Saturday , August 19 2017
Home / دنیا / فوج کی زدوکوب کے ویڈیو کی تحقیقات کا انسانی حقوق گروپ کا حکومت میانمار سے مطالبہ

فوج کی زدوکوب کے ویڈیو کی تحقیقات کا انسانی حقوق گروپ کا حکومت میانمار سے مطالبہ

یانگون ۔ 28مئی ( سیاست ڈاٹ کام) میانمار کے عہدیداروں کو چاہیئے کہ ایک ویڈیو فلم کے بارے میں تحقیقات کریں جن میں فوجی وردی پہنے ہوئے افراد کو بے رحمی سے ہتھکڑی ڈالے ہوئے قیدیوں کو زدوکوب کرتے ہوئے دکھایا گیا ہے ۔ شبہ ہے کہ یہ قیدی نسلی باغی جنگجو ہیں ۔ ویڈیو اس وقت برسرعام آیا ہے جب کہ سیویلین زیرقیادت حکومت جو آنگ سان سوچی کی ہے اور فوج نے 12سے زیادہ نسلی باغی گروپس سے دارالحکومت میں امن بات چیت شروع کر رکھی ہے جس کا مقصد دنیا کی طویل ترین خانہ جنگی کا خاتمہ ہے ۔ یہ ویڈیو جس کی توثیق نہیں ہوسکی پہلی بار کل صبح فیس بک پر منظر عام پر آئیں اور فوری تمام ذرائع ابلاغ میں پھیل گئیں‘ ان میں کئی افراد کو جو فوجی وردی میں ملبوس ہیں ‘ سیولین کپڑوں میں ہاتھوں میں ہتھکڑیاں پہنے ہوئے تین افراد کو لاتے مارتے ہوئے دکھایا گیا ہے ۔ اس ویڈیو کے بموجب ان افراد کو بعض دیہی مکانوں سے گرفتار کیا گیا تھا ۔ 17منٹ طویل ویڈیو میں ایک وردی پوش شخص اپنے ہیلمیٹ سے قیدیوں میں سے ایک کے منہ پر ضرب لگاتے ہوئے بھی دیکھا جاسکتا ہے ۔ انسانی حقوق گروپ نے مطالبہ کیا ہے کہ اس بات کی تحقیقات کی جائے کہ کیا قیدی تاآنگ قومی نجات دہندہ فوج کے ارکان اور نسلی باغی گروپ سے وابستہ افراد تو نہیں ہیں جو شمال مشرقی ریاست شان کے متوطن ہیں اور فی الحال حکومت کے ساتھ جنگ میں مصروف ہیں ۔

TOPPOPULARRECENT