہی ہوتی ہے کہ تقریباً 40ہزار روہنگیا ہندوستان میں غیرقانونی طور پر مقیم ہیں ۔ روہنگیا زیادہ تر جموں‘ حیدرآباد ‘ ہریانہ ‘ اترپردیش ‘ دہلی ۔ این سی آر اور راجستھان میں مقیم ہیں ۔ 16نومبر 2016کو حکومت نے پارلیمنٹ کو اطلاع دی کہ دستیاب معلومات کے مطابق تقریباً دو کروڑ غیرقانونی بنگلہ دیشی تارکین وطن ہندوستان میں مقیم ہیں ۔

TOPPOPULARRECENT