Monday , March 27 2017
Home / شہر کی خبریں / قانون ساز کونسل کی 3نشستوں پر ٹی آر ایس کی باآسانی کامیابی یقینی

قانون ساز کونسل کی 3نشستوں پر ٹی آر ایس کی باآسانی کامیابی یقینی

میعاد ختم ہونے پر ارکان دوبارہ موقع حاصل کرنے کوشاں۔ چیف منسٹرپر زبردست دباؤ

حیدرآباد ۔ 15 ۔  فروری (سیاست نیوز) تلنگانہ میں قانون ساز کونسل کی 6 نشستیں بہت جلد خالی ہورہی ہیں جن کیلئے پارٹی قائدین میں زبردست سرگرمیاں شروع ہوچکی ہیں۔ اسمبلی میں عددی طاقت کے اعتبار سے برسر اقتدار ٹی آر ایس اسمبلی سے منتخب ہونے والی 3 نشستوں پر بآسانی کامیابی حاصل کرسکتی ہے ۔ اس کے علاوہ گورنر کوٹہ سے 2 اور مجالس مقامی سے 1 نشست پر انتخابات ہوسکتے ہیں کیونکہ مجموعی طور پر 6 ارکان قانون ساز کونسل کی میعاد جون تک ختم ہوجائے گی۔ ٹیچرس زمرہ میں محبوب نگر ، رنگا ریڈی اور حیدرآباد حلقہ کی مخلوعہ نشست کیلئے ٹی آر ایس نے کے جناردھن ریڈی کو دوبارہ امیدوار بنایا ہے ۔ اس نشست کیلئے 29 مارچ کو رائے دہی مقرر ہے ۔ کانگریس پارٹی نے اگرچہ اپنا امیدوار میدان میںنہیں اتارا۔ تاہم اطلاعات کے مطابق وہ ایک آزاد امیدوار کی تائید کرسکتی ہے۔ ٹی آر ایس قائدین کو یقین ہے کہ ٹیچرس زمرہ کی اس نشست پر برسر اقتدار پارٹی کو ضرور کامیابی حاصل ہوگی ۔ اسمبلی زمرہ میں 3 نشستیں خالی ہورہی ہیں اور ایم رنگا ریڈی کانگریس ، وی گنگا دھر گوڑ ٹی آر ایس اور الطاف رضوی (مجلس) کی میعاد ختم ہورہی ہے ۔ اس کے علاوہ گورنر کوٹہ سے نامزد دو ارکان ڈی راجیشور راؤ اور فاروق حسین کی میعاد بھی ختم ہوجائے گی۔ مجالس مقامی کے زمرہ سے گریٹر حیدرآباد میونسپل کارپوریشن سے منتخب سید امین الحسن جعفری کی میعاد بھی جاریہ سال ختم ہورہی ہے ۔ اس طرح 6 نشستوں کیلئے مختلف مراحل میں انتخابات ہوسکتے ہیں۔ اسمبلی اور گورنر کوٹہ کے زمرہ میں جن کی میعاد ختم ہورہی ہے ، ان میں سے کئی قائدین ٹی آر ایس میں شمولیت اختیار کرچکے ہیں اور وہ اس بات کی کوشش کر رہے ہیں کہ انہیں دوبارہ موقع دیا جائے۔ پارٹی ذرائع نے بتایا کہ چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے ابھی تک اس سلسلہ میں کوئی فیصلہ نہیں کیا ہے اور کونسل کی نشستوں کیلئے چیف منسٹر پر زبردست دباؤ ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ پارٹی سے تعلق رکھنے والے سینئر قائدین چیف منسٹر سے مطالبہ کر رہے ہیں کہ سبکدوش ہونے والے ارکان کو دوبارہ موقع دینے کے بجائے نئے قائدین کو کونسل میں موقع دیا جائے ۔ پارٹی کے برسر اقتدار آنے کے بعد سے قائدین نامزد سرکاری عہدوں کے انتظار میں ہے ، ایسے میں چیف منسٹر پر دباؤ بڑھ رہا ہے کہ وہ عہدوں سے محروم قائدین کو کونسل کیلئے منتخب کریں ۔ اطلاعات کے مطابق قانون ساز کونسل کی ایک نشست پر ٹی آر ایس اقلیتی امیدوار کو منتخب کرنے کا منصوبہ رکھتی ہے۔ دوسری طرف حلیف جماعت کے دو ارکان کی میعاد ختم ہورہی ہے ، ان کے بارے میں حکومت سے کیا معاہدہ ہوگا اس کا اندازہ آنے والے دنوں میں ہوسکتا ہے ۔ پارٹی ذرائع نے بتایا کہ قانون ساز کونسل کی رکنیت کے اہم دعویداروں میں این جی اوز کے قائد دیوی پرساد کے علاوہ پارٹی قائدین ڈی سرینواس ، ای سرینواس ، ایم ہنمنت راؤ ، راجیا یادو اور کے سمیا شامل ہیں۔ گریٹر حیدرآباد سے تعلق رکھنے والے کئی قائدین نے بھی کونسل کی نشست کیلئے اپنی کوششوں کا آغاز کردیا ہے ۔ اس طرح کونسل کی 6 مخلوعہ نشستوں کیلئے امیدواروں کا انتخاب چیف منسٹر کے لئے آسان نہیں ہوگا۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT