Sunday , May 28 2017
Home / ہندوستان / لاپتہ نجیب احمد کے تعلق سے حکام بے حس ، سی بی آئی انکوائری کا مطالبہ

لاپتہ نجیب احمد کے تعلق سے حکام بے حس ، سی بی آئی انکوائری کا مطالبہ

ٹی ایم سی رکن راجیہ سبھا ویویک گپتا نے ایوان میں مسئلہ اٹھایا، سیاسی انتقام کے خلاف انتباہ، دیگر مسائل کا بھی تذکرہ
نئی دہلی ۔ 6 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) جواہر لال نہرو یونیورسٹی کے طالب علم نجیب احمد کے لاپتہ ہوجانے کے پیچھے سیاسی انتقام کا الزام عائد کرتے ہوئے راجیہ سبھا کے ٹی ایم سی رکن ویویک گپتا نے آج مرکز سے کہا کہ اس معاملہ کو سی بی آئی یا کسی دیگر مناسب ایجنسی کے ذریعہ تحقیقات کرائی جائے۔ نجیب 15 اکٹوبر کو لاپتہ ہوا جبکہ مبینہ طور پر اس سے ایک رات قبل اے بی وی پی ارکان کے ساتھ کیمپس پر اس کا جھگڑا ہوا تھا۔ ایوان میں وقفہ صفر کے دوران یہ مسئلہ اٹھاتے ہوئے گپتا نے حکومت سے دریافت کیا کہ آیا اس لاپتہ طالب علم کو ڈھونڈنے کیلئے کوئی مخصوص اقدامات کئے گئے ہیں۔ یہ الزام عائد کرتے ہوئے کہ جے این یو حکام نے اس معاملہ میں بے حسی کا مظاہرہ کیا ہے، انہوں نے تعجب ظاہر کیا کہ آیا نجیب کا شمار بھی محض گمشدہ افراد کے متعلق اعدادوشمار میں شامل ہوجائے گا۔ گپتا نے کہا کہ اے بی وی پی اسٹوڈنٹس مبینہ طور پر اس واقعہ میں ملوث ہیں لیکن ابھی تک ان سے پوچھ تاچھ نہیں کی گئی ۔ انہوں نے یہ دعویٰ بھی کیا کہ یونیورسٹی کے وائس چانسلر نے لاپتہ اسٹوڈنٹ کی والدہ سے ملاقات کرنے سے تک انکار کیا ہے۔ ٹی ایم سی رکن نے کہا کہ یہ واضح طور پر سیاسی انتقام کا معاملہ ہے۔ ہم دیکھ رہے ہیں کہ سیاسی انتقام ملک میں کینسر کی مانند پھیلتا جارہا ہے۔ انہوں نے مرکز سے مطالبہ کیا کہ سی بی آئی تحقیقات یا کوئی دیگر مناسب انکوائری کا حکم دیا جائے، جس سے نجیب کا پتہ چل سکے۔ انہوں نے مزید کہا کہ سیاسی انتقامانہ کارروائی سنگین معاملہ ہے اور اس مسئلہ پر حکومت سے بیان دینے کا مطالبہ کیا۔ جوائے ابراہم (کے سی ۔ ایم) نے کیرالا کے فادر ٹام اوزنالل کا مسئلہ اٹھایا جو گذشتہ سال جنگ سے تباہ حال یمن میں ایک دہشت گرد گروپ کی جانب سے اغواء کردہ کیرالا کے پادری ہیں۔ ابراہم نے فادرٹام کی عاجلانہ رہائی کیلئے سارے ایوان کی تائید و حمایت جاری ہے۔ انہوں نے کہا کہ فادر ٹام کی زندگی کو خطرہ معلوم ہوتا ہے۔ ان کی صحت بھی بگڑ رہی ہے۔ اس لئے اس معاملہ میں حکومت کی فوری مداخلت ضروری ہے۔ وزیرکامرس نرملا سیتارامن نے کہا کہ وزیرامور خارجہ سشماسوراج نے قبل ازیں اس مسئلہ پر بات کی تھی اور یہ معاملہ بلاشبہ آگے بڑھایا جارہا ہے۔ چونکہ وہ ہندوستانی شہری ہیں اس لئے ہم تمام کو اس تعلق سے فکر ہے۔ ڈپٹی چیرمین پی جے کورین نے وزیرمملکت برائے پارلیمانی امور مختار عباس نقوی سے کہا کہ ارکان کی تشویش سے وزیرامورخارجہ کو واقف کروائے۔ وقفہ صفر کے دوران اپنے بیان میں ندیم الحق (ٹی ایم سی) نے کئی سابق اسپورٹس پرسنس کی ناقص مالی حالت کا مسئلہ بھی اٹھایا۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT