Wednesday , September 27 2017
Home / ہندوستان / غیر سنجیدہ جماعتوں کو سیاسی نظام سے علیحدہ کرنا ضروری

غیر سنجیدہ جماعتوں کو سیاسی نظام سے علیحدہ کرنا ضروری

ٹیکس استثنی جیسی سہولتوں کے بیجا استعمال کو روکنے پر زور ۔ پارلیمانی اسٹانڈنگ کمیٹی کی سفارش
نئی دہلی 14 اپریل ( سیاست ڈاٹ کام ) ایک پارلیمانی پیانل نے کہا ہے کہ ملک میں سیاسی نظام سے غیر سنجیدہ جماعتوں کو علیحدہ کرنے کی ضرورت ہے اور اس بات کو یقینی بنایا جانا چاہئے کہ انہیں ٹیکس استثنی سے محروم کردیا جائے اور ان کے رجسٹریشن کو قانون کے مطابق کیا جائے ۔ کمیٹی نے یہ سفارشات ایسے وقت میں کی ہیں جب چند دن قبل الیکشن کمیشن نے انکم ٹیکس محکمہ سے کہا ہے کہ وہ ان 255 سیاسی جماعتوں کے فینانسیس کا جائزہ لے جنہیں انتخابات میں حصہ نہ لینے پر حال ہی میں فہرست سے خارج کردیا گیا ہے ۔ الیکشن کمیشن نے وقفہ وقفہ سے یہ ان مختلف جماعتوں کی نشاندہی کی ہے جنہوں نے 2005 سے انتخابات میں حصہ نہیں لیا تھا اور ان میں سے جملہ 255 جماعتوں کو کمیشن نے فہرست سے خارج کردیا ہے ۔ الیکشن کمیشن کا یہ ماننا ہے کہ یہ جماعتیں صرف کاغذ پر ہیں اور یہ لوگ در اصل دوسروں کو عطیات قبول کرتے ہوئے کالے دھن کو جائز دولت میں تبدیل کرنے میں مدد کر رہی ہیں۔ الیکشن کمیشن کو یہ اختیار حاصل ہے کہ وہ کسی سیاسی جماعت کو رجسٹر کرے لیکن اسے انتخابی قوانین کے تحت یہ اختیار نہیں ہے کہ وہ کسی بھی جماعت کا رجسٹریشن ختم کردے ۔ پارلیمانی کمیٹی کا یہ خیال ہے کہ سیاسی جماعتوں کے رجسٹریشن سے متعلق قوانین کو مزید سخت بنایا جائے تاکہ غیر سنجیدہ سیاسی جماعتیں ابتداء ہی میں رجسٹریشن نہ کروا پائیں اور اگر وہ رجسٹریشن کروا بھی لیتی ہیں تو ان کا رجسٹریشن بعد میں منسوخ کیا جاسکے ۔ قانون اور پرسونل سے متعلق پارلیمانی اسٹانڈنگ کمیٹی نے حال ہی میں اختتام پذیر پارلیمنٹ بجٹ اجلاس میں پیش کردہ اپنی تازہ رپورٹ میں یہ بات بتائی ۔ کمیٹی نے کہا کہ سیاسی جماعتوں کو رجسٹریشن کے بعد جو مراعات ملتی ہیں ان کے بیجا استعمال کو روکنے کیلئے اقدامات کئے جانے چاہئیں۔ یہ جائزہ لیا جانا چاہئے کہ آیا سیاسی جماعتوں کا رجسٹریشن منسوخ یا معطل بھی کیا جاسکتا ہے یا نہیں۔

TOPPOPULARRECENT