Friday , March 24 2017
Home / کھیل کی خبریں / فیڈرر کو پانچویں بار ویلز ٹائٹل، واؤرنکا ناکام

فیڈرر کو پانچویں بار ویلز ٹائٹل، واؤرنکا ناکام

انڈین ویلز20مارچ (سیاست ڈاٹ کام) اپنی پرانی فارم میں دکھائی دے رہے سوئٹزرلینڈ کے راجر فیڈرر نے ایک بار پھر ہم وطن اسٹینسلاس واورنکا پر اپنی برتری ثابت کرتے ہوئے یہاں انڈین ویلز ٹینس ٹورنامنٹ میں اپنا ریکارڈ مشترکہ پانچواں خطاب حاصل کر لیا ہے ۔35سالہ فیڈرر نے واورنکا کو مسلسل سیٹوں میں 6-4 7-5 سے شکست دی اور پانچویں بار یہاں خطاب جیت لیا۔ وہ اسی کے ساتھ انڈین ویلز کا خطاب حاصل کرنے والے سب سے عمردراز کھلاڑی بھی بن گئے ہیں۔چھ ماہ کی چوٹ کے بعد واپسی اور پھر جنوری میں آسٹریلین اوپن کے ذریعے اپنا 18 واں گرینڈ سلیم جیتنے والے فیڈرر نے انڈین ویلز میں حیرت انگیز کارکردگی کا مظاہرہ کیا اور بغیر ایک بھی سیٹ گنوائے فائنل تک پہنچے ۔ آسٹریلین اوپن کے سیمی فائنل میں بھی ان کا واورنکا کا سے مقابلہ ہوا تھاجہاں انہوں نے جیت حاصل کی تھی اور اس بار بھی واورنکا امیدوں پر کھرے نہیں اتر پائے ۔دو گرینڈ سلیم چیمپئن کے درمیان اس ھائی وولٹیج مقابلے میں دونوں قریبی دوست اوپننگ سیٹ میں 5-4 کے اسکور پر پھر 10 ویں گیمز تک سروس کرتے رہے جہاں فیڈرر نے 21 شاٹ کی ریلی کے بعد واورنکا کو شکست دی۔ انڈین ویلز کے فائنل میں پہلی بار پہنچے 31 سالہ کھلاڑی نے دوسرے سیٹ میں بہتر کھیل کا مظاہرہ کیا اور سروس بچا کر 2-0 کی ابتدائی برتری حاصل کی۔ لیکن فیڈرر نے اگلے تینوں کھیل جیتے اور واورنکا کی 12 ویں گیم میں سروس بریک کرلئ 80 منٹ میں میچ نمٹا دیا۔فیڈرر اب سربیا کے نوواک جوکووچ کے برابر پہنچ گئے ہیں جنہوں نے پانچ بار یہاں خطاب جیتا ہے ۔ لیکن ساتھ ہی فیڈرر انڈین ویلز کو جیتنے والے سب سے عمردراز کھلاڑی بن گئے ہیں۔ انہوں نے اس معاملے میں جمی میں کونور کو پیچھے چھوڑ دیا ہے جنہوں نے 1984 میں 31 سال کی عمر میں یہاں ٹرافی جیتی تھی۔واورنکا اپنے پہلے خطاب سے چوکنے پر کچھ ناخوش دکھائی دیے لیکن ناظرین نے ان کا استقبال کیا۔ فیڈرر نے جیت کے بعد کہا ’’جب گذشتہ سال میں یہاں آ نہیں سکا تھا تو میں کافی دکھی تھا لیکن اس بار یہاں آ کر اور جیت حاصل کر کے میں بہت خوش ہوں۔ میرے لئے یہ ہفتہ بہترین رہا ہے ‘‘۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT