Monday , October 23 2017
Home / شہر کی خبریں / ف12 فیصد تحفظات، تلنگانہ کے مسلمانوں کو چیف منسٹر کا دھوکہ

ف12 فیصد تحفظات، تلنگانہ کے مسلمانوں کو چیف منسٹر کا دھوکہ

جی ایچ ایم سی انتخابات کے بعد این ڈی اے میں ٹی آر ایس کی شمولیت: پی گووردھن ریڈی
حیدرآباد /19 نومبر (سیاست نیوز) سینئر کانگریس قائد و رکن راجیہ سبھا پی گووردھن ریڈی نے کہا کہ 12 فیصد مسلم تحفظات کے نام پر چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر مسلمانوں کو دھوکہ دے رہے ہیں۔ آج یہاں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ ٹی آر ایس کے انتخابی منشور میں مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات فراہم کرنے اور اقتدار حاصل ہونے کے چار ماہ بعد اس وعدہ کو پورا کرنے کا اعلان کیا گیا تھا، لیکن 16 ماہ گزرنے کے باوجود اسے پورا نہیں کیا گیا۔ انھوں نے کہا کہ گریٹر حیدرآباد میونسپل کارپوریشن کے انتخابات کے بعد ٹی آر ایس این ڈی اے کا حصہ بن جائے گی، کیونکہ چیف منسٹر اپنی دختر کویتا کو مرکزی وزارت میں شامل کرنے کے لئے بی جے پی کے اعلی قائدین سے مشاورت کرچکے ہیں۔ انھوں نے چیف منسٹر تلنگانہ کو دھوکہ باز قرار دیتے ہوئے کہا کہ عوام اور کانگریس سے کئے گئے ایک بھی وعدہ کو پورا نہیں کیا گیا۔ انھوں نے کہا کہ علحدہ ریاست تشکیل دینے پر ٹی آر ایس کو کانگریس میں ضم کرنے، علحدہ تلنگانہ ریاست کا پہلا چیف منسٹر دلت کو بنانے، مسلمانوں اور قبائلی طبقات کو  12 فیصد تحفظات فراہم کرنے اور دلت طبقات کو تین ایکڑ اراضی دینے کا وعدہ کیا تھا، جس سے متاثر ہوکر عوام نے علحدہ تلنگانہ ریاست کانگریس کی جانب سے تشکیل دینے کے باوجود ٹی آر ایس کو اقتدار سونپا، مگر اقتدار حاصل ہونے کے بعد کے سی آر چیف منسٹر بن گئے اور تمام وعدوں کو فراموش کردیا۔ انھوں نے کہا کہ یکمشت قرضوں کی عدم معافی سے سیکڑوں کسان خودکشی کرچکے ہیں اور سماج کا ہر طبقہ حکومت کی کار کردگی سے ناراض ہے۔ انھوں نے حکومت کو سبق سکھانے اور چیف منسٹر کے رویہ میں تبدیلی لانے کے لئے ورنگل لوک سبھا کے ضمنی انتخاب میں کانگریس امیدوار کو بھاری اکثریت سے کامیاب بنانے کی اپیل کی۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT