Thursday , August 17 2017
Home / شہر کی خبریں / فیس باز ادائیگی سے بچنے حکومت کی نئی حکمت عملی ، 5 ہزار اقلیتی انجینئرنگ طلبہ کے کیرئیر متاثر

فیس باز ادائیگی سے بچنے حکومت کی نئی حکمت عملی ، 5 ہزار اقلیتی انجینئرنگ طلبہ کے کیرئیر متاثر

فرسٹ ایر ناکام کو سکنڈ ایر پروموشن ، اپ گریڈ امتحان میں ناکام ہونے کا بہانہ
حیدرآباد۔/24نومبر، ( سیاست نیوز) انجینئرنگ کالجس میں تعلیمی معیار میں اضافہ کیلئے حکومت کی جانب سے جو قدم اٹھائے گئے ہیں اسے ایک طرف کالجس کی مشکلات میں اضافہ ہوا تو دوسری طرف حکومت فیس باز ادائیگی کے تحت ادا کی جانے والی بھاری رقم کو بچانے میں کامیاب ہوچکی ہے۔ سابقہ طریقہ کار کے مطابق اگر کوئی طالب علم انجینئرنگ کا پہلا سال کلیئر نہ کرے تب بھی اسے سیکنڈ ایئر میں داخلے کی اجازت تھی لیکن اب حکومت نے ایک گریڈ مقرر کردیا ہے اور اس سے کم نشانات حاصل کرنے والے طلبہ کو سیکنڈ ایئر میں پرموشن نہیں دیا جاتا۔ جاریہ تعلیمی سال سے اس طریقہ کار پر عمل آوری کے سبب بتایا جاتا ہے کہ 17000 سے زائد طلبہ فرسٹ ایئر میں ہی رُک گئے۔ یونیورسٹی نے ان طلبہ کیلئے سپلیمنٹری طرز کا امتحان منعقد کیا جس میں تقریباً 10 ہزار طلبہ نے کامیابی حاصل کرلی۔ بتایا جاتا ہے کہ باقی 7542 طلبہ میں 5000 طلبہ کا اقلیتی طبقہ سے تعلق ہے۔ یہ طلبہ اب سیکنڈ ایئر میں تعلیم جاری نہیں رکھ سکتے۔ ایسی صورت میں حکومت بھی ایسے طلبہ کو فیس باز ادائیگی کے تحت تعلیمی فیس ادا کرنے کے حق میں نہیں ہے۔ اس طرح فیس باز ادائیگی کا بھاری بجٹ حکومت بچانے میں کامیاب ہوچکی ہے۔ اکثر یہ دیکھا گیا تھا کہ انجینئرنگ کورس کی تکمیل طالب علم بھلے ہی مقررہ مدت سے زائد برسوں میں مکمل کریں لیکن حکومت ہر سال فیس باز ادائیگی کے تحت تعلیمی فیس ادا کرتی رہی۔ فیس کی ادائیگی کے طریقہ کار کو ختم کرنے سے ایک طرف طلبہ تو دوسری طرف کالجس بھی مسائل کا شکار ہیں۔ حکومت نے طلبہ کی حاضری کو یقینی بنانے کیلئے بائیو میٹرک اٹینڈنس سسٹم متعارف کیا ہے جس کا راست تعلق یونیورسٹی سے ہے۔ کم اٹینڈنس والے طلبہ سابق کی طرح امتحان میں شرکت کے اہل نہیں ہوں گے۔ ماہرین تعلیم نے حکومت کے اس فیصلہ کی تائید کی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ اگرچہ حکومت کا یہ فیصلہ سخت گیر دکھائی دے رہا ہے تاہم اس سے معیار تعلیم میں اضافہ ہوگا۔ طلبہ کی حاضری نہ صرف بہتر ہوگی بلکہ ان کی تعلیمی قابلیت بھی پروان چڑھے گی۔ اقلیتی کالجس نے طلبہ کو اس صورتحال سے بچانے کیلئے ماڈل پیپرس کی فراہمی کے ذریعہ امتحانات کی تیاری کا آغاز کیا ہے تاکہ کالجس کے نتائج بہتر ہوسکیں۔ واضح رہے کہ تلنگانہ حکومت نے گذشتہ دو برسوں میں فیس باز ادائیگی کے بھاری بقایا جات جاری نہیں کئے ہیں جس کے سبب کالجس معاشی مشکلات کا سامنا کررہے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT