Monday , August 21 2017
Home / شہر کی خبریں / ف12فیصد تحفظات کیلئے سارا مسلم سماج متحرک

ف12فیصد تحفظات کیلئے سارا مسلم سماج متحرک

چیف منسٹر کے سی آر کے وعدے کی تکمیل کیلئے متحدہ مساعی ‘ شہر اور اضلاع میں جوش و خروش
حیدرآباد ۔ 14 ستمبر ۔ ( سیاست نیوز) ریاست تلنگانہ میں 12 فیصد مسلم تحفظات کیلئے جاری سیاست کی تحریک دن بہ دن زور پکڑتی جارہی ہے اور اس تحریک سے مسلم سماج کا ہر فرد جڑتا جارہا ہے ۔ سرکاری دفاتر میں تحصیلدار اور کلکٹرس سے نمائندگیوں کاسلسلہ جاری ہے جبکہ عوام تحفظات کی ضرورت کو محسوس کرتے ہوئے عوامی نمائندوں سے بھی رجوع ہورہے ہیں ۔ بستی ، محلہ یا پھر علاقہ میں کہیں کوئی تقریب میں شرکت کررہے ہیں تو عوام اس مقام پر پہونچکر ان سے تحفظات کیلئے سفارش پیش کررہے ہیں۔ 12 فیصد مسلم تحفظات تحریک کے روح رواں نیوز ایڈیٹر سیاست جناب عامر علی خاں نے جس طرح اعلان کیا تھا کہ یہ تحریک نہ کسی سیاسی جماعت کی حمایت میں ہے اور نہ کسی جماعت یا حکومت کے خلاف ہے ۔ یہ تحریک صرف اور صرف مسلمانوں کے حق میں ہے اور مسلمانو ںکی تحریک ہے تاکہ نوجوان نسل کے مستقبل کو روشناس کیا جاسکے ۔ اس اعلان کے بعد تلنگانہ بالخصوص اضلاع سے تحریک کو مضبوط کرنے کا سلسلہ جاری ہے ۔ اور مسلم سماج کا ہر فرد اس تحریک سے جڑ رہاہے ۔ تاکہ اپنے بچوں کے روشن مستقبل کیلئے جاری اس تحریک کو مضبوط کیا جاسکے ۔ سیاست کی جانب سے جاری کردہ پروفارما ہر مسلم گھر تک پہونچ رہا ہے ۔ بتایا جاتا ہے کہ طلبہ تنظیمیں بالخصوص سیکولر ، دینی افرا اور سماجی جہد کار بھی اس تحریک سے جڑنا شروع ہوگئے ہیں۔ سرکاری کمیشنوں اور کمیٹیوں کی رپورٹس میں مسلمانوں کی پسماندگی اور سماجی حالات پیش کردی گئی اور اب جبکہ چیف منسٹر تلنگانہ مسٹر کے چندراشیکھر راؤ نے 12 فیصد مسلم تحفظات کا وعدہ کیا ہے ۔ چیف منسٹر کا وعدہ مسلمانوں سے ہمدردی اور مسلم قوم کی بہبود کے سرکاری منصوبہ کو ظاہر تو کرتا ہے تاہم وعدہ کی عمل آوری میں تاخیر کا خوف مسلم طبقہ میں پایا جاتا ہے ۔ حالانکہ چیف منسٹر کی نیت پر مسلمانوں کو شبہ تو نہیں ہے باوجود اس کے ایک لاکھ ملازمتو کے اعلامیہ کی اجرائی کا خوف مسلم سماج میں تشویش اور سرکاری وعدہ میں تاخیر سے شبہات میں اضافہ کا موجب بنا ہوا ہے ۔ آج ریاست تلنگانہ میں حیدرآباد کے علاوہ ضلع نلگنڈہ ، نظام آباد ، میدک ، ورنگل ، عادل آباد میں سرکاری عہدیداروں کو یادداشتیں پیش کی گئیں ۔ حیدرآباد میں تلنگانہ میناریٹی ویلفیر سنگھم نے بی سی کمیشن کو یادداشت پیش کی اور تلنگانہ میناریٹی ایمپلائیز سرویس اسوسی ایشن نے جوائنٹ کلکٹر حیدرآباد کو یادداشت پیش کی ۔ حافظ بابانگر یوتھ ویلفیر اسوسی ایشن نے ضلع کلکٹر کو یادداشت پیش کی ۔ تلنگانہ میناریٹی ایمپلائیز سرویس اسوسی ایشن کی جانب سے ورکنگ پریسیڈنٹ محمد عبدالنعیم اور صدرفاروق احمد نے ضلع کلکٹر حیدرآباد کو یادداشت پیش کی ۔ انھوں نے کہا کہ سیاست کی تحریک سے متاثر ہوکر انھوں نے 12 فیصد تحفظات کے لئے نمائندگی کی ہے ۔ انھوں نے تحفظات کی فراہمی کیلئے حکومت سے جلد از جلد ٹھوس اقدامات کرتے ہوئے یہ احکام جاری کرنے اور تقررات میں مسلمانوں کو (12) فیصد جاری کرنے کا مطالبہ کیا ۔ انھوں نے بتایا کہ کلکٹر حیدرآباد نے نمائندگی کی سنجیدہ سماعت کرتے ہوئے یادداشت حکومت کو روانہ کرنے کا تیقن دیا اور مشورہ دیا کہ وہ انکوائری کمیشن سے بھی نمائندگی کریں۔

TOPPOPULARRECENT