Monday , August 21 2017
Home / مضامین / فراز فاطمی کا خیرمقدم

فراز فاطمی کا خیرمقدم

کے این واصف
ریاست بہار کے حالیہ اسمبلی انتخابات میں منتخب ہوئے فراز فاطمی ، ایم ایل اے ان دنوں سعودی عرب کے نجی دورے پر ہیں۔ جواں سال رکن اسمبلی بہار فراز فاطمی سابق مرکزی وزیر علی اشرف فاطمی کے فرزند ہیں۔ ریاض میں ان کی آمد پر ’’بہار فاونڈیشن‘‘ اور ’’فرینڈ آف بہار‘‘ نے مشترکہ طورپر فراز فاطمی کے اعزاز میں ایک شاندار خیرمقدم تقریب کا اہتمام کیا ۔ اس تقریب میں ابو عاصم اعظمی ایم ایل اے مہاراشٹرا اسمبلی و صدر سماج وادی پارٹی مہاراشٹرا ، اے اے فاطمی سابق مرکزی وزیر ، انجنیئر راشد علی شیخ معروف بزنس مین ریاض نے بطور مہمانان اعزازی کی حیثیت سے شرکت کی۔ نظامت کے فرائض ادیب و شاعر کونین شاہدی نے انجام دیئے ۔ محفل کا آغاز قاری ذاکر عبدالرحیم کی قرات کلام پاک سے ہوا۔ کونین شاہدی کے ابتدائی کلمات کے بعد بہار فاؤنڈیشن سعودی چاپٹر کے چیرمین عبید الرحمن نے خیرمقدم کیا ۔ عبید الرحمن نے رسمی خیرمقدمی کلمات کے بعد ریاست بہار سے تعلق رکھنے والے این آر آئیز کے مسائل پیش کر کے فراز فاطمی سے درخواست کی ، وہ ان مسائل کو حکومتی سطح پر حل کروانے کی کوشش کریں۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ خلیجی ممالک میں کام کرنے والے بہاری باشندے پٹنہ شہر کیلئے راست فلائیٹ کی مانگ ایک عرصہ سے کر رہے ہیں اور اس سلسلہ میں مسلسل نمائندگیاں کر رہے ہیں۔ عبید نے فراز فاطمی سے یہ بھی درخواست کی کہ وہ اس سلسلہ میں موثر نمائندگی کرتے ہوئے بہار این آر آئیز کی دیرینہ خواہش کی تکمیل کریں۔ انہوں نے یہ بھی مانگ کی کہ ریاست کے تمام اضلاع میں اسکولس ، ڈگری کالجس اور ٹکنیکل تعلیمی ادارے قائم کئے جائیں تاکہ نوجوان نسل کو تعلیمی سہولتیں حاصل ہوں اور ریاست کی شرح خواندگی میں اضافہ ہو جس کے بعد راقم الحروف نے ’’اور فراز چاہئے کتنی محبتیں تجھے‘‘ کے عنوان سے فراز فاطمی پر ایک تعارفی خاکہ پیش کیا۔
اس موقع پر مخاطب کرتے ہوئے انجنیئر راشد علی شیخ نے کہا کہ یہاں مقیم ہندوستانی باشندے وطن سے آنے والے ذی حیثیت حضرات اور سیاسی قائدین سے اپنے مسائل کی نمائندگی کرتے ہیں اور امید کرتے ہیںکہ ان کے قائدین ان کے مسائل ملک کے اعلیٰ ایوانوں اور اصحاب اقتدار و ارباب مجاز تک پہنچائیں گے۔ راشد شیخ نے کہا کہ قائدین کو چاہئے کہ وہ اپنے وطن کے باشندوں کی امیدوں پر پورے اتریں ۔ معروف بزنس مین و صاحب خیر راشد شیخ نے یہ بھی کہا کہ این آر آئیز ملک کیلئے ایک اثاثہ ہیں۔ ان کے مسائل ترجیحی بنیادوں پر حل کئے جانے چاہئیں۔

سابق مرکزی وزیر علی اشرف فاطمی نے اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ بہار میں غربت ہے لیکن یہاں کے امن پسند ہیں اور فرقہ پرستی کی ذہنیت نہیں رکھتے ۔ وہ بقائے باہمی اور یکجہتی میں یقین رکھتے ہیں۔ یہی وجہ تھی کہ پچھلے اسمبلی الیکشن میں تانا شاہی مزاج اور فرقہ پرست ذہنیت کے سیلاب کو بہاری عوام نے ہی روکا۔ فاطمی نے کہا کہ ہندوستان ایک ہمہ لسانی و ہمہ مذہبی ملک ہے ۔ یہاں اپنے مذہبی تشخص کو برقرار رکھتے ہوئے ایک دوسرے کے جذبات کے احترام کے ساتھ جینے میں ہی کامیابی ہے ۔ فاطمی نے کہا کہ ہمیں ہمیشہ اس کا خیال رکھنا چاہئے کہ ہمارے دامن پر کبھی بد دیانتی اور بے ایمانی کا داغ نہ لگے۔ نیز ہمیں کمزور طبقات کی مدد اور پچھڑے ہوئے لوگوں کو قومی دھارا سے جوڑے کی کوشش کرنی چاہئے ۔ انہوں نے اس بات پر افسوس کا اظہار کیا کہ آج بھی ہندوستان کے دیہاتوں میں زمیندار اپنے علاقوں میں تعلیم عام ہونے نہیں دیتے۔ اس ازکار رفتہ سوچ کو بدلنا چاہئے کیونکہ علم ہی ترقی کا زینہ ہے ۔

نو منتخب ایم ایل اے ڈاکٹر فراز فاطمی نے کہا کہ اس بار بہار کے ’’مہاگٹھ بندھن‘‘ (عظیم اتحاد) نے سماجی انصاف اور ترقی کا نعرہ دیکر الیکشن میں کامیابی حاصل کی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ نتیش کمار کی حکومت نے ریاست کی ترقی کیلئے ایک جامع پروگرام مرتب کیا ہے جس میں گا ؤں گاؤں میں مسلسل بجلی کی سربراہی ، ہر ضلع میں ایک میڈیکل اور فنی تعلیم کالج کا قیام ، ہر پنچایت میں ایک ہائی اسکول ، ریاست کے لاء اینڈ آرڈر پر زیر و ٹالرنس پالیسی ، نوجوانوں کو بے روزگاری الاؤنس کی ادائیگی ، چار لاکھ نوجوانوں کو Student credit card کی اجرائی اور عوام کی بنیادی ضروریات کے بآسانی حصول پر توجہ وغیرہ ۔ فراز نے کہا کہ میں نے اپنے حلقیہ انتخاب پر بھرپور توجہ دی ، عوام میں رہا ، ان کے مسائل سے وقفیت حاصل کی اور عوام کا اعتماد حاصل کیا ۔ فراز نے کہا کہ دیانتداری سے عوامی خدمت مجھے ورثہ میں ملی ہے۔
شیواجی نگر بمبئی سے سماج وادی پارٹی کے ایم ایل اے و بے باک عوامی قائد ابو عاصم اعظمی نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہندوستان میں اقلیتی طبقہ اور خصوصاً مسلمانوں کی کمزوری کی وجہ ان کی ملکی سیاست میں عدم دلچسپی اور برائے نام حصہ داری ہے ۔ انہوں نے کہا کہ سیاست سے دوری کے رجحان نے ہمیں اقتدار سے دور کیا ۔ ہمیں اپنے حقوق حاصل کرنے ہیں تو ہمیں سیاسی طور پر طاقتور ہونا ضروری ہے اور اس کیلئے ہمیں اپنے آپ کو قومی دھارے میں شامل کرنا چاہئے ۔ اگر آپ نیک جذبہ اور صدق دل سے عوامی خدمت کریں تو آپ ہر طبقہ میں مقبول ہوسکتے ہیں۔ اعظمی نے کہا کہ یہ سب جانتے ہیں کہ سنگین الزامات کے تحت جیل میں بند عمر رسیدہ قیدی اسیما آنند کی جیل میں ایک مسلم نوجوان کی انسانی بنیادوں پر خدمت کی جس کے نتیجہ میں عدالت میں اسیمانند نے سچ قبول کیا جس سے یہ مسلم نوجوان بری ہوگیا ۔ ابو عاصم نے کہا کہ یکجہتی میں طاقت ہے جس کا عملی نمونہ بہار اسمبلی الیکشن ہے ۔ بہار میں ہندو مسلم متحد ہوئے تو فرقہ پرستوں نے موکھی کھائی ۔ اعظمی نے خلیجی ممالک میں کام کرنے والے این آر آئیز کی ستائش کرتے ہوئے کہا کہ خلیجی این آر آئیز کی ملک کو روانہ کردہ رقم ملک کی معیشت کیلئے ایک بڑا سہارا تھے ۔ انہوں نے کہا کہ گلف کے دروازے کھلے تو ہندوستان کے  لاکھوں افراد کے ساتھ مسلمانوں کی معیشت بھی بہتر ہوئی ۔ آج شہر شہر ، گا ؤں گاؤں میں مسلمانوں کے پکے مکان اور مسلم بستیوں میں اونچے اونچے مساجد کے مینار نظر آرہے ہیں تو خلیجی ممالک میں کمائی دولت کی دین ہے۔

اس موقع پر جن دیگر حضرات نے مختصر طور پر اظہار خیال کیا ان میں ڈاکٹر دلنواز رومی سابق چیرمین ہائر بورڈ آف انٹرنیشنل انڈین اسکول ریاض ، سہیل احمد صدر علیگڑھ مسلم یونیورسٹی اولڈ بوائز اسوسی ایشن ، ڈاکٹر دلشاد احمد رکن انتظامی کمیٹی انٹرنیشنل انڈین اسکول ریاض اور بہار کی سماجی تنظیموں کے صدور منیر الدین اور امان اللہ خاں شامل تھے۔
آخر میں چیرمین بہار فاؤنڈیشن عبیدالرحمن کے مہمانان کو یادگاری تحفہ پیش کئے ۔ ڈاکٹر فراز کو روایتی پگڑی بھی پہنائی گئی ۔ اس محفل میں سماجی تنظیموں کے اراکین اور ہندوستانی کمیونٹی کے اراکین کی بہت بڑی تعداد نے شرکت کی۔ ایک مقامی اسٹار ہوٹل کے ہال میں منعقد اس تقریب کا اختتام منصب علی شیخ کے ہدیہ تشکر پر ہوا ۔

TOPPOPULARRECENT