Sunday , September 24 2017
Home / ہندوستان / فوجی گاڑی کی زد میں آنے سے کمسن طالبہ کی موت

فوجی گاڑی کی زد میں آنے سے کمسن طالبہ کی موت

شوپیان میں عوام کا احتجاجی مظاہرہ ، سیکوریٹی فورسیس کے ساتھ جھڑپیں
سرینگر ، 20جولائی (سیاست ڈاٹ کام) جنوبی کشمیر کے ضلع شوپیان کے زینہ پورہ میں جمعرات کی صبح احتجاجی مظاہرین اور سیکورٹی فورسز کے مابین اُس وقت شدید جھڑپیں بھڑک اٹھیں جب ایک 9 سالہ اسکولی طالبہ فوجی گاڑی کی زد میں آکر لقمہ اجل بنی۔ جھڑپوں میں قریب دو درجن افراد کے زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں۔ مہلوک اسکولی طالبہ کی شناخت زینہ پورہ سے ملحقہ گاؤں اگلر کی رہنے والی اروبا کے بطور کی گئی ہے ۔بتایا جارہا ہے کہ وہ دوسری جماعت میں زیر تعلیم تھی۔ ایک رپورٹ کے مطابق گاڑی کی زد میں آنے کے بعد فوجی اہلکاروں نے اگرچہ اروبا کو نزدیکی اسپتال منتقل کیا، تاہم وہاں اسے مردہ قرار دیا گیا۔ فوجی گاڑی کی زد میں آنے سے اسکولی طالبہ کی موت ہوجانے کی خبر جوں ہی زینہ پورہ میں پھیل گئی تو لوگ بڑی تعداد میں سڑکوں پر آگئے اور کیمونٹی ہیلتھ سینٹر کے باہر فوج کے خلاف احتجاج کرنے لگے ۔ وہ ملوثین کے خلاف ایف آئی آر کے اندراج کا مطالبہ کررہے تھے ۔ ذرائع نے بتایا کہ ریاستی پولیس اور سیکورٹی فورسز نے موقع پر پہنچ کر پہلے لاٹھی چارج اور بعدازاں آنسو گیس کا استعمال کیا۔ سیکورٹی فورسز نے احتجاجیوں پر مبینہ طور پر اپنی بندوقوں اور پیلٹ گنوں کے دہانے بھی کھول دیے ۔ سیکورٹی فورسز کی کارروائی میں دو درجن افراد کے زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں۔ جھڑپوں کے دوران دو پولیس اہلکاروں پتھر لگنے سے زخمی ہوئے ہیں۔ مقامی لوگوں نے الزام لگایا کہ اسکولی طالبہ کو کچلنے والی فوجی گاڑی کا ڈرائیور اسے انتہائی تیز رفتاری سے چلارہا تھا۔ ایک رپورٹ کے مطابق واقعہ کی نسبت ایف آئی آر درج کرلی گئی ہے ۔ واضح رہیکہ کشمیر میں تشدد اور جھڑپوں کا سلسلہ جاری ہے اس کے علاوہ علحدگی پسندوں کی ہڑتال کے سبب وادی میں معمول کی زندگی بری طرح متاثر ہے جس کی وجہ سے عوام کو مشکلات پیش آرہی ہیں۔

TOPPOPULARRECENT