Monday , August 21 2017
Home / جرائم و حادثات / غیر قانونی پاسپورٹ تیاری کا کیس، دہلی میں گرفتار میانمار شہری کی عدالت میں پیشکشی

غیر قانونی پاسپورٹ تیاری کا کیس، دہلی میں گرفتار میانمار شہری کی عدالت میں پیشکشی

حیدرآباد ۔ 25 اگسٹ ۔ ( سیاست نیوز) غیرقانونی طورپر پاسپورٹ تیاری میں ملوث میانمار کے شہری نورالحق عرف شیخ نور کو اسپیشل انوسٹی گیشن ٹیم ( ایس آئی ٹی ) نے آج دہلی سے حیدرآباد منتقل کرنے کے بعد نامپلی کریمنل کورٹ میں پیش کیا۔ شیخ نور کو دہلی پولیس نے 21 اگسٹ کو جنوبی دہلی کے ابوالفضل انکلیو میں واقع اُس کے مکان سے گرفتار کیا تھا اور وہ وہاں دہلی میں نماز کی ٹوپیاں و تسبیحات و دیگر اشیاء بیچنے کا کاروبار کررہا تھا ۔ 14 اگسٹ کو ٹاسک فورس پولیس نے چنچل گوڑہ علاقہ میں مسعود علی خان پاسپورٹ ایجنٹ کے مکان پر دھاوا کرتے ہوئے وہاں سے پاکستانی شہری محمد ناصر ، بنگلہ دیشی شہری فیضل محمد ، زین العابدین کے علاوہ میانمار کے شہری ضیاء الرحمن اور سہیل پرویز کو گرفتار کیا تھا اور اس دھاوے میں فرضی پاسپورٹس ، آدھار کارڈ و دیگر دستاویزات برآمد کئے گئے تھے ۔ پاکستانی شہری محمد ناصر کی تفتیش کے دوران شیخ نور کے نام کا انکشاف ہوا تھا جو میانمار کا شہری ہے اور 40 سال قبل بنگلہ دیش کے ذریعہ ہندوستان پہنچ کر ظہیرآباد و میدک میں مقیم تھا ۔ شیخ نور نے حیدرآباد میں 100 مربع گز اراضی بھی خریدی تھی اور وہ کئی پاسپورٹ ایجنٹس کے ذریعہ بنگلہ دیش و پاکستانی افراد کی ہندوستانی پاسپورٹس کی تیاری میں مدد کیا کرتا تھا ۔ ایس آئی ٹی نے اُسے ٹرانزٹ وارنٹ پر حیدرآباد منتقل کرتے ہوئے نامپلی کریمنل کورٹ کی 12 ویں ایڈیشنل چیف میٹرو پولیٹن مجسٹریٹ کے اجلاس پر پیش کیا جہاں پر اُسے 14 دن کی عدالتی تحویل میں دیدیا گیا۔ ایس آئی ٹی شیخ نور کو اپنی تحویل میں لے کر اس کیس میں مزید پوچھ تاچھ کرے گی ۔ قبل ازیں ایس آئی ٹی نے اس کیس کے دیگر پانچ ملزمین کو بھی پولیس تحویل کے اختتام پر آج عدالت میں پیش کیا۔

TOPPOPULARRECENT