Monday , April 24 2017
Home / شہر کی خبریں / ف12 فیصد  مسلم تحفظات کے خلاف بی جے پی کی مہم کی سخت مذمت

ف12 فیصد  مسلم تحفظات کے خلاف بی جے پی کی مہم کی سخت مذمت

مسلمانوں کے خلاف بی جے پی چراغ پا ، محمد خواجہ فخرالدین کا شدید ردعمل
حیدرآباد ۔ /9 فبروری (سیاست نیوز) صدر تلنگانہ پردیش کانگریس اقلیت ڈپارٹمنٹ محمد خواجہ فخرالدین نے بی جے پی کی جانب سے 12 فیصد مسلم تحفظات کے خلاف شروع کردہ دستخطی مہم کی سخت مذمت کی اور چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر کو مشورہ دیا کہ وہ مرکز کو اسمبلی میں منظور کردہ قرارداد روانہ کرنے کے فیصلے پر نظرثانی کریں ۔ آج صدر تلنگانہ پردیش کانگریس اقلیت ڈپارٹمنٹ محمد خواجہ فخرالدین اور ترجمان سید فاروق پاشاہ قادری نے ایک مشترکہ پریس نوٹ جاری کرتے ہوئے صدر تلنگانہ بی جے پی ڈاکٹر لکشمن کی جانب سے ریاست میں 12 فیصد مسلم تحفظات کے خلاف شروع کردہ دستخطی مہم کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ بی جے پی نے پھر ایکبار مسلم دشمنی کا مظاہرہ کیا ہے اور چیف منسٹر کے سی آر اس بی جے پی پر بھروسہ کررہے ہیں جو مسلم تحفظات کی مخالف ہے ۔ دستور میں تمام پسماندہ طبقات کو تحفظات دینے کی وکالت کی ہے ۔ آزادی کے بعد سے آج تک قومی و ریاستی سطح پر جتنی بھی کمیشن اور کمیٹیاں تشکیل دی گئی ہیں سب نے مسلمانوں کو تحفظات دینے کی سفارش کی ہے ۔ مگر جب بھی مسلمانوں کو تحفظات دینے کی بات آتی ہے ۔ بی جے پی اس کو مذہبی مسئلہ بناتے ہوئے رکاوٹیں پیدا کرتی ہے ۔ تمام شعبوں میں مسلمانوں کی نمائندگی نہ کے برابر ہے ۔ آبادی کے تناسب سے مسلمانوں کو تحفظات دینا ضروری ہے ۔ ٹی آر ایس نے اپنے منشور میں 12 فیصد مسلم تحفظات 4 ماہ میں دینے کا وعدہ کیا ۔ ڈھائی سال مکمل ہونے کے باوجود وعدہ سے وفا نہیں کیا ۔ چیف منسٹر اسمبلی میں قرارداد منظور کرتے ہوئے مرکز کو روانہ کرتے ہوئے مسلمانوں کو دھوکہ دے رہے ہیں اور خود بھی دھوکہ کھارہے ہیں ۔ واضح رہے کہ دلت طبقات کی اے بی سی ڈی زمرہ بندی کیلئے چیف منسٹر کی خواہش پر وزیراعظم نے کل جماعتی وفد سے ملاقات کرنے سے اتفاق کیا ۔ اس کے بعد ملاقات کا وقت منسوخ کردیا ۔ ایسے وزیراعظم سے کے سی آر مسلم تحفظات کے حق میں فیصلہ کرنے کی امید کررہے ہیں ۔ کانگریس کے دور حکومت میں سابق چیف منسٹر ڈاکٹر وائی ایس راج شیکھر ریڈی نے مسلمانوں کو 4 فیصد تحفظات عطا کیا ۔ مسلم تحفظات کی فراہمی میں سابق وزیر قائد مقننہ تلنگانہ قانون ساز کونسل محمد علی شبیر نے اہم رول ادا کیا ۔ کانگریس کی جانب سے فراہم کئے گئے تحفظات سے تعلیم اور ملازمتوں میں لاکھوں مسلمانوں کو فائدہ پہونچا ہے ۔ ٹی آر ایس مسلمانوں سے کئے گئے وعدے کو پورا کرنے کے معاملے میں سنجیدہ نہیں ہے ۔ بی جے پی سے میچ فکسنگ کرتے ہوئے مسلم تحفظات کو سبوتاج کرنے کی کوشش کررہی ہے ۔ نوٹ بندی کے بعد ٹی آر ایس اور بی جے پی میں خفیہ دوستی ہوگئی ہے ۔ جس کے بعد مسلم تحفظات کے معاملے میں دونوں جماعتیں سیاسی تماشہ کررہی ہیں ۔ ریاست کے مسلمان بی جے پی کے ساتھ ساتھ ٹی آر ایس کو بھی سبق سکھائیں گے ۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT