Monday , August 21 2017
Home / شہر کی خبریں / ف12فیصد مسلم تحفظات، قانونی رکاوٹ

ف12فیصد مسلم تحفظات، قانونی رکاوٹ

حیدرآباد ۔ 13 اگست (سیاست نیوز) تلنگانہ کی ٹی آر ایس حکومت جو گذشتہ دو سال میں اپنے فیصلوں پر عمل آوری میں کئی رکاوٹوں کا سامنا کرچکی ہے۔ اب ریاست میں تعلیم اور روزگار میں مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات فراہم کرنے سے متعلق اپنے انتخابی وعدہ پر عمل آوری کا جوکھم بھرا فیصلہ کرنے کے مرحلہ میں ہے۔ چیف منسٹر تلنگانہ مسٹر کے چندرشیکھر راؤ نے ٹاملناڈؤ کے خطوط پر تلنگانہ ریاست میں مسلمانوں کو تحفظات دینے کا عزم رکھتے ہیں۔ ریاست ٹاملناڈومیں مختلف طبقات کو کل ملا کر 69 فیصد تحفظات فراہم کئے گئے ہیں جبکہ تلنگانہ حکومت آبادی کے لحاظ سے مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات فراہم کرنے کا جائزہ لے رہی ہے۔ اس کیلئے تلنگانہ حکومت کو نیا قانون بنانے کی ضرورت پڑے گی۔ ریاست ٹاملناڈو کی حکومت اس بات کو یقینی بنانے کے لئے 69 فیصد تحفظات کی فراہمی پر دستور میں ترمیم کی تاہم یہ معاملہ سپریم کورٹ میں زیرتصفیہ ہے۔ قطعی فیصلہ ہنوز آنا باقی ہے۔ اس طرح ریاست تلنگانہ میں اگر ٹی آر ایس حکومت مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات فراہم کرتی ہے تو ریاست میں تحفظات کا جملہ 58 فیصد تک پہنچ جانے کا قوی امکان ہے۔ اب دیکھنایہ ہیکہ حکومت تلنگانہ اپنے عزائم اور وعدہ کے مطابق قانون میں کس طرح کی ترمیم کرے گی اور مسلمانوں کی تعلیمی، معاشی ، سماجی پسماندگی کو دور کرنے کیلئے تحفظات فراہم کرے گی۔

TOPPOPULARRECENT