Wednesday , October 18 2017
Home / Top Stories / قوم و ملت کی ترقی و استحکام کیلئے علم و ہنرسب سے اہم کلید

قوم و ملت کی ترقی و استحکام کیلئے علم و ہنرسب سے اہم کلید

کرہ ارض پر تہذیب و تمدن کو اسلام نے روشناس کروایا ، محبوب نگر میں سراج العلوم ایم ایس کریٹیو اسکول کا افتتاح ، جناب زاہد علی خان کا خطاب

محبوب نگر ۔ 7 مارچ ۔ ( سیاست نیوز) قوموں کی ترقی اور ملت کا استحکام اور اس کے عروج و زوال میں علم و ہنر کو ہمیشہ ایک امتیازی حیثیت حاصل رہی ہے اور تاریخ گواہ ہے کہ جب بھی مسلمان اس میدان میں انحطاط کا شکار ہوا ذلت و رسوائی اس کا مقدر بن گئی جبکہ اسلام نے دنیائے انسانیت پر ایک عظیم احسان کرتے ہوئے علم اور تہذیب و تمدن اور اخلاقی اقدار سے روشناس کروایا اور مسلمان جبتک اس کے حامل تھے پوری دنیا پر انھوں نے اقتدار اور علم کے ذریعہ بہترین حکمرانی کی اور امامت و قیادت ان کا منصب رہا مگر یہ بھی ایک حقیقت ہے کہ یوروپ نے علمی دنیا پر جب قبضہ کیا تو مسلمانوں کے زوال کا آغاز ہوا اور اسپین ہمارے زوال کی سب سے پہلی ابتداء ہے ۔ محبوب نگر میں جامع سراج العلوم ایجوکیشنل ٹرسٹ کے زیراہتمام ایم ایس کریٹیو (کڈس) اسکول کے افتتاح کے بعد مدرسہ سراج العلوم میں منعقدہ ایک عظیم الشان و پراثر تقریب کو مخاطب کرتے ہوئے محترم جناب زاہد علی خان نے ان خیالات کا اظہار کیا ۔ قبل ازیں رکن پارلیمنٹ محبوب نگر مسٹر اے پی جتندر ریڈی اور رکن اسمبلی محبوب نگر مسٹر سرینواس گوڑ نے ربن کاٹ کر اسکول کا افتتاح کیا اور ایک اعلیٰ معیاری اسکول کے آغاز پر خوشی کا اظہار کرتے ہوئے انتظامیہ کو مبارکباد پیش کی ۔ جناب زاہد علی خان ایڈیٹر سیاست جو اس جلسہ میں مہمان خصوصی کی حیثیت سے شریک تھے اپنی تقریر جاری رکھتے ہوئے کہا کہ پولیس ایکشن سے قبل صرف تلنگانہ میں چار ہزار سے زائد سرکاری اسکول تھے مگر آج اس کی تعداد انتہائی کم ہوگئی ہے اور جو باقی ہے وہ بڑی قابل رحم حالت میں ہے ، انھوں نے ایم ایس گروپ کو محبوب نگر میں اسکول کے آغاز پر مبارکباد دیتے ہوئے کہا کہ اس حقیقت سے بھی انکار نہیں کیا جاسکتا کہ مسلمانوں کیلئے کسی بھی میدان اور شعبہ حیات میں دروازے بند نہیں ہے بلکہ ہمیں اپنی بھرپور صلاحیتوں کا مظاہرہ کرتے ہوئے مسابقت کے اس دور میں آگے بڑھنا ہے ، جناب زاہد علی خان نے ادارہ سیاست کی جانب سے کی جانے والی تعلیمی کوششوں کا احاطہ کرتے ہوئے کہا کہ کئی طلباء و طالبات کو سیاست کی جانب سے اسکالرشپس اور تعلیمی امداد کے ذریعہ آئی ٹی اور اعلیٰ تعلیم میں داخلہ کی راہ ہموار کی ۔ انھوں نے کہاکہ لڑکیاں اپنی قابلیت اور صلاحیت اور خوداعتمادی کے ساتھ آگے بڑھنے کا جذبہ لیکر جب ان سے رجوع ہوتی ہیں تو وہ ان کی ہر طرح سے مدد اور رہنمائی کرتے ہوئے ایک طرح کی خوشی محسوس کرتے ہیں مگر افسوس اس بات کا ہوتا ہے کہ لڑکوں کے مقابل میں لڑکیاں آگے آرہی ہیں اور ہمارے لڑکے رات دیر گئے تک باہر چبوتروں پر بیٹھ کر گپ بازی کرتے ہوئے اپنے اوقات کا ضیاع کررہے ہیں ۔ جناب زاہد علی خان نے سرپرستوں اور والدین پر زور دیا کہ وہ اس طرح کے کلچر کو ختم کرتے ہوئے انھیں زیور تعلیم سے آراستہ کرنے کی کوشش کریں تاکہ مستقبل میں ہمارے یہ نوجوان ہمارے لئے عظیم سرمایہ ثابت ہوں ۔ انھوں نے ضعیف اور بزرگ والدین کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ بعض مرتبہ دیگر اقوام کی زیرنگرانی چلائے جارہے اولڈ ایج ہوم کے دورہ پر یہ دیکھ کر افسوس ہوتا ہے کہ وہاں مسلمان بوڑھے جوڑے بھی موجود ہیں ۔ جناب زاہد علی خاں نے سیاست کی ملی خدمات کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ ہم نے سیاست کی جانب سے پرگی ، وقارآباد کے قریب 5 ایکر اراضی حاصل کی تاکہ اس طرح بے سہارا ضعیف بزرگوں کیلئے اپنائیت والے ماحول کے ساتھ تمام تر سہولتوں کی موجودگی میں انھیں سہارا دے سکیں۔ اس کے علاوہ ائمہ کرام اور موذنین اور ان کی اولاد اور معاشی اعتبار سے کمزور بچوں کو اس میں بہترین فنی تربیت کے ذریعہ انھیں باہنر بناتے ہوئے روزگار کے قابل بنانے کا منصوبہ بھی ہمارے عزائم میں شامل ہے ۔ جناب زاہد علی خان نے شادی بیاہ میں فضول خرچی اور اسراف کے خلاف میں عوام میں بیداری پر زور دیتے ہوئے کہا کہ اس طرح کے تعلیمی انقلاب کے ذریعہ سماج و معاشرہ میں سدھار اور اصلاح لائی جاسکتی ہے۔ جناب زاہد علی خان نے سراج العلوم ٹرسٹ اور ایم ایس گروپ کو مبارکباد پیش کرتے ہوئے توقع ظاہر کی کہ محبوب نگر میں اس کا آغاز یہاں کی نئی نسل کی کامیابی اور ان کے روشن مستقبل کا ضامن ہوگا ۔     ( سلسلہ صفحہ 8 پر)

TOPPOPULARRECENT